کشمیر پر گفتگو سے انکار پر مداحوں نے مہوش حیات کو آڑے ہاتھوں لے لیا

سوشل میڈیا صارفین نے مہوش حیات سے تمغہ امتیاز واپس لینے کا مطالبہ کیا۔ فوٹو : فائل

صدارتی ایوارڈ یافتہ مہوش حیات سے ایک تقریب کے دوران ایکسپریس نیوز کے نمائندے نے پوچھا کہ آپ نے یتیم بچوں کی کفالت کی ذمہ داری اُٹھائی ہے تو کیا مقبوضہ کشمیر میں ہزاروں یتیم بچوں کے لیے بھی کچھ سوچا ہے؟ تاہم اداکارہ نے حیران کم طور پر جواب دینے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ ’مجھے مسئلہ کشمیر پر بات کرنے سے منع کیا گیا ہے۔‘

معروف اداکارہ کی کشمیر پر بات کرنے سے انکار کی ویڈیو وائرل ہوئی تو سوشل میڈیا پر صارفین نے انہیں آڑے ہاتھوں لے لیا اور اداکارہ کو جانبدارانہ رویہ رکھنے پر شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اداکارہ سے ستارہ امتیاز واپس لینے کا مطالبہ کیا اور دیکھتے ہی دیکھتے ٹویٹر پر ’’  RevokeMehwishHayatCivilAward#   ‘‘ ٹاپ ٹرینڈ بن گیا۔

دوسری جانب اداکارہ مہوش حیات نے ٹویٹر پر موقف پیش کرتے ہوئے لکھا کہ ویڈیو کو سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کیا گیا ہے، میں پہلے بھی عالمی سطح پر مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرتی آئی ہوں اور آئندہ بھی کرتی رہوں گی جس کے لیے منصوبہ بندی بھی کر رکھی ہے۔

مہوش حیات نے وضاحت پیش کی کہ یہ ایک فلاحی ادارے کی تقریب کی ویڈیو ہے جس کے ضابطہ اخلاق کی پابند تھی اور مجھے کہا گیا تھا کہ تقریب کے دوران سیاسی معاملے پر  اور کوئی بھی غیر متعلقہ گفتگو نہیں کرنی ہے۔ خیال رہے کہ مہوش حیات اس موقع پر پینی اپیل نامی تنظیم کی ایک فلاحی تقریب میں موجود تھیں اور وہ اس تنظیم کی سفیر بھی ہیں۔

Scroll To Top