ٹوئیٹر کالم ۔۔غلام اکبر۔۔۔04-09-2019

کون کہتا ہے کہ جنگ کی جائے؟جنگ ہوئی تو یہ پورا خطہ بکھرے ہوئے انسانی اعضا سے آباد ہو جائے گا سانس لینے والی کوئی چیز نہیں بچے گی مگرجنگ کو روکنے کا واحد طریقہ یہ ہے کہ مذاکرات کا لفظ حرام قرار دے دیا جائے اور مودی کو الٹی میٹم دیا جائے کہ تباہی سے بچنا ہے تو کشمیر سے فوج نکال لے۔۔۔
02ستمبر2019

جب میں مذاکرات کا ذکر سنتا ہوں تو اپنے لیڈروں کی خود فریبی پر ہوش کھو بیٹھتا ہوں۔۔۔
02ستمبر2019

خلیفہ ءبغداد امن کا داعی تھا۔جنگ اسے کسی بھی صورت میں قبول نہیں تھی۔مگر منگول امن کے لئے تیار نہیں تھے۔۱۲۵۸ میں ہلاکو خان کے لشکر نے بغداد کےامن پسندوں کا اتنا خون بہایا کہ دریائے دجلہ کا رنگ کئی روز تک سرخ رہا۔ پاکستان کے امن پسند حکمرانو بھارت پاکستان پر حملہ آور ہو چکا ہے!
02ستمبر2019

جو قومیں جنگ کے لئے تیار نہیں ہوتیں انہیں امن کبھی نصیب نہیں ہوتا (ابن تیمیہ)۔۔۔
02ستمبر2019

عمران خان درست کہتے ہیں کہ جنگ مسائل کا حل نہیں۔تاریخ بھی درست کہتی ہے کہ آنحضرت صلی اللہ وعلیہ و آلہ وصلعم کی زندگی کا بڑا حصہ میدان ِجنگ میں گزرا۔۔۔
02ستمبر2019

آج شاہد مسعود بڑی اچھی باتیں کر رہے ہیں۔آج وہ باتیں دل سے کر رہے ہیں۔پاکستان کے سامنے کامرانی کے سوا کوئی آپشن نہیں انشا اللہ۔۔۔
02ستمبر2019

Scroll To Top