اب بھی وقت ہے، دنیا مودی کو تیسری عالمی جنگ سے روکے

  • لوح ضمیر عالم پر جناب عمران خان کا ایک اور گہرا اور انمٹ نقش امن
    بھارت ہٹلر کی پیروی میں نسل پرستی اور ریاستی دہشتگردی کی راہ پر
  • ایک عالمی مدبر نے دنیا کو جنگ کا ایندھن نہ بننے کا پلان دے دیا
    دو جوہری طاقتوں کی کشیدگی صرف خطے تک محدود نہیں رہے گی
  • اہل کشمیر سے یکجہتی کا فقید المثال قومی مظاہرہ
    پوری پاکستانی قوم اپنی بہادر افواج کے شانہ بشانہ کھڑی ہے

لوح ضمیر عالم پر ایک اور گہرا اور انمٹ نقش!
ایک سیاستدان نہیں ایک سٹیٹسمین، ایک مدبر، ایک مستقبل شناس رہنما کی بصیرت اور وژن سے کشید کردہ تنبیہ!
جناب عمران خان، ایک بطل جلیل اور رجل رشید کا نعرہ حق اور جذبہ جانفزا
ضمیر عالم کے پاس اب بھی وقت ہے کہ خواب خرگوش سے جاگے، اور کرہ ارض کو تیسری عالمی جنگ کا ایندھن بننے سے بچائے
جناب عمران خان نے آج جمعہ کو آزادی کشمیر اور اہل کشمیر پر بھارتی جبرو قہر کے خلاف جو نیا امن آفینسو (Peace Offensive) لانچ کیا ہے وہ ہر گز ہرگز دھمکی نہیں ، تنبیہ ہے، وارننگ ہے، اگر دنیا چاہتی ہے کہ کرہ ارض کو کسی تیسری عالمی جنگ سے محفوظ رکھا جائے تو بلا تاخیر آگے بڑھے، بھارت کی نسل پرست، دہشت گرد اور جلاد حکومت کو لگام دے اور نریندر مودی جیسے قضائی کے مظالم کے خلاف آواز بلند کرے ، ایک مہینے سے جاری اہل کشمیر کے سنگین محاصرے کو ختم کرانے میں اپنا کردار ادا کرے۔ پاکستان اس وقت تک اہل کشمیر کی صرف اخلاقی، سیاسی اور سفارتی امداد کر ر ہا ہے مگر بھارت کے پلوامہ ٹائپ ماضی کے کردار کی روشنی میں اطلاعات ہیں کہ وہ کشمیر پر کوئی جارحیت مسلط کر سکتا ہے۔ اگر ایسا ہوا تو پھر بھارت سمیت پوری دنیا کو جان لینا چاہئے کہ پاکستان کی بہادر افواج بھی ہر طرح کی جارحیت اور شیطنت کا منہ توڑ جواب دینے کے لئے پوری طرح چوکس ، چاق و چوبند اور تیار کھڑی ہیں۔ اور اینٹ کا جواب پتھر سے دینے کا نہ صرف عزم و حوصلہ رکھتی ہیں بلکہ حربی صلاحیت سے بھی مالا مال ہیں۔ نریندر مودی اور بھارتی جنتا کو اس ضمن میں 27 فروری کو یاد رکھنا چاہئے جب بھارتی در اندازی کرنے والے لڑاکا طیاروں کو ہمارے شاہینوں نے بھون کے رکھ دیا تھا۔ وزیر اعظم بارہا باور کراچکے ہیں اور افواج پاکستان کے ترجمان ادارے بھی واضح کرچکے ہیں کہ پاکستان ایک امن پسند ملک ہے لیکن اگر اسے جارحیت کا نشانہ بنایا گیا تو پھر بھارت ہی نہیں پوری دنیا افواج پاکستان کی شاندار حربی صلاحیتوں کے مظاہرے پر حیران رہ جائے گی۔
پاکستان اس مہینے کے شروع سے ہی کشمیر پر بھارتی مظالم اور بھارت سرکار کی طرف سے آئین کی آڑ میں کشمیر کے خلاف غیرآئینی اقدامات کے خلاف اخلاقی، سیاسی اور سفارتی ہر سطح پر اہل کشمیر کے حق میں اور بھارتی چیرہ دستیوں کے خلاف سرگرم عمل ہے۔ پاکستانی حکومت عمران خان کی سربراہی میں علاقائی اور عالمی سطح پر ہر اس فورم پر دست دے رہی ہے جہاں جہاں سے پرامن پیرائے میں بھارتی جارحیت کا سدباب ممکن ہو سکتا ہے۔
تاہم اس وقت تک صورتحال یہ ہے کہ ظاہری سطح پر پاکستان کے موقف کی تائید کرنے کے باوصف ضمیر عالم کی طرف سے اہل کشمیر پر بھارتی مظالم کے سدباب کے لئے کوئی موثر اور فوری اقدام نہیں اٹھایا گیا۔ جناب عمران خان کی اپیل پر آج ملک بھرمیں اہل کشمیر کے ساتھ یکجہتی کے جو اجتماعات ہوئے ان میں سے ایک مرکزی اجتماع میں تقریر کرتے ہوئے وزیر اعظم پاکستان نے ضمیر عالم کو ایک بار پھر جھنجھوڑا ہے اور یاد کرایا ہے کہ کس طرح پچھلی صدی کے وسط میں عالمی رائے عامہ نے تساہل سے کام لیا اور اس طرح ہٹلر کے مظالم اسقدر بڑھتے چلے گئے کہ دنیا دوسری عالمی جنگ کا ایندھن بن کررہ گئی اور 5سے 6کروڑ انسان اس جنگ میں بھسم ہو کررہ گئے۔
جناب عمران خان نے واضح کیا کہ بھارت کی نسل پرست فاشسٹ حکومت ایک بار پھر ہٹلر کے نقش قدم پر چلتے ہوئے برصغیر کو جنگ کی آگ میں دھکینا چاہتا ہے۔ مگر یاد رہے اس وقت پاکستان اور بھارت دوناوں ہی جوہری صلاحیت سے لیس ہیں اس لئے اگر بھارتی دہشتگردی کے نتیجے میں برصغیر کے دو جوہری ممالک میں جنگ چھڑی تو یہ محض ایک خطے تک محدود نہیں رہے گی بلکہ اس کے اثرات سارے کرہ ارض کو اپنی لپیٹ میں لے لیں گے۔
سو اب یہ ضمیر عالم پر منحصر ہے کہ وہ خواب خرگوشی سے جاگے اور مقبوضہ کشمیر میں بھارتی دہشت گردی کو لگام دینے کے لئے پاکستانی موقف کا بھرپور ساتھ دے۔

Scroll To Top