مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی فوج نے سیکڑوں کشمیریوں کو گرفتار کرلیا

کشمیریوں کےاحتجاج کو کچلنے اور شدید ردعمل کے خوف سے قابض فوج کی وادی میں کارروائیاں جاری ہیں

مودی سرکار کی جانب سے  آرٹیکل 370 اے ختم کرنے کے بعد سے مقبوضہ کشمیر میں  قابض بھارتی فوج نے  کشمیریوں پر عرصہ حیات تنگ کر دیا ہے، مسلسل چوتھے روز کرفیو کی وجہ سے غذائی  قلت کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے جب کہ انٹرنیٹ اور موبائل سروس بند ہے، وادی بھر میں نظام ِزندگی مفلوج  ہے اور کشمیریوں کے احتجاج کو زبردستی روکنے کے لیے پوری ریاستی مشینری کو استعمال کیا جارہا ہے۔

مقبوضہ کشمیر عملاً فوجی چھاؤنی میں تبدیل ہوچکا ہے،  مقوضہ وادی کی آئینی حیثیت تبدیل کرنے پر کشمیریوں کےاحتجاج کو کچلنے اور شدید ردعمل کے خوف سے  قابض فوج نے 500 سے زائد سیاسی رہنماؤں و کارکنوں کو گرفتار کرلیا ہے، سری نگر، بارہ مولا اور دیگر علاقوں میں پولیس اسٹیشنز اور جیل سیاسی کارکنوں سے بھر گئے ہیں۔

ادھر سری نگر کے علاقے سورا میں لوگ کرفیو توڑتے ہوئے گھروں سے باہر نکل آئے اور احتجاج شروع کردیا، قابض فوج نے مظاہرین پر ریاستی طاقت کا بے دریغ استعمال کرتے ہوئے براہ راست گولیاں برسائیں اور آنسو گیس کی شیلنگ کی، جس کے نتیجے میں متعدد افراد کے زخمی ہونے کی بھی اطلاع ہے۔

Scroll To Top