کلبھوشن یادیو کیس فیصلے کے بعد ”را “کے جاسوسوں نے بغاوت شروع کر دی

  • دنیا کے کئی ممالک میں جاسوسی کرنے والے بھارتی خفیہ ایجنسی را کے جاسوس خوف اور مایوسی کا شکار، اچانک غائب ہونا شروع ہوگئے
  • را کے جاسوس کو خوف ہے کہ اگر انہیں دبوچ لیا گیا، تو اس صورت میں ان کی حکومت ان کی کوئی مدد نہیں کر سکے گی

لاہور (الاخبار نیوز) کلبھوشن یادیو کیس کے فیصلے کے بعد را کے جاسوسوں نے بغاوت شروع کردی، دنیا کے کئی ممالک میں جاسوسی کرنے والے بھارتی خفیہ ایجنسی را کے جاسوس خوف اور مایوسی کا شکار، اچانک غائب ہونا شروع ہوگئے۔ تفصیلات کے مطابق کلبھوشن یادیو کیس میں عالمی عدالت میں بھارت کی شکست کے بعد بھارتی خفیہ ایجنسی را کو بڑے پیمانے پر بغاوت کا سامنا کرنا پڑ گیا ہے۔ایک انگریزی اخبار کی رپورٹ کے مطابق کلبھوشن یادیو کو رہا کروانے میں بھارت کی ناکامی کے بعد دنیا کے کئی ممالک میں جاسوس کا کام انجام دینے والے را کے جاسوس شدید خوف میں مبتلا ہو گئے ہیں۔ را کے جاسوس کو خوف ہے کہ اگر انہیں دبوچ لیا گیا، تو اس صورت میں ان کی حکومت ان کی کوئی مدد نہیں کر سکے گی۔اسی باعث را کے جاسوس خوف و مایوسی کا شکار ہو کر غائب ہونے لگے ہیں۔اس صورتحال نے بھارتی خفیہ ایجنسی را میں اندرونی طور پر ہنگامی صورتحال پیدا کر دی ہے۔ واضح رہے کہ پاکستان نے کلبھوشن یادیو کیس میں بھارت کو عالمی عدالت میں شکست دی۔ عالمی عدالت نے فیصلہ سنایا کہ کلبھوشن یادیو بھارتی دہشت گرد ہے، اور اس کا حسین مبارک پٹیل کے نام سے موجود پاسپورٹ بھی اصلی ہے۔عالمی عدالت نے بھارت کی جانب سے کلبھوشن یادیو کی رہائی کی درخواست مسترد کر دی ہے، تاہم ویانا کنوینشن کے تحت بھارت کو کلبھوشن یادیو تک قونصلر رسائی کی اجازت بھی دے دی ہے۔ ویانا کنوینشن بھی جاسوسی کرنے والے مجرموں کو قونصلر رسائی کے حق سے محروم نہیں کرتا، اس لیے کلبھوشن یادیو کو قونصلر رسائی کا حق فراہم کیا جائے۔ عالمی عدالت انصاف کے جج عبدالقوی احمد یوسف نے بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کے کیس کا فیصلہ پڑھ کر سنایا۔

Scroll To Top