نیب اِن ایکشن: شہباز شریف کی غیر منقولہ جائیدادیں اور گاڑیاں منجمد کرنے کا فیصلہ

  • نیب کی شہباز شریف کی 32 منقولہ اور غیر منقولہ جائیدادیں منجمد کرنے کی ہدایت، 3جائیدادوں کو منجمد کرنے کے لئے ڈپٹی کمشنر ہری پور، ماڈل ٹاﺅن لاہورکے 2 پلاٹس منجمد کرنے کےلئے سیکریٹری سوسائٹی اور ڈی ایچ اے لاہور میں واقع 2 گھر وں کی ضبطگی کیلئے مراسلے جاری
  • ایس ای سی پی کو شہباز شریف کی کمپنیاں منجمد کرنے کی بھی ہدایت ، نواز شریف کے 9 پلاٹس منجمد کرنے کے لیے ڈی جی ایل ڈی اے کو بھی خط ،یاد رہے کہ ن لیگی رہنماﺅں کی مشکلات میں ہرگزرتے دن کیساتھ اضافہ ہوتا جا رہا ہے

لاہور ( الاخبار نیوز) نیب نے سابق وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی جائیدادیں منجمد کرنے کا خط جاری کر دیا ہے۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ نیب نے شہباز شریف کی 32 منقولہ اور غیر منقولہ جائیدادیں منجمد کرنے کی ہدایت کی ہے۔ نیب نے شہباز شریف کی 3 جائیدادیں منجمد کرنے کے لیے ڈی سی ہری پور کو ہدایت کی ہے۔نیب نے ڈی جی ایکسائز پنجاب کو شہباز شریف کی 2 گاڑیاں منجمد کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔نیب نے شہباز شریف کے دو پلاٹس منجمد کرنے کے لیے سیکرٹری ماڈل ٹاو¿ن سوسائٹی کو بھی خط لکھا ہے۔اس کے علاوہ نواز شریف کے 9 پلاٹس منجمد کرنے کے لیے ڈی جی ایل ڈی اے کو بھی خط لکھا ہے۔اس کے علاوہ ڈی ایچ اے لاہور کو بھی شہباز شریف کے دو پلاٹس منجمد کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔نیب نے ایس ای سی پی کو شہباز شریف کی کمپنیاں منجمد کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔واضح رہے نیب نے مسلم لیگ ن کے صدر اور اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہباز شریف کے اثاثے منجمد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔نیب نے شہباز شریف کے 96 ایچ ماڈل ٹاو¿ن لاہور، ڈنگہ گلی میں بنگلہ اور خیبرپختونخواہ میں رہائشی گھر کے خلاف خط لکھا۔ ذرائع نے بتایا کہ شہباز شریف کی قیمتی گاڑیوں کے خلاف بھی ضابطے کی کارروائی کے لیے خط تحریر کیا گیا۔ نیب ذرائع کے مطابق یہ تمام اثاثے شہباز شریف نے ٹی ٹی آمدنی سے خریدے گئے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ نیب لاہور پہلے مرحلے میں ناجائز اثاثے منجمد کرے گا۔جس کے بعد ب نیب نے شہباز شریف سمیت ا±ن کے اہل خانہ کے اثاثے بھی منجمد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ سلمان شہباز، حمزہ شہباز اور ان کی اہلیہ کے اثاثے بھی منجمد کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔نصرت شہباز کے 22 کروڑ 56لاکھ 35 ہزار کے اثاثے منجمد کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔۔حمزہ شہباز کے 41 کروڑ 11 لاکھ کے اثاثے منجمد کیے جانے کا فیصلہ کیا گیا۔

Scroll To Top