عثمان بزدار کی زےرصدارت کابےنہ اجلاس ،34نکاتی اےجنڈے کی منظوری

  • لوکل گورنمنٹ اےکٹ اور واٹر اےکٹ ،309رمضان بازار اور2ہزار دسترخوان لگانے کی منظوری،حالےہ بارشوں سے ہونےوالے نقصان کے ازالے کےلئے سروے کا حکم
  • پاپولےشن وےلفےئر پروگرام کے لئے فناسنگ ،ڈےنگی کے تدارک کےلئے ٹمپرےری رےگولےشنز اوراےنمل ہےلتھ بل کی منظوری،متعلقہ حکام گندم خرےداری مراکز کے دورے کرےںگے

لاہور (آن لائن) وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی زیر صدارت وزیراعلیٰ آفس میں صوبائی کابینہ کا اجلاس ہوا۔اجلاس میںپنجاب لوکل گورنمنٹ اےک2019ءکی منظوری دی گئی اورواٹراےکٹ 2019ءکے مسودے کی بھی منظوری دی گئی جس کے تحت واٹر رےسورسز کمےشن قائم کےا جائے گا جس کے چےئرمےن وزےراعلیٰ ہوںگے۔واٹر رےسورسز کمےشن پانی کے حصول کےلئے لائسنس کی پابندی پر عملدرآمد ےقےنی بنائے گا۔وزےراعلیٰ نے صوبائی کابےنہ کے اجلاس مےں حالےہ بارشوں مےں ہونے والے نقصانات کے ازالے کےلئے سروے کا حکم دےا اوراسی سروے رپورٹ کی روشنی مےں مالی امداد کا فےصلہ کےا جائے گا۔ پنجاب وٹنس پروٹیکشن ایکٹ2018 کی منظوری دی گئی۔ایکٹ کے تحت وٹنس پروٹیکشن بورڈ تشکیل دیا جائے گا۔پنجاب تھرمل پاور پرائیویٹ لمیٹڈ کے لئے گورنمنٹ گارنٹی اور ڈیٹ اتھارٹی کی مد میں10ارب روپے کے فنڈز کے اجراءکی منظوری دی۔پنجاب الیکٹرانک سٹامپ پیپرز رولز 2016میں ترمیم کی منظوری دی۔پنجاب حکومت کے اکاﺅنٹس کے بارے میںآڈیٹر جنرل آف پاکستان کی سپیشل آڈٹ رپورٹس2016-17 کو کابینہ میں پیش کیا گیا۔پنجاب کابینہ کی منظوری کے بعد رپورٹس کو پنجاب اسمبلی میں پیش کیا جائے گا۔ڈیرہ غازی خان کے قبائلی علاقے کو تحصیل کوہ سلیمان کا درجہ دینے کی منظوری دی گئی۔غازی میڈیکل کالج ڈیرہ غازی خان میں راجن پور اور ڈیرہ غازی خان کے قبائلی علاقوں کے طلبہ کے لئے 5نشستیںمخصوص کرنے کااورساﺅتھ پنجاب فاریسٹ کمپنی کو بند کرنے کا فیصلہ کےا گےا۔پنجاب سیلز ٹیکس آن سروسز ایکٹ2012 کے تحت ریڈویسڈ ریٹس سکیم کی اورپارکس اینڈ ہارٹیکلچر اتھارٹی فیصل آبادکےلئے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے اراکین کی تقرری کی منظوری دی گئی۔پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے ذریعے پا پولیشن ویلفیئر پروگرام پنجاب 2017-20کے لئے فنانسنگ کی منظوری دی گئی،شعبہ صحت اور شعبہ پاپولیشن ویلفیئر کے ڈیوالڈ ورٹیکل پروگرامزکے لئے فنڈز کی منظوری دی گئی،ڈینگی کے فوری تدارک کےلئے ریگولیٹری اقدامات کے تحت ٹمپریری ریگولیشنز 2019 کی منظوری دی گئی،پنجاب اینیمل ہیلتھ بل2019 ءکی منظوری دی گئی، گرانٹ کی شرح میں اضافے اور ماہانہ گرانٹ کی اہلیت کے معیار کے از سر نو تعین کیلئے بناویلنٹ فنڈ رولز میں ترامیم کی منظوری دی گئی،720میگا واٹ کے کیروٹ پاور پراجیکٹ کیلئے اراضی کی منتقلی کی منظوری دی گئی،ایل پی جی کی مارکیٹ ویلیو کے مطابق لیکویڈ پٹرولیم گیس کی رائلٹی کے امور کی منظوری دی گئی،ضلع منڈی بہاﺅ الدین کے علاقے رسول میںپنجاپ یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی کے قیام کی منظوری بھی دی گئی،پنجاب سیلز ٹیکس کے سروسز ایکٹ 2012 کے سیکنڈ شیڈول میں ترمیم میں ترمیم کی منظوری دی گئی،اجلاس میں واٹر ایکٹ 2019 کے مسودے کی منظوری دی گئی۔ایکٹ کے تحت واٹر ریسورسز کمیشن بنے گا جس کے وزیراعلیٰ چیئرمین ہوں گے۔بغیر لائسنس پانی نکالنے پر پابندی ہوگی۔پنجاب کابینہ نے پنجاب لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2019 کی منظوری دے دی۔پنجاب کابینہ نے پنجاب میڈیکل ٹیچنگ انسٹی ٹیوشنز ریفارمز ایکٹ 2019 کی بھی منظوری دی گئی،پنجاب کابینہ کے اجلاس میں رمضان پیکیج 2019 کی منظوری دی گئی۔پیکیج کے تحت صوبہ بھر میں 309 رمضان بازار لگائے جائیں گے۔رمضان المبارک میں 2 ہزار کے قریب دسترخوان کا اہتمام کیا جائے گا۔وزےراعلیٰ نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ماضی کے مقابلے میں عام آدمی کو ریلیف دینے کیلئے زیادہ سے زیادہ سبسڈی دیں گے۔ رمضان المبارک میں ریلیف کیلئے پوری ٹیم متحرک کردار ادا کرے گی۔ اشیائے ضروریہ مارکیٹ کے مقابلے میں رمضان بازاروں میں سستے داموں دستیاب ہوں گی۔اجلاس میں بینک آف پنجاب کے نئے صدر کی تقرری کی بھی منظوری دی گئی۔محکمہ آبپاشی کے انجینئرنگ سٹاف کی تنخواہوں میں اضافے کی اصولی منظوری بھی دی گئی۔تنخواہوں میں اضافے کے کیس کو کابینہ کمیٹی برائے فنانس میں پیش کیا جائے گا۔انہوںنے کہا کہ صوبائی وزرائ، مشیران اور معاونین خصو صی تعلیم، صحت اور دیگر اداروں کے دورے کریں۔ عوام کی سہولت کیلئے صحت اور تعلیم کے اداروں کو خوب سے خوب تر بنانا ہے۔ گندم خریداری مہم کیلئے بھی وزراءاور دیگر نمائندے گندم خریداری مراکز کے دورے کریں۔انہوںنے کہا کہ عوام کی خدمت کو اپنا شعار بنائیں۔آئندہ کابینہ کا اجلاس 15 روز بعد ہوگا۔ اجلاس میں 34 نکاتی ایجنڈے کی منظوری دی گئی۔اجلاس میں صوبائی کابینہ کے 7 ویں اجلاس کے منٹس کے فیصلوں کی توثیق کی گئی۔ صوبائی کابینہ کمیٹی برائے فنانس کے چوتھے ، پانچویں اور 6ویں اجلاس کے فیصلوں کی توثیق بھی کی گئی۔صوبائی وزرائ، مشیران، معاونین خصوصی، چیف سیکرٹری، آئی جی ، صوبائی سیکرٹریز بھی اجلاس میں شرےک تھے۔

Scroll To Top