بہاﺅ کی مخالف سمت کا سفر اےک رجل رشےد اور بطل جلےل ہی اےسا چےلنج قبول کر سکتا ہے

  • ’معاشرے پر مسلط طبقہ بد معاشیہ اپنے مالی اور سماجی وسائل اور بالادستی کے ساتھ اقتدار واختےار کے اےوانوں پر اپنا قبضہ اور اجارہ قائم کرلےتا ہے اور پھر آئےن و قانون، انسانی حقوق اور جمہورےت کے نام پر سادہ لوح عوام کی آنکھوں مےں دھول جھونک کر ان کے خون پےسنے کی کمائی پر ٹھگی کا مرتکب ہو کر اپنی اوجڑےوں اور تجورےوں کو بھرتارہتا ہے۔‘

اےک مکروہ نظام کی کوکھ سے خےر وبرکت سے آراستہ مطہر نتائج کےونکہ حاصل کئے جاسکتے ہےں کتاب مےں ہے کہ تم پورے کے پورے دےن مےں شامل ہو جاﺅ ےہ آدھا تےتر آدھا بےٹر والا ناٹک تا بہ کہ ۔
اکہتر سالہ کچا چٹھا سب کے سامنے ہے ، اےک تلخا بے کی طر ح اےک تےزابی دھارے کی مانند ےہاں وہاں تہاں معاشرے کے سارے موجود ہےں کہ زخموں سے چھلنی چھلنی کر رکھا ہے۔ ان حالات مےں اول تو کوئی ترڈ لا مسےحا مرےض کے علاج بابت سوچتا تک نہےں مگر ےہ تو اےک بھی دار عمران خان ہی ہے کہ جس نے بہاﺅ کی مخالف سمت تےراکی کی ٹھان لی۔اب مقصد ےہ ہے کہ پاکستان کی قومی معشےت کا رواں دواں قرضوں مےں جھکڑا ہوا ہے۔ درآمدات و برآمدات کا توازن بری طرح بگڑ چکا ہے۔ روپے اور ڈالر مےں مارا دی جاری ہے۔ جس مےں عمومی طور پر روپےہ ہی پسپا ہوتا جارہا ہے۔
اور سب سے بڑا المےہ ےہ ہے کہ ملک وقوم کو بدحالی اور مفلسی و بے کسی کی اس گراوٹ مےں دھکےلنے والے قومی مجرم گندے اور ازکار رفتہ قانونی ڈھانچے مےں پہلے سے رکھے گئے۔
طبقہ بد معاشر کے مفادات کی حفاظت کرنے والے قانونی ستم اسقام کو اپنے لئے طور ڈھال استعمال کرتے ہےں ۔اور چونکہ مجرمےن وظالمےن کا ےہی ٹولہ اور طبقہ بد معاشر کا ےہی گروہ اقتدار واختےار کے اداروں پر قابض چلا آرہا ہے اس لئے ان استصام اور نقائص کو کبھی ختم کرنے کی کوشش نہےں کی گئی گوکہ مقتدر طبقہ اپنے اندرونی تضادات کے باعث باہمد گو سر پھٹول بھی کرتا رہتا ہے مگر ےہ دوستانہ جنگ وجدل محض عوام کی آنکھوں مےں دھول جھونکنے اور بطور اپوزےشن اپنی کاروباری ساکھ کوبرقرار رکھنے کی حد تک ہوتی ہے وگرنہ اندر سے ےہ طبقہ اےک ہی پےج پر ہوتا ہے اس کا ثبوت حالےہ اےام مےں ہونے کے بظاہر مختلف الخےال سےاسی گروہ با ہو گرشےر وشکر ہونے کے مراحل طے کر رہے ہےں۔ کل تک جو شوباز نا شرےف زرداری کا پےٹ چےڑ کر حرام کی دولت نکالنے مےں اس کی آمد پر اس کی چاپلوسی سے لتھڑی ہوئی پےش وائی کرتا ہے ۔ ےہاں تک کہ پچھلے روز لندن جانے سے پہلے قومی اسمبلی مےں بطور اپوزےشن لےڈر اپنا چےمبر بلاول بھٹو کے حوالے کر گےا ہے۔ اور تو اور ڈےزل کی ”ال“ رکھنے والے وچولے سےاسی بروکر کی انےاں جانےاں بھی دےدنی ہےں جمہورےت بچاﺅ اور مہنگائی کے پٹ سےاپے کی آر مےں ےہ سارا گٹھ جوڑ در حقےقت لوٹے کھسوٹے کی اپنی اپنی دولت بچانے اور احتسابی شکنجے سے بچ رہنے کا حربہ ہے تاکہ سادہ لوح لوگوں کو مہنگائی کے نام پر ورغلا کر انہےں سڑکوں پر لاےا جائے اور اس طرح حکومت کو دباﺅ مےں لا کراپنے الو سےدھا کےا جائے پر ےہ تو اب پی ٹی آئی کا کام ہے ےا پھر حکومت کے ابلاغی شعبوں کا فرض ہے کہ وہ سادہ لوح عوام کو موجودہ گھمبےر مسائل اور بطور خاص مہنگائی بابت بتائےں کہ ےہ سب کچھ ماضی کے انہی حکمرانوں اور ان کے اتحادی گماشتوں کا کےا دھر ا ہے ےہ انہی کی معاشی ٹھگےاں ہےں جن کی وجہ سے قومی خزانہ بری طرح مقروض ہو چکا ہے اور پچھلے سال کے اواخر تک ملک دےوالےہ پن کی آخری حد تک پہنچ چکا تھا۔ اور اب اگر حکومت کو معاشی شعبے مےں خودانحصاری کا ہدف حاصل کرنے کے لئے بعض سخت اقدامات لےنے پڑ رہے ہےں تو اس مےں اس کا اپنا کوئی مقصد نہےں بلکہ ےہ نوں غنوں اور جےالوں کی اپنی اپنی حکمرائی دوران کی گئی مجرمانہ معاشی واردٹوں کانتےجہ ہے۔ پچھلے روز راولپنڈی کے اےک بدنام زمانہ منشےات فروش اور نون لےگ کا کارندہ حنےف عباسی عرف حنےف پاﺅڈری جسے منشےات فروشی کے جرم مےں عمر قےد کی سزا سنا دی گئی تھی ضمانت پر رہا کر دےا گےا ا س سے پہلے شوباز نا شرےف اس کابےٹا حمزہ، نواز نا شرےف بےٹی مرےم سزائےں ہونے کے باوجود مختلف حےلوں بہانوں کے تحت ضمانتوں پر رہا ہےں ۔ نواز کے دونوں بےٹے حسن اور حسےن پہلے سے مفرور اور اشتہاری مجرم قرار دئے جا چکے ہےں ۔ جبکہ شوباز نا شرےف کا اےک بےٹا سلمان اور داماد علی بھی پہلے سے مفرور ہےں۔ نواز کا سمدھی سابق وزےرخزانہ اسحق ڈار بھی پہلے سے مفرور اور اشتہاری مجرم ہے اور ستم بالائے ستم کے ا س شخص کو ملک کا وزےرخزانہ ہوتے ہوئے اس وقت کے نونی وزےر اعظم شاہد خاقان عباسی نے اپنے سرکاری جہاز مےں ملک سے فرار کرواےا تھا۔ ستم بالائے ستم تو ےہ ہے کہ ملک کے موجودہ قانونی نظام مےں موجود عدل کے حوالے سے موجود اسقام مگر طبقہ بدمعاشےہ کے حوالے سے سود مند گنجائشوں ، کے تحت جب ےہ امےر کھبےر مجرمےں موجود ضمانتوں پر رہا ہو کر باہر نکلتے ہےں تو اس عارضی رےلےف کو اپنی بے گناہی کے طور پر پےش کےا جاتا ہے تاکہ سادہ لوح ووٹروں کو خرےد بےوقوف بناےا جاسکے۔ کاش پی ٹی آئی والے اپنی روٹےن کی فضول بسےار گوئی کی بجائے ان اہم امور اور اپوزےشن کے ناقص پروپےگنڈے کا کوئی سکت جواب دےا کرےں ۔ حرف آخر ، مےں آج سے کئی ہفتے پہلے اپنے کالموں مےں ےہ خبر دے چکاہوں کہ نواز نا شرےف لوٹ کھسوٹ کے مالی سے(ساڑھے چھ ارب 6.5ارب ڈالر کی رقم واپس کرنے کو تےا رہوچکا ہے مگر اس کے مفرور اور اشتہاری مجرم بےٹے حسن اور حسےن اس پر آمادہ نہےں ہور ہے ہےں ۔ شوبا ز نا شرےف خصوصی انتظامات کے تحت اپنی ناحلف بھےتجوں کو سمجھانے بجھانے لندن گےا ہے آج رات تک کوئی اہم برےک تھرو کی خبر ملنے والی ہے جسے مےں آپ کے فرمہ شےئر کرونگا۔

Scroll To Top