چین کا موثر صنعتی انتظامات کیلئے ای۔سپورٹس کمیشن قائم کرنے کا فیصلہ

(خصوصی رپورٹ):۔ چین کی انٹر نیٹ سوسائیٹی کی جانب سے رواں ماہ مارچ میں ٹشنگوا یونیورسٹی میں ہونیوالے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ ملک میں صنعتی مینجمنٹ کو موثر اور فعال انداز میں متحرک کرنے کیلئے ای۔سپورٹس کمیشن قائم کیا جائے، اس حوالے سے ای۔سپورٹس کمیشن کے ممکنہ اہداف اور مقاصد واضح کرنے کے حوالے سے تمام متعلقہ شعبوں اور اداروں کی جانب سے ای۔سپورٹس سیمینار کا باقاعدہ انعقاد کیا گیا بعنوان: ای ۔سپورٹس اینڈ سمارٹ کمیونٹی۔اس حوالے سے سے نیا قائم کیا گیا ای۔سپورٹس کمیشن متعلقہ مجاز اتھارٹیز اور اداروں کو ای۔سپورٹس انڈسٹری کو موثر اور فعال بنانے کے حوالے سے انتظامی شعبوں میں رہنمائی مہییا کریں گے۔ اس حوالے سے ای۔سپورٹس اورقومی تعلیمی اسٹریٹیجیز کے اشتراک کے حوالے سے عوامل کو اجاگر کریگا، اور خصوصی طور پر یہ کمیشن چین میں ای۔سپورٹس کے حوالے سے پائیدار ڈیویلپمینٹ اور موثر پالیسز کے حوالے سے رہنمائی فراہم کریگا، اور مستقبل میں سمارٹ سٹی تعمیرات کے حوالے سے لائحہ عمل اور پلاننگ مرتب کرنے کے حوالے سے عوامل کو واضح کریگا، اس کیساتھ ساتھ یہ کمیشن مستقبل میں صنعتی وسائل کے انضمام، ای۔سپورٹس کی ممکنہ سرگرمیوں کے حوالے سے متعلقہ انٹر پرائسز اور ادارو ں کو ایک پلیٹ فارم پر آرگنائز کرنے اور صنعتی ڈیٹا اور سرویز کے حوالے سے معلومات کو شائع کرنے کے حوالے سے تمام منجملہ عوامل کو دیکھے گا۔ اس کیساتھ ساتھ اس کمیشن کو مقامی اور بین الاقوامی سطع پر صنعتی تعاون کے حوالے سے مواصلات کو یقینی بنانے، گلوبل ای۔سپورٹس پالیسی سازی کے حوالے سے معاملات کو دیکھنے، اور متعلقہ بین الاقوامی معیارات اور ممکنہ وضاحتوں کے حوالے سے تمام معاملات کو دیکھنے کا بھی ٹاسک سونپا گیا ہے۔ اس حوالے سے چین کی انٹر نیٹ سوسائیٹی کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل سونگ ماﺅین نے کہا ہے کہ ای۔ سپورٹس کا شعبہ چین میں وسیع اور بڑے پیمانے پر موثر اقتصادی عوامل کو موثر بنا رہے ہیں اس ضمن میں ای۔ سپورٹس کا شعبہ چین میں بہت فعال انداز میں ڈیویلپمینٹ کی جانب گامزن ہے۔ عالمی سطع پر ای۔سپورٹس کے شعبے کی ترویج کو واضح کرتے یوئے سانگ نے کہا کہ اس انڈسٹری کی عالمی سطع پر مارکیٹنگ کے فروغ کو جس تیزی سے فروغ حاصل ہو رہا ہے، اس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ اس انڈسٹری کو عالمی سطع پر کس قدر تیزی سے اہمیت اجاگر ہو رہی ہے، گزشتہ سال جکارتہ میں واقع ایشیئن گیمز کے موقع پر پہلی بار کسی بڑے سپورٹس فورم پر ای۔ سپورٹس کے شعبے کو شامل کیا گیا تھا، اور اس ایونٹ میں چائینہ کی ٹیم نے ای۔سپورٹس کے شعبے میں گولڈ میڈل حاصل کیا، اور مجموعی طور پر چین کی ٹیم نے ای۔سپورٹس کے شعبوں میں دو گولڈ میڈل اور ایک سلور میڈل جیتنے میں کامیاب رہی۔ چین کی 2018ای۔سپورٹس ڈیویلپمینٹ رپورٹ کے مطابق چین کی 2017کی مجموعی 250ملین ای۔سپورٹس گیمز ریکارڈ کی گئیں، جو اس حوالے سے مجموعی طور پر عالمی سطع پر ریکارڈ کی گئی ای۔سپورٹس کا آدھ گنا رہی ہیں۔ اس طرح سے چین کی مجموعی طور پر ای۔سپورٹس مالیت کی شرح 746ملیںن ڈالر ریکارڈ کی گئی ہے۔ 2016میں چین کی وزارتِ تعلیم نے ای۔سپورٹس اینڈ مینجمنٹ کو نمایاں طور پر کالج لیول نمایاں فہرست میں شامل کرتے ہوئے ای۔سپورٹس کے پیشہ ورانہ کھلاڑیوں کو ملک کی ہائیر ایجوکیشن میں شامل کیا۔ دوسری جانب چین کے32.6فیصد کھیل کے شوقین لوگوں اور عناصر کا یہ کہنا ہے کہ وہ ای۔سپورٹس کے شعبوں میں ملازمت حاصل کرنے کے خواہاں ہیں اور اس حوالے سے ایک چوتھائی والدین نے اپنے بچوں کی اس کھیل میں آگے بڑھنے کے حوالے سے بھر پور حوصلہ افزائی کی ہے۔جس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ ای۔سپورٹس کس قدر تیزی سے چین میں فروغ حاصل کر رہا ہے۔۔

Scroll To Top