اشتہارات پر سرکاری کنٹرول ختم کررہے ہیں، فواد چوہدری

  • سابقہ حکومتوں نے سرکاری اشتہارات کو ذاتی تشہیر کے لئے استعمال کیا ، موجودہ حکومت میرٹ پر اشتہارات جاری کرے گی
  • میڈ یا ہاﺅسز کی مشکلات سے بخوبی آگاہ ہیں،تمام بقایاجات فوری طورپر اداکئے جائیں گے ، ملازمین بے روزگار نہیں ہونے دیں گے ، وزیر اطلاعات کی پریس بریفنگ

ISLAMABAD, NOV 12:  Jean François Cautain, Ambassador of European Union called on Chaudhry Fawad Hussain, Federal Minister for Information and Broadcasting.=DNA PHOTOاسلام آباد(آن لائن)وفاقی وزیراطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے سرکاری اداروں کے ذمہ میڈیا کے بقایاجات کی فوری ادئیگی کی ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ میڈیا اداروں کی مشکلات سے بخوبی آگاہ ہیں اور میڈیاورکرز کو بے روزگار نہیں ہونے دیں گے اس لئے میڈیا کے تصدیق شدہ تمام بقایاجات فوری طورپر اداکئے جائیں سابقہ حکومتوں نے سرکاری اشتہارات کو ذاتی تشیر کے لئے استعمال کیا جب کہ موجودہ حکومت میرٹ پر اشتہارات جاری کرے گی ۔پیر کے روز پریس بریفنگ دیتے ہوئے فواد چوہدری نے کہا کہ وزیراعظم نے تمام سرکاری اداروں کو میڈیا اداروں کے بقایاجات فوری طورپر اداکرنے کی ہدایت کردی ہے ۔وزیراعظم عمران خان بقایاجات ادائیگی کی ہدایات میڈیا ہا¶سز اور ادارون کو درپیش مشکلات کے باعث جاری کیں ،تاہم فی الحال صرف ان ادائیگیوں کو یقینی بنانے کی ہدایت کی ہے جو تصدیق شدہ ہے ۔وفاقی وزیراطلاعات نے کہا کہ اشتہارات پر سرکاری کنٹرول ختم کررہے ہیں آئندہ تمام سرکاری اشتہارات میرٹ پر دیئے جائیں گے پچھلی حکومت نے سرکاری اشتہارات کو ذاتی تشہیل کے لئے استعمال کیا جس کے باعث ادائیگیوں کو توازن متاثر ہوا تحریک انصاف کی حکومت نے روزگار دینے کا وعدہ کیا تھا جبکہ میڈیا اداروں کی جانب سے لوگوں کو نوکریوں سے فارغ کرنے کی خبروں پر نوٹس لیتے ہوئے وزیراعظم نے بقایاجات کی ادائیگی کا حکم دیا ہے تاکہ نچلے درجے کے میڈیا ورکرز کو بے روزگار ہونے سے بچایا جاسکے واضح رہے کہ گزشتہ دنوں میڈیا ہا¶س مالکان نے وزیراعظم سے ملاقات کی تھی جس میں ان کی جانب سے دعوی کیا گیا تھا کہ ہمارے حکومت پاکستان کے ذمے تقریباً8ارب روپے کے بقایاجات ہیں جن کی عدم ادائیگی کے باعث ادارے چلانا مشکل ترہوتا جارہا ہے ۔تاہم جب وزیراعظم عمران خان نے متعلقہ حکام سے تصدیق کروائی تو پتہ چلا کہ صرف ڈیڑھ ارب روپے کے واجبات تصدیق شدہ ہیں باقی سب متنازعہ معاملات ہیں جن میں سے بعض ایسے ہیں جو سابقہ حکمرانوں کے زبانی احکامات پر اشتہار اور دیگر خدمات کے عوض سرکاری اداروں کے ذمے واجب الاوا ہیں لیکن ضروری کاروائی مکمل نہیں کی گئی۔جس پر عمران خان نے تصدیق شدہ واجبات کی ادائیگی کی یقین دہانی کرواتے ہوئے متنازعہ معاملات کے حل کےلئے ایک کمیٹی
تشکیل دے کر معاملے کو منطقی انجام تک پہنچانے کا عندیہ دیاتھا لیکن بیشتر میڈیا اداروں نے گزشتہ کئی ماہ سے سٹاف کی ڈا¶ن سائزنگ شروع کر رکھی ہے جبکہ میڈیاورکرز کو تنخواہوں کی عدم ادائیگی یا تاخیر سے ادائیگی بھی معمول بن چکی ہے ۔

Scroll To Top