ایمنسٹی انٹرنیشنل کا 14کشمیریوں کے قتل کی آزادانہ ، منصفانہ تحقیقات کا مطالبہ

  • کلگام انکاونٹر کے بعد جو ہوا انتہائی افسوس ناک تھا اور اگر حکام اضافی احتیاط کرتے ہوئے اس بات کو یقینی بناتے کہ انکاو¿نٹر ختم ہونے تک شہری اس علاقے سے دور رہیں تو ایسا ہرگز نہیں ہوتا
  • واقعے کےخلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے تاکہ ذمہ داران کو شہریوں کے انسانی حقوق کی حفاظت نہ کرنے کے جرم میں انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کیا جاسکے، ایگزیکٹو ڈائریکٹر آکر پٹیل

ایمنسٹی انٹرنیشنلنئی دہلی (آن لائن)انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر کے علاقے کلگام میں 14 کشمیریوں کے قتل کے خلاف آزاد اور منصفانہ تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔21 اکتوبر کو مقبوضہ کشمیر کے علاقے کلگام میں بھارتی فوج کی جانب سے سرچ آپریشن کیا گیا تھا جس کے نتیجے میں کم از کم 14 کشمیری جاں بحق ہوئے تھے۔نوجوانوں کے قتل کے خلاف کلگام کے علاقے میں بھارت مخالف مظاہرے کیے گئے، جس پر قابض فوج کی فائرنگ سے (باقی صفحہ7 بقیہ نمبر10
متعدد کشمیری زخمی ہوئے تھے۔مظاہرے کے دوران بم دھماکے کے نتیجے میں 5 مظاہرین موقع پر ہی دم توڑ گئے تھے، دھماکے سے زخمی ہونے والا ایک اور کشمیری شہری بعد میں سری نگر ہسپتال میں جاں بحق ہوا تھا۔بھارتی فوج کی جانب سے مظاہرین پر پیلیٹ گن اور آنسو گیس بھی برسائی گئی تھی جس کے نتیجے میں تقریباً 30 افراد زخمی ہوئے تھے۔ایمنسٹی انٹرنیشنل انڈیا کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر آکر پٹیل نے کہا کہ ‘ کلگام انکاونٹر کے بعد جو ہوا انتہائی افسوس ناک تھا اور اگر حکام اضافی احتیاط کرتے ہوئے اس بات کو یقینی بناتے کہ انکاو¿نٹر ختم ہونے تک شہری اس علاقے سے دور رہیں تو ایسا ہرگز نہیں ہوتا’۔انہوں نے مزید کہا کہ ‘ سیکیورٹی فورسزاور مسلح افراد کے درمیان بالواسطہ یا بلاواسطہ جھڑپوں میں اضافی احتیاط کرنی چاہیے تاکہ علاقے میں موجود شہریوں کو نقصان نہ پہنچے’۔آکر پٹیل کا کہنا تھا کہ ‘ شہریوں کی حفاظت اولین ترجیح ہونی چاہیے’۔انہوں نے بتایا کہ ‘اس واقعے کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے اور حکام پر زور دیا جارہا ہے تاکہ ذمہ داران کو مقبوضہ کشمیر کے شہریوں کے انسانی حقوق کی حفاظت نہ کرنے کے جرم میں انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کیا جاسکے’۔پاکستان کی جانب سے کلگام میں 21 اکتوبر کو بھارتی جارحیت کی شدید مذمت کی گئی، پاکستان بارہا کشمیریوں کی خواہش کے مطابق مسئلہ کشمیر کے حل کا مطالبہ کرتا رہا ہے۔

Scroll To Top