حکومت کا بجلی چوروں کیخلاف فوری کریک ڈاون کا فیصلہ

  • صوبوں کو ضروری ہدایات جاری ، ضلعی سطح پر ڈی سی اوز کریک ڈاون کی نگرانی کریں گے،وزیر اعظم کو بریفنگ
  • گھریلو، صنعتی و دیگر شعبوں کی توانائی کی ضروریات کو پورا کیا جائے گا،کسی دوسرے کی چوری کا خمیازہ عوام بھگتیں، قبول نہیں: وزیرِ اعظم

بجلی چوریاسلام آباد(صبا ح نیوز) وفاقی حکومت نے بجلی چوروں کیخلاف فوری طور پر کریک ڈاون کا فیصلہ کرلیا۔وزیرِاعظم عمران خان کی زیرِ صدارت انرجی ٹاسک فورس کا اجلاس ہوا جس میں کئی اہم فیصلے کیے گئے۔اجلاس میں وزیراعظم کو بریفنگ دی گئی کہ بجلی چوری کے خلاف تمام صوبوں کو بھی ہدایت جاری کر دی گئی ہے، ضلعی سطح پر ڈی سی اوز بجلی چوری کے خلاف کریک ڈاون کی نگرانی کریں گے۔وزیراعظم نے پاور ڈویژن کو معیاری ٹرانسفارمرز کی دستیابی یقینی بنانے، ٹرانسفارمرز مسائل کے حل اور مختلف کمپنیوں کی شمولیت کیلئے پلان پیش کرنے کی ہدایت کی ہے۔اس حوالے سے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ کسی دوسرے کی چوری اور بد انتظامی کا خمیازہ عوام بھگتیں یہ قبول نہیں لہذا گھریلو، صنعتی و دیگر شعبوں کے مستقبل کیلئے توانائی کی ضروریات کو پورا کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ انرجی پالیسی کیلئے منظم و مربوط فریم ورک تشکیل دیا جارہا ہے اور درآمد شدہ فیول پر انحصار کم اور موجود وسائل بروئےکار لانے کیلئے اقدامات کررہے ہیں۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ بجلی چوری کے خلاف وزیرِاعلی کی زیرِ نگرانی خصوصی ٹاسک فورس بنا دی۔اجلاس میں ملک میں تیل اور گیس کی دریافت و پیداوار پر خصوصی توجہ دینے کا فیصلہ کیا گیا۔بریفنگ میں وزیر اعظم کو بتایا گیا کہ شیل گیس کے موجود ذخائر میں پاکستان دنیا بھر میں 9 ویں نمبر پر ہے لیکن ان ذخائر کو بروئےکار لانے پر ماضی میں کوئی توجہ نہیں دی گئی۔بریفنگ کے مطابق ساڑھے 5 سالوں میں تیل و گیس کی دریافت کیلئے ایک بلاک بھی ایوارڈ نہیں ہوا، مزید 30 بلاکس ایوارڈ کرنے کے سلسلے میں اقدامات کیے جائیں گے۔ اجلاس میں تیل و گیس کے ذخائر کی دریافت تیز کرنے کیلئے سیسمک سروے او جی ڈی سی ایل سے کرانے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔اجلاس میں بتایا گیاکہ ملکی تاریخ میں پہلی دفعہ موجودہ حکومت کی جانب سے آئندہ 25سالوں کی ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے جامع انرجی پالیسی و لائحہ عمل تشکیل دیاجا رہا ہے تاکہ جہاں گھریلو، صنعتی و دیگر شعبہ جات کو مد نظر رکھتے ہوئے مستقبل کے لئے توانائی کی ضروریات کو پورا کیا جاسکے وہاں انرجی مکس کا حصول، ملک میں موجود وسائل کا مکمل استعمال، قابل تجدید ذرائع کا فروغ اور انرجی پالیسی کے لئے منظم و مربوط فریم ورک تشکیل دیا جا سکے۔ درآمد شدہ فیول پر انحصار میں کمی لانے اور ملک میں موجود وسائل کو برے کار لانے کے لئے خصوصی اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ وزیرِ اعظم کی جانب سے تیل و گیس دریافت کی عالمی شہرت یافتہ کمپنی ایگزان کی پاکستان واپسی کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا گیا کہحکومت تیل و گیس کے ذخائر کی دریافت کے سلسلے پاکستان آنے والی تمام غیر ملکی کمنپیوں کو ہر ممکنہ سہولت فراہم کرے گی

Scroll To Top