بھارت دھمکیاں نہ دے ،پوری قوم مقابلے کیلئے تیار کھڑی ہے،عمران خان

  • دھمکیوں سے مغلوب ہونے والے نہیں ،امن کی خواہش کو کمزوری نہ سمجھا جائے ، بھارتی قیادت تکبر ختم کرے،کسی عالمی طاقت کا دباﺅ قبول کرنیوالے نہیں ،تعلقات بہتر ہونے سے دونوں ملکوں کی معیشت میں بہتری آئے گی
  • حکومت پولیس کے کام میں کسی قسم کی مداخلت نہیں کرے گی سرکاری ملازمین پر کسی غلط کام کے لیے پریشر نہیں ڈالا جائے گا، سعودی عرب بھیک مانگنے نہیں سرمایہ کاری لینے گئے تھے،وزیراعظم کا لاہور میں سرکاری ملازمین سے خطاب
لاہور:۔ وزیر اعظم عمران خان صوبائی کابینہ اجلاس سے خطاب کر رہے ہیں، گورنر اور وزیر اعلیٰ بھی ہمراہ ہیں

لاہور:۔ وزیر اعظم عمران خان صوبائی کابینہ اجلاس سے خطاب کر رہے ہیں، گورنر اور وزیر اعلیٰ بھی ہمراہ ہیں

لاہور(صباح نیوز) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان کی امن پالیسی کو کمزوری نہ سمجھا جائے دھمکیاں دینا بند کی جائیں ، یہاں پوری قوم ساتھ کھڑی ہے /کسی عالمی طاقت کا دباﺅ قبول کرنیوالے نہیں بھارتی قیادت تکبر ختم کرے سعودی عرب بھیک مانگنے نہیں سرمایہ کاری لینے گئے تھے لاہور میں سرکاری ملازمین سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ہمارا ایجنڈا پاکستان کا ایجنڈا ہے پاکستان ایک مشکل دور سے گزر رہا ہے پاکستان کو مالیاتی خسارے کا سامنا ہے ملکی ادارے بھی خسارے میں جا رہے ہیں قوموں پر مشکل وقت آتے رہتے ہیں وہی ملک ترقی کرتا ہے جہاں حکومت کا نظام بہتر ہو کسی بھی ملک کی ترقی کے لیے حکومتی نظام کا بہتر ہونا ضروری ہوتا ہے سنگاپور اور سوئٹزرلینڈ نے کوالٹی گورننس کی وجہ سے ترقی کی آج مجھے فخر ہے کہ شوکت خانم ایک انٹرنیشنل ادارہ بنا ہوا ہے اگر اسے جوائنٹ کمیشن انٹرنیشنل کا سرٹیفیکیٹ ملا ہے تو اسکی وجہ یہی ہے کہ ہم نے کبھی میرٹ نہیں توڑی کبھی کسی کو سفارشی بھرتی نہیں کروایا اسی لیے وہ ادارہ اوپر چلا گیا ہے ہم اسی طرح گورننس بھی ٹھیک کریں گے ہم نے خیبر پختونخوا کی طرح پاکستان بھر کی پولیس کو ٹھیک کرنا ہے بیوروکریسی کو غیر سیاسی کرنا ہے میرٹ لانا ہے خیبر پختونخوا میں پولیس نظام کو بہتر کیا پانچ ہزار کرپٹ اہلکاروں کو برطرف کیا ہے 2014میں پنجاب میں پولیس افسر ووٹوں کے لیے دباﺅ ڈال رہے تھے آئندہ ایسی حرکت بالکل برداشت نہیں کی جائیگی موجودہ حکومت پولیس کے کام میں کسی قسم کی مداخلت نہیں کرے گی سرکاری ملازمین پر کسی غلط کام کے لیے پریشر نہیں ڈالا جائے گا 60کی دہائی میں ہماری بیوروکریسی کی دنیا بھر میں مثالیں دی جاتی تھیں چاہتے ہیں کہ ملک بھر میں بیوروکریسی کا وہی مثالی نظام دوبارہ آئے افسران کسی بھی قسم کے دباﺅ کے بغیر کام کریں ہم آپ کے ساتھ ہیں یقین دلاتا ہوں کہ بیوروکریسی پر کسی قسم کا سیاسی دباﺅ نہیں ہو گا جب بیوروکریسی میرٹ پر کام کرے گی عوام کے حالات بدلیں گے مخالفیں نے اشتہاروں میں ترقی دکھانے کے لیے پانچ ارب روپے خرچ کیے وزیر اعظم نے کہا کہ نیا پاکستان نئی سوچ کا نام ہے دنیا بھر میں مشاہدہ کریں ترقی یافتہ ملکوں کی قیادت سادہ زندگی بسر کرتی ہے اعلٰی افسران تھا نہ کلچر تبدیل کرنے میں کردار ادا کریں افسران عام آدمی کے جان و مال کا تحفظ یقینی بنائیں وزیر اعظم نے کہا کہ وزیر اعظم ہاﺅس میں بھی شکایات سیل بنائیں گے وزیر اعظم نے کہا کہ میں امید کرتا ہوں کہ بھارت کی قیادت کا تکبر ختم ہوگا ان کو کوئی غلط فہمی ہے ہم سمجھتے ہیں کہ اگر بھارت کے ساتھ ہمارے تعلقات اچھے ہو جائیں تو برصغیر میں غربت کم ہو گی تجارت شروع ہو جائے گا اس کو کمزوری نہیں سمجھنا چاہیے عام آدمی کی زندگی بہتر بنانے کے لیے اقدامات کریں گے ہمیں عوام کا ایک ایک پیسہ بچانا ہے ملک میں سرمایہ کاری کے لیے سعودی عرب اور پھر یواے ای کا دورہ کیا سرمایہ کاری آنے سے ملک ترقی کرے گا حکومتی نظام بہتر بنانے سے ہی ملک میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری آئے گی امید کرتے ہیں بھارت سے تعلقات بہتر ہوں گے تعلقات بہتر ہونے سے دونوں ملکوں کی معیشت بہتر ہو گی پاکستان کسی بھی دھمکی میں آنے والا نہیں پاکستان کی امن کی پالیسی کو کمزوری نہ سمجھا جائے یہاں پوری قوم ساتھ کھڑی ہے وزیر اعظم نے کہا کہ اچھا وقت ضرور آئے گا اور ملک ترقی کرے گا۔

Scroll To Top