سی پیک بارے پروپیگنڈہ مسترد:پاک چین تعلقات ناقابل تسخیر ہیں ،عبد الرزاق داﺅد

  • سی پیک کی جلد تکمیل کیلئے پرعزم ہیں:بیجنگ اسلام آباد کی حمایت جاری رکھے گا، کن شوان
  • چینی وزیر خارجہ کے حالیہ دورے میں اسٹریٹیجک تعاون جاری رکھنے اور سی پیک منصوبوں کو مکمل کرنے کے عزم کا اعادہ کیا گیا ، منصوبے کے حوالے سے پاکستان کا عزم غیر متزلزل ہے، سی پیک ہماری قومی ترجیح ہے،مشیر برائے صنعت و تجارت کا برطانوی اخبار کو دیے گئے انٹرویو سے متعلق وضاحتی بیان
  • پاکستان تعلقات وقت کی آزمائشوں پر ہمیشہ پورے اترے ہیں ،حکومتوں کی تبدیلیوں کے باوجود مستحکم رہے ہیں،دونوں ممالک تمام شعبوں میں مضبوط تعلقات کا عزم رکھتے ہیں، چینی وزیر خارجہ کے حالیہ دورے کا مقصد کئی عشروں پر محیط دو طرفہ تعلقات کی تجدید تھا،سی پیک کی جلد تکمیل پر طرفین کا اتفاق ہے، ترجمان چینی وزارت خارجہ کی وضاحت
اسلام آباد:۔ وزیر اعظم عمران خان سے چیئرمین واپڈا لیفٹیننٹ جنرل(ر) مزمل حسین ملاقات کر رہے ہیں

اسلام آباد:۔ وزیر اعظم عمران خان سے چیئرمین واپڈا لیفٹیننٹ جنرل(ر) مزمل حسین ملاقات کر رہے ہیں

اسلام آباد(الاخبار نیوز) وزیراعظم عمران خان کے مشیر برائے صنعت و تجارت عبدالرزاق داو¿د نے پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے سے متعلق برطانوی اخبار کی خبر کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ سی پیک کے لیے پاکستان کا عزم غیر متزلزل ہے۔عبدالرزاق داو¿د کا برطانوی اخبار کا دیے گئے انٹرویو سے متعلق وضاحتی بیان میں کہنا ہے کہ سی پیک منصوبے کے حوالے سے حالیہ انٹرویو کے کچھ حصے سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کیے گئے۔مشیر تجارت نے کہا کہ چین کے وزیر خارجہ کے دورے میں اسٹریٹیجک تعاون جاری رکھنے اور سی پیک منصوبوں کو پورا کرنے کے عزم کو دہرایا گیا اور اس منصوبے کے حوالے سے پاکستان کا عزم غیر متزلزل ہے۔انہوں نے کہا کہ چین کو آگاہ کیا گیا کہ سی پیک ہماری قومی ترجیح ہے جب کہ چینی وزیر خارجہ وانگ ژی نے دونوں ممالک کے مفاد میں اس منصوبے کی اہمیت پر زور دیا۔مشیر تجارت نے مزید کہا کہ پاک چین تعلقات ناقابل تسخیر ہیں اور دونوں ممالک میں راہداری منصوبے کے مستقبل سے متعلق مکمل یکسوئی ہے۔واضح رہے کہ برطانیہ کے معروف اقتصادی جریدے ‘فنانشل ٹائمز’ نے اپنی حالیہ رپورٹ میں دعویٰ کیا تھا کہ پاکستان کی نئی حکومت چین کے ساتھ سی پیک معاہدے پر نظرِثانی پر غور کر رہی ہے۔رپورٹ کے مطابق برطانوی اخبار کو دیئے گئے انٹرویو میں مشیر صنعت و تجارت عبدالرزاق داو¿د نے کہا کہ سابق حکومت نے سی پیک پر چین سے بات چیت میں اپنی ذمے داری بخوبی نہیں نبھائی، تیاری کے بغیر مذاکرات اور معاہدے کرنے سے چین کو بہت زیادہ فائدہ پہنچا اور چینی کمپینوں کو ٹیکس بریک اور دیگر مراعات دینے سے پاکستانی کمپنیاں نقصان میں ہیں۔رپورٹ کے مطابق عبدالرزاق داو¿د نے یہ خیال بھی ظاہر کیا کہ اپنے ا±مور منظم کرنے تک ان معاہدوں پر فی الحال ایک سال کے لیے عملدرآمد روک دینا چاہیے اور سی پیک کی مدت کو مزید 5 سال کے لیے بڑھایا بھی جاسکتا ہے۔رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا کہ عبدالرزاق داو¿د کی اس تجویز سے دیگر وزراءاور مشیر بھی متفق ہیں کہ منصوبوں کی تکمیل کی مدت اور قرضوں کی ادائیگی کی مدت بڑھانا معاہدے منسوخ کرنے سے بہتر آپشن ہوگا، تاہم حکومت محتاط ہے کہ معاہدوں پر نظرثانی کے عمل میں اس بات کا خیال رکھا جائے کہ چینی حکومت ناراض نہ ہو۔برطانوی اخبار کے مطابق وزیر خزانہ اسد عمر کا کہنا ہے کہ پاکستان ملائشیا کی طرح اس معاملے کو ہینڈل نہیں کرنا چاہتا۔ ملائشیا نے چین کے تعاون سے جاری پائپ لائن پروجیکٹ بند کردیے اور بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو میں شامل ریل لنک معاہدے پر نظر ثانی کررہا ہے۔
اسلام آباد(مانیٹرنگ)چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان کن شوان نے دس تاریخ کو بیجنگ میں کہا کہ چین پاکستان تعلقات وقت کی آزمائشوں پر پورے اترے ہیں اور پاکستان میں حکومتوں کی تبدیلیوں کے باوجود مستحکم رہے ہیں۔چین کے وزیر خارجہ وانگ ای نے دورہ پاکستان کےد وران پاکستان کی نئی حکومت کے رہنماوں کے ساتھ وسیع پیمانے پر اتفاق رائے حاصل کیا ہے۔ چین پاکستان کی نئی حکومت کے ساتھ ملکر دو طرفہ تعلقات کو دوستانہ ہمسایئگی کی مثال ، علاقائی امن و اسحتکام کی محافظ اور دی بیلٹ انڈ روڈ کی تعمیر کی علامت بنائیگا۔ترجمان نے کہا کہ جناب وانگ ای کے دورہ پاکستان کے دوران دونوں فریقوں کے طے پانے والے اتفاق رائے میں سیاسی اعتماد ، تزویراتی رابطے کی مضبوطی، ایک دوسرے کی حمایت ، عوامی زندگی کی بہتری کے لیے تعاون کا فروغ، پاکستان میں زراعت، تعلیم ، طب و صحت سمیت مختلف شعبوں میں چین کی طرف سے زیادہ امداد و حمایت، سی پیک کے سلسلے میں عوامی زندگی سے قریبی تعلق رکھنے والے منصوبوں پر زیادہ توجہ ، سکیورٹی امور میں قریبی تعاون اور رابطے اور انسداد دہشت گردی سمیت مختلف شعبوں میں تبادلے وغیرہ شامل ہیں

Scroll To Top