لاکھڑا کول ڈویلپمنٹ کمپنی اسکینڈل: قومی خزانے کو 17کروڑ کانقصان پہنچا نے والے گرفت سے تاحال محفوظ

  • کرپٹ مافیا مال بنا کر رفوچکر ،سیکرٹری پیٹرولیم نے چپ سادھ لی،2سال پہلے سامنے آنے والے اسکینڈل کی تحقیقات میں کوئی پیش رفت نہ ہو سکی
  • مسلسل کئی سال تک مارکیٹ ریٹ سے کم پر من پسند کمپنی کو فائدہ پہنچانے کیلئے کوئلے کی سپلائی میں ملوث افسران اثرورسوخ کے باعث ہر قسم کی کارروائی سے محفوظ

وزارت پیٹرولیماسلام آباد (آن لائن) وزارت پیٹرولیم میں 17 کروڑ روپے کرپشن کا سکینڈل سامنے آگیا ہے نئے سکینڈل میں لاکھڑا کول ڈویلپمنٹ کمپنی کے افسران ملوث ہیں جنہوں نے قیمتی کوئلہ ارزاں ریٹس پر من پسند کمپنی کو فروخت کرکے قومی خزانہ کو 17 کروڑ روپے کا نقصان پہنچایا ہے یہ سکینڈل دو سال پہلے سامنے آیا تھا اور وزارت پیٹرولیم کے سیکرٹری نے اس کی اعلیٰ پیمانے پر تحقیقات کی ذمہ داری لی تھی لیکن مسلسل تبدیلی اور نااہلی اور کرپشن اور وزارت میں کرپٹ افراد کی اجارہ داری کے باعث اس سکینڈل کی نہ اب تک تحقیقات ہوسکیں اور نہ ہی ذمہ دار افسران سے لوٹی ہوئی دولت واپس لی گئی ہے۔ گزشتہ چار سالوں کے دوران کروڑوں روپے مالیت کا کوئلہ لاکھڑا پاور کمپنی لمیٹڈ کو فروخت کرکے افسران نے قومی خزانہ کو سترہ کروڑ روپے کا نقصان پہنچایا تھا۔ لاکھڑا کمپنی کے افسران نے یہ کوئلہ مارکیٹ ریٹس سے کم نرخوں پر لاکھڑا پاور جنریشن کمپنی کو دیا پہلے سال میں 126 ملین ٹن جس کی وصولی قیمت 2300 روپے فی ٹن تھی جبکہ مارکیٹ مین اس کی قیمت 2636 فی ٹن تھی اس طرح افسران نے 42 ملین روپے کا نقصان کیا۔ دوسرے سال 26 ملین ٹن 684 روپے فی ٹن کم ریٹس پر فروخت کیا جس سے 18 ملین کا نقصان ہوا۔ تیسرے سال 37 ملین ٹن کوئہ 642 روپے فی ٹن کم ریٹ پر فروخت ہوا جس سے 40 ملین روپے کا نقصان ہوا چوتھے سال 63 ملین ٹن کوئلہ 642 روپے فی ٹن کم ریٹس پر فروخت ہوا جس سے چالیس ملین کا نقصان ہوا جبکہ آخری سال 69 ملین ٹن کوئلہ 642 روپے کم ریٹس پر فروخت ہوا جس سے 45 ملین کا نقصان ہوا افسران سے مک مکا کرکے یہ کوئلہ فروخت ہوا جس سے قومی خزانہ کو 17 کرور روپے کا نقصان ہوا تھا جس کی ذمہ داری متعلقہ اعلیٰ حکام پر ہے سیکرٹری پیٹرولیم اس معاملہ پر جواب نہیں دے سکے۔

Scroll To Top