ہمیں 28ہزار کروڑ کے قرضے ورثے میں ملے، فواد چوہدری

  • میڈیا اور ا پوزیشن کے بغیر آگے بڑھنا ممکن نہیں ، ریگولیٹری ادارے بنانے کا مقصد سنسرشپ ہر گز نہیں ،اطلاعات تک صحافیوں کی رسائی یقینی بنانا میری ذمہ داری ہے
  • میڈیا کے حوالے سے کوئی قانون سازی صحافتی تنظیموں کی مشاورت کے بغیر نہیں ہوگی ،چوہدری فواد حسین کا سی پی این اے کے اجلا س سے خطاب

فواد حسن فواد

اسلام آباد (این این آئی) وزیر اطلاعات ونشریات چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ سر کاری ٹی وی سے سینٹر شپ ختم کر دی ہے ،میڈیا کے حوالے سے کوئی بھی قانون سازی صحافتی تنظیموں کی مشاورت کے بغیر نہیں ہوگی ، میڈیا اور ا پوزیشن کے بغیر آگے بڑھنا ممکن نہیں ہے ، ریگولیٹری ادارے بنانے کا مقصد سنسرشپ ہر گز نہیں ،مستقبل کے جدید دور میں سنسر شپ حکومت کے ہاتھ میں نہیں رہے گی ،پی آئی ڈی کو آزاد ادارہ بنانے کیلئے تجاویز دی جائیںاطلاعات تک صحافیوں کی رسائی یقینی بنانا میری ذمہ داری ہے ،جہاں معلومات چھپائی جارہی ہوں اس کا مطلب ہے وہاں گڑبڑہے۔ جمعرات کو وفاقی وزیر اطلاعات چوہدری فواد حسین نے سی پی این اے کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 6 ستمبر کے دن کے حوالے سے آج کے دن ہم اپنے شہداءکو خراج تحسین پیش کرتے ہیں ۔انہوںنے کہاکہ ہم نے آتے ہی اپنے منشور پر کام شروع کر دیا ،ہم نے سرکاری ٹی وی سے سینسرشپ ختم کی ہے۔ چوہدری فواد نے کہا کہ ہم نے آتے ہی پورے ملک میں 15 لاکھ درخت لگائے ہوئے ہیں ،پاکستان کو ترقی کی راہ پر لے کر جانا ہمارا منشور ہے اس پر عمل کریں گے ۔ چوہدری فواد نے کہاکہ میڈیا کو اس حوالے سے حکومت کا ساتھ دینا ہے ۔انہوںنے کہاکہ ملک اوپر جائےگا تو ہم سب اوپر جائیں گے ،ہمیں 28ہزار کروڑ کے قرضے ورثے میں ملے۔انہوںنے کہاکہ ملک امیر ہوگا تو میڈیا کو بھی فنڈز دیئے جاسکیں گے۔فواد چوہدری نے کہاکہ ٹیکنالوجی میں ترقی کی وجہ سے میڈیا میں بھی تیزی سے تبدیلیاں رونما ہونگی ،نئے سیٹلائٹ نظام سے میڈیا میں انقلاب آرہا ہے۔وزیر اطلاعات نے کہاکہ مستقبل میں آپ کو جدت کی طرف جانا پڑے گا۔ چوہدری فواد حسین نے کہاکہ میڈیا کے حوالے سے کوئی قانون سازی صحافتی تنظیموں کی مشاورت کے بغیر نہیں ہوگی ۔انہوںنے کہاکہ میڈیا اور اپوزیشن کے بغیرآگے بڑھنا ممکن نہیں ،الیکٹرانک،پرنٹ،سوشل میڈیا کا ایک دوسرے پر انحصار ہے۔وزیر اطلاعات نے کہا کہ مستقبل کے جدید دور میں سنسر شپ حکومت کے ہاتھ میں نہیں رہے گی۔چوہدری فواد نے کہاکہ ریگولیٹری ادارے بنانے کا مقصد سنسرشپ ہر گز نہیں۔ وزیر اطلاعات نے کہاکہ میڈیا کی آزادی ریاست کےلئے انتہائی اہم ہے ،انہوںنے کہاکہ بحیثیت ریاست ہم تیسری دنیا کے ممالک سے بہت آگے ہیں ،سرکاری اشتہارات کی تقسیم کیلئے فارمولا وضع کیا جائیگا۔انہوںنے کہاکہ اشتہارات کی تقسیم کا فارمولا بھی صحافتی تنظیموں نے بناکر دینا ہے ،ماضی میں زیادہ اشتہارات دیئے گئے،اب درمیانی راستہ نکالا جائیگاانہوںنے کہاکہ پی آئی ڈی کو آزاد ادارہ بنانے کیلئے تجاویز دی جائیں۔چوہدری فواد حسین نے کہا کہ اطلاعات تک صحافیوں کی رسائی یقینی بنانا میری ذمہ داری ہے ،جہاں معلومات چھپائی جارہی ہوں اس کا مطلب ہے وہاں گڑبڑہے۔

Scroll To Top