پاک بھارت انڈس واٹر کمشنر زمذاکرات :پکل ڈل اور لوئر کلنائی منصوبوں کے ڈیزائن پر شدید اعتراض

  • پکل ڈل ڈیم کی اونچائی کو 5 فٹ کم کیا جائے، جھیل بھرنے اور وہاں سے پانی چھوڑے کا پیٹرن بھی واضح کیا جائے
  • لوئر کلنائی پن بجلی گھر منصوبے کے حوالے سے بھی تحفظات کا اظہار ،بھارتی وفد نے بھی اپنا موقف پیش کیا

پاک بھارت انڈس واٹر کمشنرلاہور( این این آئی )پاکستان اور بھارت کے درمیان انڈس واٹر کمشنز زکی سطح پر مذاکرات کے پہلے روز پاکستان کی جانب سے دریائے چناب پر پکل ڈل اور لوئر کلنائی پن بجلی گھر وں کے ڈیزائن پر اٹھائے گئے اعتراضات پر بھرپور موقف اپنایا گیا ، پاکستانی وفد نے بھارت کے سامنے تکنیکی بنیادوں پر اپنا نقطہ نظر پیش کیا ، آج ( جمعرات) دو روزہ مذاکرات کا آخری دور ہوگا ۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان اور بھارت کے انڈ س واٹر کمشنر ز کی سربراہی میں دو روزہ مذاکرات نیسپاک کے دفتر میں شروع ہوئے ۔ پاکستانی وفد کی قیادت مہر علی شاہ جبکہ بھارتی وفد کی قیادت پی کے سیکسینہ نے کی ۔مذاکرات کے دوران پاکستانی وفد نے موقف اپنایا کہ بھارت کی جانب سے دریائے چناب پر دو ہائیڈرو پاور منصوبوںپکل ڈل اور لوئر کلنائی کے منصوبوں کے ڈیزائن پر شدید اعتراض ہے ۔ پکل ڈل پن بجلی ذخیرہ کرنے کی سطح اونچائی میں پانچ میٹر کمی کی جائے جبکہ سپل ویز کے گیٹس کی تنصیب میں سطح سمندرسے چالیس میٹر اونچائی کا اضافہ کیا جائے۔پکل ڈل پن بجلی گھر کی جھیل بھرنے اور وہاں سے پانی چھوڑے کا پیٹرن بھی واضح کیا جانا چاہیے ۔ پاکستانی وفد نے لوئر کلنائی پن بجلی گھر منصوبے کے حوالے سے بھی اپنے تحفظات واضح کئے ۔مذاکرات کے دوران بھارتی وفد کی جانب سے بھی اپنا موقف پیش کیا گیا تاہم پاکستان کی جانب سے اعتراضات بدستور بر قرار ہے ۔ دو روز ہ مذاکرات کا دوسرا دور آج جمعرات کے روز نیسپاک میں دوبارہ شروع ہوگا ۔

Scroll To Top