آمد ن سے زائد اثاثے : خواجہ آصف اور کیپٹن صفدر کیخلاف نیب تحقیقات کی منظوری

  • خواجہ آصف پر 3 ارب 66 کروڑ روپے سے زائد کا قومی خزانے کو نقصان پہنچانے کا الزام ہے،کیپٹن (ر) صفدر کے خلاف این اے 21 مانسہرہ میں پی ڈبلیو ڈی کو 9 ارب روپے جاری کرنے اور من پسند ٹھیکیداروں کے ذریعے غیر معیاری کام کروانے پر تحقیقات کی منظوری
  • بابرخان غوری کےخلاف 974 بھرتیوں اور 2 ارب 85 کروڑ روپے کا قومی خزانے کو نقصان پہنچانے کے الزام پر ریفرنس دائر کرنے کا فیصلہ، عبد الحکیم بلوچ، ظفر علی لغاری و دیگرکےخلاف آمدن سے زائد اثاثوں کی انکوائری کی منظوری

خواجہ آصف اور کیپٹن صفدر

اسلام آباد (این این آئی)نیب نے آمدن سے زائد اثاثوں میں خواجہ آصف کیخلاف تحقیقات کی منظوری دیدی ہے۔جمعرات کو اسلام آباد میں چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کی سربراہی میں نیب ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس ہوا جس میں سابق وفاقی وزیر خواجہ آصف و دیگر کےخلاف منی لانڈرنگ اور آمدن سے زائد اثاثوں کےخلاف تحقیقات کی منظوری دی گئی، اجلاس میں کیپٹن (ر) صفدر کے حلقہ این اے 21 مانسہرہ میں پی ڈبلیو ڈی کو 9 ارب روپے جاری کرنے اور من پسند ٹھیکیداروں کے ذریعے غیر معیاری کام کروانے پر تحقیقات کی منظوری بھی دی گئی۔نیب نے اجلاس میں سابق وفاقی وزیر بابرخان غوری کے خلاف 974 بھرتیوں اور 2 ارب 85 کروڑ روپے قومی خزانے کو نقصان پہنچانے سے متعلق ریفرنس دائر کرنے اور صوبائی ورکس ویلفیئر بورڈ پنجاب، سندھ، بلوچستان کے افسران کے خلاف آلات کی خریداری میں خوردبرد پر انکوائری کی منظوری دی۔ نیب ایگزیکٹوبورڈ نے این ٹی ایس کے ہارون رشید اور وحید اللہ ناگارہ، سابق ریجنل سربراہ محمد جاوید اور محب الرحمان کے خلاف تحقیقات کی منظوری دیتے ہوئے کہا کہ این ٹی ایس کے عہدیدار پنجاب پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر ڈیپارٹمنٹ میں بدعنوانی اور امتحانات کے عمل میں غیرشفافیت کے مرتکب پائے گئے۔

Scroll To Top