این اے ۔106 این اے ۔73 رانا ثنااللہ اور خواجہ آصف کی کامیابی کے نوٹیفکیشنز روکنے کاحکم

لاہور ہائی کورٹلاہور(این این آئی+آن لائن) لاہور ہائیکورٹ نے الیکشن کمیشن کو حلقہ این اے 106 سے مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا ثنا اللہ کی کامیابی کا نوٹیفکیشن جاری کرنے سے روک دیا۔این اے 106فیصل آباد سے پاکستان تحریک انصاف کے امیدوار ڈاکٹر نثار نے درخواست دائر کی تھی جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ رانا ثنا اللہ نے نواز شریف کے استقبال کو حج کے مترادف قرار دیا۔رانا ثنا اللہ نے آئین کے آرٹیکل 62،63کی خلاف ورزی کی ہے لہٰذا انہیں نااہل قرار دے کر بطور رکن قومی اسمبلی کامیابی کا نوٹیفکیشن روکا جائے۔عدالت نے رانا ثنا اللہ کی کامیابی کا نوٹیفکیشن روکتے ہوئے الیکشن کمیشن کو نوٹس جاری کیا ہے۔ دریں اثناءلاہور ہائی کورٹ کے جسٹس مامون الرشید نے این اے 73 سے مسلم لیگ (ن) کے کامیاب امیدوار خواجہ آصف کی کامیابی کا نوٹیفکیشن روکنے کا حکم دے دیا اور عدالت نے الیکشن کمیشن اور خواجہ آصف سے جواب طلب کر لیا۔ پی ٹی آئی کے عثمان ڈار نے دوبارہ گنتی اور ان کی کامیابی کا نوٹیفکیشن روکنے کیلئے عدالت میں درخواست دائر کی تھی۔عثمان ڈار نے ایڈوکیٹ انیس ہاشمی کی وساطت سے لاہور ہائیکورٹ میں درخواست دائر کر رکھی ہے۔ دائر درخواست میں الیکشن کمیشن، ریٹرنگ افسر اور خواجہ آصف کو فریق بنایا گیا ہے۔ درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ سیالکوٹ این اے 73 سے انتخاب لڑا اور دوسرے نمبر پر رہا۔ ریٹرنگ افسر نے فارم 45 پولنگ ایجنٹس کو فراہم نہیں کیا۔میرے حلقے میں 7ہزار 346وٹ مسترد ہوئے۔خواجہ آصف سے صرف 1406 وٹوں سے شکست ہوئی۔ریٹرنگ افسر، کو حلقے کی دوبارہ گنتی کیبدرخواست دی جسے مسترد کردیا گیا۔ درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ عدالت حلقے میں دوبارا گنتی کروانے کا حکم صادر کرے۔عدالت دوبارا گنتی مکمل ہونے تک خواجہ آصف کے کامیابی کا نوٹیفکیشن روکنے کا حکم دے۔

Scroll To Top