بی جے پی پاکستان کو دفن کرنا ضروری ہے ۔۔

کیا پاکستان کی تاریخ میں کسی بھی دوسری سیاسی پارٹی نے عام انتخابات میں ایک کروڑ اڑسٹھ لاکھ ووٹ حاصل کئے ہیں۔۔۔؟ کیا پاکستان کی تاریخ میں کسی بھی دوسرے لیڈر نے بیک وقت مختلف صوبوں میں پانچ نشستیں جیتی ہیں ۔۔۔؟
اگر نہیں تو یہ شور کیوں اٹھا ہے ؟ یہ شور کہ دھاندلی ہوئی ہے۔۔۔ الیکشن چرایا گیا ہے ۔۔۔!
الیکشن چرایا گیا ہے یا نہیں ، یہ جاننے کے لئے ایک آسان طریقہ یہ ہے کہ وہ ایک کروڑ اڑسٹھ لاکھ ووٹ جو تحریک انصاف نے حاصل کئے ہیں ان کی گنتی دوبارہ کرلی جائے اور یہ بھی اطمینان کرلیاجائے کہ وہ تمام ووٹ حقیقی ہیں یا نہیں۔۔۔
دوسرا طریقہ یہ ہے کہ جس حلقے کے بارے میں بھی ہارنے والے کو شبہ ہے کہ اس میں دھاندلی ہوئی ہے اسے قانون اور طے شدہ طریقہ ءکار کے مطابق کھول کر دیکھ لیا جائے ۔۔۔ یہ پیشکش عمران خان نے انتخابات جیتنے کے بعد اپنی پہلی ہی تقریر میں کھل کر کی ہے۔۔۔
لیکن جب تک یہ عمل مکمل نہیں ہوتا اس وقت تک حکومت قانون اور قاعدہ کے مطابق بننی اور چلنی چاہئے۔۔۔
دھاندلی کا شور انتخابات سے پہلے ہی اٹھا ہوا تھا۔۔۔ کہا جارہا تھا کہ ” خلائی مخلوق“ نے مصطفی کمال کی پی ایس پی ، پیر پگاڑا کی جی ڈی اے ، اور چوہدری نثار علی خان کی جیپ کو متعدد حلقوں میں کامیاب کرانے اور تحریک انصاف کو ایک واضح برتری دلا کر اپنی پسند کی حکومت قائم کرانے کا بندوبست کررکھا ہے۔۔۔
انتخابات ہوئے تقریباً ایک ہفتہ گزر چکا ہے ہنوز بہت بڑے پیمانے پر کامیابی حاصل کرنے کے باوجود تحریک انصاف حکومت سازی کا کام مکمل نہیں کرسکی۔۔۔ اسے ہر جگہ اعداد و شمار میں کمی کا سامنا ہے۔۔۔کیا خلائی مخلوق اس قدر نالائق ہے کہ اس نے الیکشن چرایا بھی تو اس قدر بھونڈے طریقے سے چرایا کہ اتنی ساری ” بدنامی “ کمانے کے باوجود اپنا کوئی ہدف پورا نہیں کرسکی ؟
یہ وہی خلائق مخلوق ہے جس نے میاں نوازشریف جیسے نالائق اور کم عقل شخص کو ” قائداعظم ثانی“ بننے کے راستے پر ڈالا تھا۔۔۔؟ یہ درست ہے کہ اقتدار میں آنے کے بعد میاں نوازشریف نے اپنے خزانوں کا پیٹ بھرنے کے کام میں فقیدِ المثال کا میابی حاصل کی اور انہوںنے دنیا کو بتا دیا کہ اقتدار کا استعمال اپنی امارت کو چار چاند لگوانے کے لئے کیسے کیا جاتا ہے۔۔۔ مگر یہ وہ شخص ہے جو دنیا کے بڑے سمندروں کے نام نہیں بتا سکتا ۔۔۔ اس شخص کو ایک تہائی صدی تک وزیراعظم یا پھر کلیدی سیاسی لیڈر کی حیثیت سے ملک پر مسلط کرنے والی خلائی مخلوق ایکدم اس قدر نالائق کیسے ہوگئی کہ آج حکومت بنانے کے لئے اس خلائی مخلوق کے ” لاڈلے “ کو اتنے سارے پاپٹز بیلنے پڑ رہے ہیں۔۔۔؟
حقیقت یہ ہے کہ یہ ” قائداعظم ثانی “ دراصل بی جے پی پاکستان کا سربراہ بن چکا تھا۔۔۔ اور یہ صورتحال پاک فوج کے لئے سوہان روح تھی۔۔۔
پاک فوج یا خلائی مخلوق کا جرم صرف یہ ہے کہ اس نے انتخابات کی تاریخ میں پہلی بار دھاندلی کے دروازے میاں نوازشریف کی جماعت پر بند کردیئے ۔۔۔
یہ درست ہے کہ انتخابات کے نتائج ان لوگوں پر بجلی بن کر گرے ہیں جو عمران خان کی یلغار کو محض ایک خیال خام سمجھنا چاہتے تھے۔۔۔ ایسے لوگ سیاسی پارٹیوں میں تو ہیں ہی ، میڈیا میں بھی بہت بڑی تعداد میں موجود ہیں۔۔۔ ایسے لوگوں میں اکثریت میاں نوازشریف کی بے پایاں دولتمندی اور ان کی صاحبزادی کی لامحدود سخاوت کے فیض یافتگان پر مشتمل ہے۔۔۔
میں سمجھتا ہوں کہ جتنا ضروری یہ جاننا ہے کہ انتخابات میں دھاندلی ہوئی ہے یا عوام کی بھاری اکثریت نے اپنے ووٹوں کی قوت سے سومنات کے سارے بت توڑ گرائے ہیں۔۔۔ اتنا ہی ضروری یہ جاننا بھی ہے کہ عوام کی سوچ پر اثر انداز ہونے والا کون کون سا تجزیہ کار اور صحافی میاں نوازشریف اور ان کی صاحبزادی کی نوازشات سے استفادہ کررہا تھا ، کررہا ہے اور کرتا رہے گا۔۔۔
وقت آگیا ہے کہ ” بی جے پاکستان “ کو جڑ سے اسی طرح اکھاڑ پھینکا جائے جس طرح الطاف حسین اور اس کے نیٹ ورک کو اکھاڑ پھینکا گیا ۔۔۔۔

 

Scroll To Top