ن لیگ۔ پی پی، ایم ایم اے، ایم کیو ایم، پی ایس پی نے انتخابی نتائج مسترد کر دئیے

  • انتخابات میں کروڑوں لوگوں کے مینڈیٹ کی توہین کی گئی اور صریحاً دھاندلی کی گئی ہے ¾ پاکستان کی عوام اپنے جمہوری حق کے ساتھ نا انصافی برداشت نہیں کریں گے ،شہباز شریف
  • پولنگ ایجنٹس کو پولنگ اسٹیشنزسے باہر نکال کر دروازے بند کردیئے گئے ، فارم 45 بھی نہیں دیا گیا ، سیاسی جماعتوں کے الزامات

سیاسی جماعتیں

اسلام آباد /کراچی/لاہور/پشاور (این این آئی)پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے انتخابات میں دھاندلی کے الزامات عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ آج ملک کو 30 سال پیچھے لے جایا گیا ہے۔شہباز شریف نے لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ انتخابات میں کروڑوں لوگوں کے مینڈیٹ کی توہین کی گئی اور صریحاً دھاندلی کی گئی ہے۔سابق وزیر اعلیٰ پنجاب نے کہا کہ ملتان سمیت پنجاب کے دیگر شہروں کے نتائج کا اعلان کیا گیا تاہم پولنگ کا وقت ختم ہونے کے کئی گھنٹے بعد بھی لاہور میں میرے اور ایاز صادق سمیت کسی بھی حلقے کے نتائج کا کوئی سرکاری اعلان نہیں کیا گیا۔انہوںنے کہا کہ ہمارا خیال تھا کہ الیکشن میں ووٹرز کو آزادانہ اظہار رائے کا موقع دیا جائے گا تاہم ایسا نہیں ہوا اور عوامی مینڈیٹ کی تذلیل کی گئی۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی عوام اپنے جمہوری حق کے ساتھ نا انصافی برداشت نہیں کریں گے اور مسلم لیگ (ن) اس دھاندلی کو مسترد کرتی ہے۔انہوں نے کہا کہ عوامی مینڈیٹ کے ساتھ کی گئی اس زیادتی کے انتہائی منفی نتائج سامنے آئیں گے۔مسلم لیگ (ن) کے صدر کا کہنا تھا کہ اوکاڑہ، لاہور، راجن پور، کے پی کے سمیت کئی جگہ ہمارے پولنگ ایجنٹس کو پالنگ اسٹیشن سے نکال دیا گیا اور ان کے فارم 45 کا مطالبہ کرنے پر انہیں کچے کاغذ تھمادیے گئے تھے۔اس موقع پر سینیٹر مشاہد حسین کا کہنا تھا کہ 2018 کا الیکشن سلیکشن تھا۔ان کا کہنا تھا کہ ملک کی تاریخ میں پہلی بار ایسا ہوا ہے کہ 5 سیاسی جماعتیں ایک ہی بات کر رہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہونے والے انتخابات پاکستان کی تاریخ کے سب سے گندے انتخابات ہیں اور یہ الیکشن کمیشن اور نگراں حکومت کی ناکامی ہے۔ ادھر پاکستان میں عام انتخابات 2018 کےلئے الیکشن کا عمل مکمل ہونے کے بعد گنتی شروع ہوتے ہی پاکستان مسلم لیگ (ن)، پاکستان پیپلز پارٹی ، متحدہ مجلس عمل ¾ایم کیو ایم سمیت دیگر سیاسی جماعتوں نے شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے فارم 45 فراہم نہ کرنے کا الزام عائد کردیا۔ مسلم لےگ (ن) کی مرکزی ترجمان مریم او رنگزیب نے مصدق ملک اور دیگر کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ ہمیں نتائج پر تحفظات ہیں، مصنوعی نتیجے قبول نہیں ہیں۔ انہوں نے سوال اٹھایا کہ فارم 45 میں کیا تبدیلی کی جا رہی ہے؟۔ ایسا کیا ہے جو بند کمروں میں ہو رہا ہے اور پولنگ ایجنٹس کو باہر نکال دیا گیا ہے، سارے معاملے پر مسلم لےگ (ن) تحقیقات کا مطالبہ کرتی ہے جبکہ الیکشن کمیشن کو اس بات کا جواب دینا پڑے گا۔انہوںنے کہاکہ راناثنا اللہ ، دانیال عزیز اور دیگر کے حلقوں کے نتائج میں تبدیلی کی جارہی ہے۔ مصدق ملک نے کہاکہ ڈی جی خان میں رزلٹ روک لئے گئے۔ پرویز ملک ، ایاز صادق اورادیگر کے فارم 45روک لئے گئے ہیں۔ راناثنا اللہ کے حلقے سے ہمارے 9 پولنگ ایجنٹس کو باہر نکال دیا گیاہے۔ اسی طرح صوبائی اسمبلی کے حلقوں میں بھی فارم 45روک لیا گیا ہے۔ بلوچستان، سینٹ الیکشن میں سب نے دیکھا کیا ہوا۔ انہوںنے کہاکہ ہم صبح سے پر امید تھے لیکن (ن) لیگ کے ساتھ زیادتی کی جارہی ہے،الیکشن کمیشن اور نگران حکومت حالات کا جائزہ لے۔ فارم 45کے بغیر ہمیں الیکشن قبول نہیں ہوگا۔انہوںنے کہاکہ اگر مینڈیٹ چوری کیا گیا تو بڑی تباہی آئے گی۔ٹوبہ ٹیگ سنگھ میں بھی دھاندلی کی جارہی ہے۔ الیکشن کمیشن نوٹس لے اس سے پہلے کہ مسلم لےگ (ن) کے کارکن نوٹس لےں ۔ انہوںنے کہاکہ خرم دستگیر جو مارجن سے جیت رہے تھے اب ان کے نتیجے کو بھی روک لیا گیا ہے۔(ن )لیگ نے کبھی انتشار اور فساد کی بات نہیں کی بلکہ ہمیشہ امن کی بات کی ہے اور اگر مسلم لےگ (ن) کا مینڈیٹ چوری ہوا تو نہ ہمیں قبول ہوگا اور نہ ہی عوام کو قبول کریں گے ۔ادھر ایم کیو ایم پاکستان کی رابطہ کمیٹی کے رکن سید فیصل سبز واری نے پارٹی رہنماﺅں کے ہمراہ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم پاکستان کر اچی اور حید ر آبا دمیں مختلف پو لنگ اسٹیشنز پر ہما رے پو لنگ ایجنٹس کو نکال کر نتا ئج بدلنے کی کو شش کی جا رہی ہے ایسے تمام پولنگ اسٹیشنو ں کے با ہر جہا ں ہما رے پو لنگ ایجنٹس کو با ہر نکا ل کر ناجا نے کیا کچھ کیا جا رہا ہے دھر نا دینگے اور احتجاج کر ینگے ۔انہو ں نے کہا کہ ووٹنگ کا عمل مکمل ہو نے کے بعد قواعد کے تحت پو لنگ ایجنٹس کی مو جو دگی میں ووٹو ں کی گنتی کی جا تی ہے لیکن بغیر کسی عذر کے ہما رے پو لنگ ایجنٹس کو با ہر نکا ل کر قانون نا فذ کر نے والے ادارو ں اورالیکشن کا عملہ گڑ بڑکر نے کی کو شش کر رہے ہیں اور فارم 45جو نتا ئج کیلئے بھرا جا تا ہے الیکشن کمیشن کے ضابطہ کے برخلا ف پریذائڈنگ افسر ،اور ریٹرنگ افسر تصدیق شدہ نتا ئج دینے کے بجا ئے سادہ کا غذپرنتا ئج دینے کی کوشش کر رہے ہیں جو ہم قبو ل نہیں کر یں گے اور ہما ری اطلا عات کے مطا بق نتا ئج تبدیل کر نے کی کو شش کی جا رہی ہے ۔فیصل سبز واری نے چیف الیکشن کمشنر سے مطا لبہ کیا کہ ان پر بھاری ذمہ دارای عائد ہو تی ہے کہ وہ اس کا نوٹس لیں اور انتخا با ت میں اس قسم کی کارروائی شفاف انتخابا ت کو مشکو ک کر رہی ہے ہمیں خد شہ ہے کہ نتا ئج تبد یل کر نے کی سر کا ری سر پر ستی میں کو شش کی جا رہی ہے ۔اگر اس سلسلہ میں فورہ نو ٹس لیتے ہو ئے کا رروائی عمل میں نہ لا ئی گئی تو حق پر ست عوام دھر نا دینے پر مجبو ر ہوں گے ۔پاک سر زمین پارٹی کے رہنما رضاہارون نے کہا کہ کراچی اور حیدرآباد میں ہمارے کسی پولنگ ایجنٹ کو کسی بھی پولنگ اسٹیشن میں سرٹیفائیڈ کاپی نہیں دی جارہی ہے اور ہمارے پولنگ ایجنٹ کو باہر نکال دیا گیا ہے۔رضا ہارون نے کہا کہ کراچی اور حیدر آباد میں ہمارے پولنگ ایجنٹوں کو باہر نکال دیا گیا ہے اور فارم 45 نہیں دیا جا رہا ہے اور سادہ کاغذ پررزلٹ دیا جار ہا ہے اس کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے ۔انہوں نے کہا کہ سب نے دیکھا کہ بڑی تعداد میں لوگ ووٹ ڈالنے کے لئے نکلیں تھے لیکن ابھی تک رزلٹ فراہم نہیں کیا جا رہا ہے سمجھ نہیں آرہا ہے کہ یہ ہورہاہے۔انہوں نے کہا کہ ہمارے لئے پہلا الیکشن نہیں ہے ہم نے پہلے کئی بار انتخاب لڑ چکے ہیں ایسا کسی انتخاب میں نہیں ہو تا تھا لیکن موجودہ صورتحال پر تحفظات ہیں۔ادھر تحریک لبیک پاکستان نے کارکنان کو ریڈ الرٹ جاری کردیاہے ۔تحریک لبیک پاکستان کے ترجمان مینڈیٹ کو چوری کرنے کی اجازت کسی کو نہیں دیں گے۔کارکنان کسی بھی قسم کی ہنگامی کال کے لئے تیار رہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹی ایل پی کے پولنگ ایجنٹس کو دھمکیاں دے کر باہر نکالا جارہا ہے۔رزلٹس کے ساتھ ٹیمپرنگ کی جارہی ہے۔یہ کام الیکشن کمیشن کی ناک کے نیچے کیا جارہا ہے۔ادھرکراچی میںعام انتخابات کے لیے پولنگ ختم ہونے اور ووٹوں کی گنتی شروع ہونے کے فوری بعد پولنگ اسٹیشنز میں موجود پولنگ ایجینٹس کو باہر نکال دیا گیا کراچی کے علاقے کورنگی،لائنز ایریا،پی آئی بی اور نیوکراچی سمیت دیگر حلقوں میں پولنگ ایجینٹس کے احتجاج کے باوجود سیکوریٹی کی مدد سے باہرنکال دیا گیا جبکہ پریزائیڈنگ افسران نے پولنگ ایجنٹس کے مطالبہ پر انہیں سادہ کاغذ پر رزلٹ تھما دیے جس پر سیایی جماعتیں سراپا احتجاج بن گئی ہیں متحدہ قومی موومنٹ پیپلزپارٹی،متحدہ مجلس عمل،مسلم لیگ(ن) سمیت مختلف جماعتوں نے کراچی میں الیکشن کمیشن کے اس رویے اور سادہ کاغذ پر رزلٹ دینے کی مذمت کی ہے پاکستان پیپلزپارٹی کے سینیٹر تاج حیدر کا کہنا ہے کہ ووٹوں کی گنتی کے وقت پولنگ ایجنٹوں کو نکالا جانا قابل مذمت ہے، الیکشن کمیشن عملہ اور سیکیورٹی اہل کاروں کی موجودگی میں پی پی کے پولنگ ایجنٹوں کو نکالا گیا،متحدہ قومی موومنٹ کے فیصل سبزواری کا کہنا ہے کہ اگر فارم 45 پر نتائج نہ دئیے گئے تو تمام پولنگ اسٹیشنز ، ڈی آر او کے دفاتر پر دھرنے دیں گے ، متحدہ مجلس عمل کے حافظ نعیم الرحمن کا کہنا ہےکہ ہولنگ شفاف ہوئی کہیں سے کسی قبضے یا کوئی غلط اطلاع نہیں آئی تاہم جب نتائج آنا شروع ہوئے تو غیریقینی صورتحال پیدا ہوگئی پورے شہر سے اطلاعات آرہی ہیں کہ پریزائڈنگ افسر فارم 45 نہیں دے رہے۔کچی رسید پر نتایج دیئے جارہے ہیںجبکہ پولنگ اسٹیشن پر پولنگ ایجنٹس کو باہر نکال دیا گیا ہے فارم 45 اور 46 دونوں نہیں دیئے جارہے متحدہ مجلس عمل مطالبہ کرتی ہے کہ فوری طور پر فارم 45 اور 46 ایجنٹس کو دیا جائے۔جہاں جہاں سے پولنگ ایجنٹس کو نکالا گیا ہے وہاں تحقیقات کرائی جائیں ہم موجودہ صورتحال میں احتجاج کا حق رکھتے ہیں۔

Scroll To Top