کٹاس راج مندرکیس :سیمنٹ فیکٹریوں پر میٹھے پانی کے استعمال کی پابندی

  • حکومتیں سیمنٹ فیکٹریوں سے ملی ہوئی ہیں،پنجاب حکومت نے ان فیکٹریوں پر اب تک ٹیکس کیوں نہیں لگایا، ہم خود ٹیکس نافذ کریں گے ،چیف جسٹس کے ریمارکس
  • فیکٹریاں کروڑوں روپے کا پانی مفت استعمال کررہی ہیں ، پاکستان سے سب کچھ لے رہے ہیں مگر کچھ دینے کو تیار نہیں

کٹاس راج مندرکیس

اسلام آباد (این این آئی)سپریم کورٹ نے کٹاس راج کیس میں سیمنٹ فیکٹریوں کو میٹھے پانی کے استعمال سے روک دیا۔ منگل کو چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں کٹاس راج کیس سے متعلق سماعت ہوئی، دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ سیمنٹ فیکٹریاں کروڑوں روپے کا مفت پانی حاصل کررہی ہیں اور اربوں روپے کا پانی کھاگئے، پاکستان سے لے رہے ہیں پر پاکستان کو کچھ دے نہیں رہے، حکومتیں سیمنٹ فیکٹریوں سے ملی ہوئی ہیں۔جسٹس ثاقب نثار نے کہاکہ سیمنٹ فیکٹریاں میٹھے پانی کا قومی خزانہ لوٹ رہی ہیں، ہم نے چار ماہ سے پانی کی رقم وصول کرنے کا کہا ہوا ہے، پنجاب حکومت نے سیمنٹ فیکٹریوں پر اب تک کیوں ٹیکس نہیں لگایا، ہم خود ٹیکس نافذ کریں گے۔عدالت نے سیمنٹ فیکٹریوں کو میٹھے پانی کے استعمال سے روک دیا اور سماعت یکم اگست کو ملتوی کرتے ہوئے تمام ریکارڈ بھی طلب کرلیا۔

Scroll To Top