پروپیگنڈہ کے محاذ پر پاکستان کی توپیں ہمیشہ خاموش رہتی ہیں ۔۔۔ 16-07-2013

kal-ki-baat
بھارتی وزارت داخلہ کے ایک سابقہ اعلیٰ افسر نے جو چونکا دینے والا سنسنی خیز انکشاف کیا ہے وہ ہمارے اُن حکومتی اکابرین کی آنکھیں کھولنے کے لئے کافی ہونا چاہئے جو دن رات بھارت کے ساتھ دوستی اور بھائی چارہ قائم کرنے کا راگ الاپتے رہتے ہیں۔
اس چونکا دینے والے سنسنی خیز انکشاف میں یہ بات کھل کرسامنے آتی ہے کہ 2001ءمیں بھارتی پارلیمنٹ پر حملہ اور 2008ءمیں بمبئی کی خونریزی ¾ دونوں واقعات کے پیچھے بھارت کی خفیہ ایجنسیاں تھیں۔
اس انکشاف میں سامنے آنے والا نام ایک سابق بھارتی تحقیقاتی افسر ستیش ورما کا ہے۔
یہ خوفناک انکشاف بھارتی میڈیا میں زیربحث آچکا ہے۔ ایک اخبار کے مطابق بھارتی وزارت داخلہ کے انڈر سیکرٹری عشرت جہاں نے عدالت میں ایک حلفیہ بیان جمع کرایا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ سی بی آئی اور ایس آئی سی کی تفتیشی ٹیم کے ایک اہم رکن ستیش ورما نے ان کے سامنے برملا طور پر یہ اعتراف کیا کہ نئی دہلی اور ممبئی دونوں شہروں میں پیش آنے والے جن خونی واقعات کا ملبہ دہشت گردی کے نام پر پاکستان پر ڈالا گیا تھا ان کے پیچھے خود بھارت کا اپنا ہاتھ تھا۔ وجہ اِن بھارتی کارروائیوں کی یہ بتائی گئی ہے کہ 2001ءمیں نئی دہلی میں رونما ہونے والی دہشت گردی کے بعد بھارتی پارلیمنٹ میں ” پوٹا“ کا سخت قانون منظور کیاگیا اور اس قانون کا رخ بندوق کی نالی کی طرح مسلمانوں کی طرف موڑ دیا گیا۔ ممبئی کے نومبر2008ءوالے خونی واقعات کے بعد بھی ایک ایسا ہی قانون منظور کرایا گیا۔
دونوں مواقع پر پاکستان کو عالمی سطح پر جس انداز میں دیوار کے ساتھ لگانے کی کوشش کی گئی وہ کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں۔
پاکستان عسکری نقطہ نظر سے ناقابلِ تسخیر ہے یا نہیں ` اس پر مختلف آراءہوسکتی ہیں لیکن اس بات پر کوئی دوسری رائے نہیں کہ پروپیگنڈے کے محاذ پر بھارت پاکستان سے بہت آگے ہے۔
اس چونکا دینے والے سنسنی خیز انکشاف میں یہ بات کھل کرسامنے آتی ہے کہ 2001ءمیں بھارتی پارلیمنٹ پر حملہ اور 2008ءمیں بمبئی کی خونریزی ` دونوں واقعات کے پیچھے بھارت کی خفیہ ایجنسیاں تھیں۔ لچسپی ہے کہ بھارت کے کردار اور عزائم کو دلیری کے ساتھ بے نقاب کیا جائے۔۔۔۔`

Scroll To Top