ن لیگ کو شکست دینے کیلئے سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے: عمران خان

  • ہماری ہر حکمت عملی انتخابات جیتنے کی ہے ، مقابلہ اسٹیٹس کو سے ہے، اسٹیٹس کو کی سب سے بڑی جماعت ن لیگ ہے ،اصل مقابلہ بھی ن لیگ سے ہی ہے، دوسری بڑی جماعت پیپلز پارٹی ہے جو اندرون سندھ تک محدود ہوچکی ہے، اس بار انہیں کراچی میں بھی مشکل پیش آئیگی
  • ن لیگ کو شکست دینے کےلئے ہر حکمت عملی اپنائیں گے، اگر ہمیں لگا کہ کسی حلقے میں ہمارا امیدوار کمزور ہے لیکن کوئی دوسرا امیدوا ر تگڑا ہے اور ن لیگ کے امیدوار کو شکست دے سکتا ہے تو ہم سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے، کتاب اور چوہدری افتخار کے پیچھے بھی شریف برادران ہیں،شریف برادران ہمیشہ یا تو شوکت خانم پر حملہ کرتے ہیں یا میری ذاتی زندگی پر، چیئرمین پی ٹی آئی

پاکستان کو فلاحی ریاست بنائیں گے، عمران خان

اسلام آباد(الاخبار نیوز)پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ ن لیگ کو شکست دینے کے لیے جہاں ضروری ہوا سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے۔ چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ ’ہم فرشتے نہیں انسان ہیں غلطیاں ہوتی ہیں، شریف برادران یا تو شوکت خانم پر حملہ کرتے ہیں یا میری ذاتی زندگی پر‘۔عمران خان نے کہا کہ اس بار ان کی ہر حکمت عملی انتخابات جیتنے کی ہے اور ان کا مقابلہ اسٹیٹس کو کی جماعتوں سے ہے۔انہوں نے کہا کہ اسٹیٹس کو کی سب سے بڑی جماعت ن لیگ ہے اور اصل مقابلہ ن لیگ سے ہی ہے، دوسری جماعت پیپلز پارٹی ہے لیکن وہ اندرون سندھ تک محدود ہوگئی ہے، اس بار انہیں کراچی میں بھی مشکل ہوگی۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ ن لیگ کو شکست دینے کے لیے ہر طریقہ اپنائیں گے، اگر ہمیں لگا کہ کسی حلقے میں ہمارا امیدوار کمزور ہے لیکن کوئی ن لیگ کا مخالف تگڑا ہے اور ن لیگ کے امیدوار کو شکست دے سکتا ہے تو ہم سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے۔عمران خان نے کہا کہ کتاب اور چوہدری افتخار کے پیچھے بھی شریف برادران ہیں، یہ لوگ ہمیشہ سے ایسا ہی کرتے آئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمیں میچ میں ن لیگ کو ہرانا ہے، پیپلز پارٹی اور ن لیگ کے لوگ پی ٹی آئی میں شامل ہوئے ہیں تاہم 60 فیصد لوگ پی ٹی آئی کے اپنے ہی ہیں۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ ’الیکشن جیتنے کے لیے اسٹریٹجی بنادی ہے، امیدواروں کو ٹکٹ دینے سے قبل کرائے گئے مقبولیت کے 95 فیصد سروے درست ثابت ہوئے، ہمارا منشور تیارہے 3 سے 5 جولائی کے درمیان جاری کردیں گے۔ عمران خان نے کہا کہ تحریک انصاف میں جہانگیر ترین اور شاہ محمود قریشی کے گروپس موجود ہیں۔عمران خان نے یہ امید بھی ظاہر کی کہ ایک بار جب پی ٹی آئی حکومت میں آجائے گی تو یہ گروپنگ ختم ہوجائے گی۔سربراہ تحریک انصاف نے پروگرام کیپیٹل ٹاک میں گفتگو کرتے ہوئے اس بات کا بھی اعلان کیا ہے کہ وہ ارکان قومی و صوبائی اسمبلی کو ترقیاتی فنڈز جاری نہیں کریں گے۔حامد میر سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ایم این ایز اور ایم پی ایز کو ترقیاتی فنڈز دینے کا عمل کرپشن کو فروغ دیتا ہے۔قومی فضائی ایئر لائن پی آئی اے کے بارے میں بات کرتے ہوئے چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ اگر ان کی حکومت آئی تو وہ پی آئی اے کی نجکاری نہیں کریں گے۔

Scroll To Top