عمران خان کا نگران وزیراعظم کو خط: گورنر خیبر پختونخوا کی فوری برطرفی کا مطالبہ

  • شفاف انتخابات کے انعقاد کے لئے ن لیگ سے تعلق رکھنے والے متنازعہ گورنر اقبال ظفر جھگڑاکا ہٹایا جانا ناگزیر ہ قرار دے دیا
  • وفاق میں ن لیگ کی جانب سے مقرر کردہ بیوروکریسی تاحال تبدیل نہیں کی گئی جو شفاف انتخابات پر سوالیہ نشان بن سکتی ہے

عمران خان 5 حلقوں سے الیکشن لڑیں گے

اسلام آباد( آن لائن ) پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین عمران خان نے نگران وزیراعظم جسٹس ناصر الملک کو خط کے ذریعے بتایا ہے کہ وفاقی دارالحکومت سمیت ملک بھر میں سابق ادوار میں تعینات کئے جانے والی بیوروکریسی فی الفور اپنے عہدوں سے ہٹائی جائے تاکہ شفاف الیکشن کے لئے پہلا قدم بڑھانا ناگذیر ہے۔ انہوں نے خط میں خیبر پختونخواہ کے گورنر کو بھی اپنے منصب سے ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے اور کہا ہے کہ ن لیگ اور پیپلز پارٹی کی جانب سے لگائی گئی وفاقی و صوبائی بیوروکریسی میں بدل دی جائے۔ گورنر پختونخواہ ن لیگ کے جنرل سیکرٹری رہے ہیں جس میں کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں۔ گورنر ابھی بھی فاٹا کے حوالے سے مالی اختیارات اپنے پاس رکھے ہوئے ہیں اور فاٹا میں جانبدرانہ کردار کے حامل ہیں۔ اسی طرح وفاق میں ن لیگ کی جانب سے مقرر کردہ بیوروکریسی تاحال تبدیل نہیں کی گئی۔ بیوروکریسی میں یہ جانبدار عناصر انتخابات کی شفافیت کے لئے بڑا خطرہ ہیں۔ سندھ اور پنجاب میں پیپلز پارٹی اور ن لیگ کی جانب سے لگائی گئی بیورو کریسی انتخابات کے عمل کو متاثر کرنے کے لئے کردار ادا کر سکتے ہیں۔ نگران حکومتیں انتخابات کے انتظامات کے حوالے سے شدید سست روی کا شکار ہیں۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ عام انتخابات پر شکوک و شبہات کے ہمیں کسی طور پر گوارہ نہیں۔ نگران وزیراعظم فوری مداخلت کر کے انتخابات کے انعقاد کی راہ میں حائل نقائص کو دور کریں

Scroll To Top