ضرورت ہے فردِ واحد کی۔۔۔۔ 26-03-2013

kal-ki-baat
تاریخ بتاتی ہے کہ ” فردِ واحد“ بڑا فرق ڈالتا ہے۔ تاریخ بنانے میں بھی ۔ اور تاریخ بگاڑنے میں بھی۔
میں پہلے تاریخ بگاڑنے والے ” افراد “ کا ذکر کروں گا۔ اور تاریخ بھی اپنی یعنی ملت ِاسلامیہ کی سامنے رکھوں گا۔
ابوعبداللہ ” فرد ِ واحد “ ہی تھا جس نے اندلس سے مسلمانوں کا آفتابِ اقبال ہمیشہ ہمیشہ کے لئے غروب کرادیا۔
اسی طرح میر جعفربھی فردِ واحد تھا۔ میرصادق بھی فردِ واحد تھا۔ اور اگر ہلاکو خان کے ہاتھوں بغداد کی تباہی کو سامنے رکھوں تو ” ابن علقمی“ بھی فردِ واحد تھا۔
میں پاکستان کے حوالے سے اس ضمن میں کسی ” فردِ واحد “ کا نام نہیں لوں گا۔پاکستان کو موجودہ مقام تک پہنچانے میں اتنے سارے لوگوں نے جوش و خروش کے ساتھ حصہ لیا ہے کہ کوئی ایک نام سوچ میں آہی نہیں رہا۔
اب بات ہوجائے تاریخ بنانے والے ” افراد “ کی۔
تو عظیم ترین ناموں میں اشرف ترین تو ہمارے رسول کا ہے۔ آپ کے ساتھ ہی حضرت ابوبکر صدیق ؓ` حضرت عمرفاروق ؓ اور دوسرے عظیم صحابہ ؓ کے نام آتے ہیں۔
اس سطح سے ذرا نیچے آیا جائے تو چین کو ماﺅ نے `جرمنی کو ہٹلر نے اور آج کے ایران کو خمینی نے بنایا۔
باقی مثالیں آپ خود سوچ سکتے ہیں ۔
پاکستان کے حوالے سے اقبال ؒ اور جناح ؒ کے نام تو تاریخ میں ہمیشہ زندہ رہیں گے۔
آپ سوچ رہے ہوں گے کہ اس موضوع کا انتخاب میں نے کس مقصد کے لئے کیا ہے۔تو مقصد کوئی نہیں۔ یوں ہی خیال آیا کہ ” کیا 23مارچ2013ءکو لاکھوں کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے عوام سے چھ وعدے کرنے والا عمران خان وہ ” فردِ واحد “ ثابت ہوپائے گا ` جس کے ظہور کے بغیر زوال سے عروج کی طرف اس مملکت کا سفر شروع ہو ہی نہیں سکتا۔؟“

Scroll To Top