گورنر سنٹرل بینک آف چائینہ نے مالیاتی سیکٹر کے حوالے سے اوپننگ اپ شیڈول کی تفصیلات اور ٹائم ٹیبل جاری کر دیا۔

رپورٹ

چینی صدر شی جنپگ کی بواﺅ فورم 2018برائے ایشیا کے اعلامیے کو مدنظر رکھتے ہوئے چین میں غیر ملکی سرمایہ کاری کے فروغ کو یقینی بنانے کے حوالے سے چینی سنٹرل بینگ کے گورنر نے گزشتہ بدھ کوایک پریس کانفرنس کرتے ہوئے ملکی مالیاتی سیکٹر کو پھیلاﺅ اور وسعت یقینی بنانے کے لیے 6 بنیادی عوامل اور ملکی مالیاتی سیکٹر کے پھیلاﺅ کے حوالے سے ٹائم ٹیبل اور شیڈول کا اعلان کر دیا ۔ اس ضمن میں پیپلز بینک آف چائینہ کے گورنرای گانگ نے کہا ہے کہ اقتصادی پھیلاﺅ اور غیر ملکی سرمایہ کاری کے فروغ کے حوالے مجوزہ پالیسز پر آئیندہ چند ماہ سے عمل درامد شروع ہو جائیگا۔ ای کانگ نے مزید واضح کیا کہ پیپلز بینک آف چائینہ اوردیگرمالیاتی ریگولیشن ادارے ان مجوزہ پالیسز پر کام جاری رکھے ہوئے ہیں اور کیمونسٹ پارٹی آف چائینہ کی سنٹرل کمیٹی اور اسٹیٹ کونسل کے زیرِ انتظام ملکی مالیاتی سیکٹر کو عالمی مسابقت کے مطابق ڈھالنے کے حوالے سے ایک متحرک انداز میں کام کو جار ی رکھے ہوئے ہیں۔ ان مجوزہ پالیسیز کے تحت بینکنگ اور مالیاتی اثاثوں سے متعلق انتظامی کمپنیز غیر ملکی ایکویٹی سے متعلق تمام رکاوٹوں کو ختم کر دیں گے اور نئی مجوزہ پالیسز کے تحت تمام مقامی اور غیر ملکی انٹر پرسئیز کو برابری کی سطع پر ٹریٹ کیا جائیگا۔ اور اس کے ساتھ ساتھ غیر ملکی بینکوں کو چین میں اپنی برانچز کھولنے کی اجازت دی جائیگی۔ اس کے علاوہ غیر ملکی کاروباری اداروں کو اسکیورٹیز، فنڈز اور انشورنس منصوبوں میں اکیاون فیصد حصص کی اجازت دی جائیگی اور ممکنہ کیپ میکنزیم کو مرحلہ وار انداز میں تین سال تک بڑھایا جائیگا۔ اسکیورٹیز کے مشترکہ کاروباری سرگرمیوں کے حوالے سے ایسی کوئی رکاوٹ نہیں عائد کی جائیگی کہ جس کے تحت ایک سیکوریٹی فرم کو مقامی حصص کو یقینی بنانے کے حوالے سے کوئی شرط عائد نہیں کی جائیگی۔ اس کے ساتھ ساتھ ہانگ کانگ ۔شنگاہی،اور ہانگ کانگ شنزن لینکس کے حوالے سے روزانہ کی بنیاد کی شمالی کوٹہ کو موجودہ تیرہ بلین یوآن س ے بڑھا کر 52بلین یوآن تک بڑھایا جائیگا۔ اسی طرح جنوبی کوٹہ کی شرح کو موجودہ 10.5بلین یوآن سے بڑھا کر 42بلین یوآن تک بڑھایا جائیگا۔ انہوں نے مزید آگاہ کیا کہ مجوزہ نئی پالیسیز کے تحت غیر ملکی سرمایہ کاروں کو ملک میں انشورنس بروکرج اوراسیسمنٹ کاربار کرنے کی اجازت دی جائیگی۔ غیر ملکی فنڈ میں انشورنس بروکرز، ان کے چینی ہم منصب کاروباری عوامل کے طور پر کروباری گنجائش کے حامل ہونگے۔ اس طرح سے مقامی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں اور کاروباری عناصرکو ایک سے برابری کا ماحول مہیسر ہوگا۔ اور رواں سال کے اختتام تک مالیاتی سیکٹر کے پھیلاﺅ کو یقینی بنانے کے لیے دیگر عوامل کو یقینی بنایا جائیگا۔ اس طرح سے مختلف شعبوں میں غیر ملکی سرمایہ کاری کی حوصلہ فزائی کی جائیگی۔ اس ضمن میں فنانشل لیزنگ، آٹو لیزنگ، منی بروکریج، کنزیومرفنانس سیکٹر اور دیگر مالیاتی سیکٹرز میں غیر ملکی سرمایہ کاری کو بہتر انداز میں پروان چڑھانے کےلیے مثبت ماحول فراہم کیا جائیگا۔ تجارتی بینکوں کی جانب سے شروعکی جانیوالی غیر ملک اونرشپ کی حد متیعن نہیں کیجائیگی اور ئے مالیاتی، اثاثہ سرمایہ کاری اور مالیاتی مینجمنٹ کمپنیز کے لیے کوئی حد نہیں رکھی جائیگی۔ اس طرح سے ایک مرحلہ وار نداز میں غیر ملکی بینکوں کو اپنا کاروبار کو وسعت دینے کے حوالے سے میکنزیم تشکیل دیا جائیگا۔ اور مشترکہ اداروں اور اسکیورٹیز کمپنیز پر کسی قسم کی کوئی پابندیاں عائد نہیں کی جائیگیں۔ انہوں نے کہا فنانس ریگولیٹری ادارے اس ضمن میں نئے قوانین پالیسیز اور میکنزیم کے حوالے سے تمام امورپر غور کر رہے ہیںاس کے ساتھ سنٹرل بینک تمام انٹر پراسئیز اور غیرملکی سرمایہ کاری سے متعلق کمپنیز پر مانیٹٹرنگ کنٹرول کو بھی یقینی بنائےگا۔۔

Scroll To Top