”3 کا تڑکا“ بات ان والدین کی جنہیں اپنی ہر بیٹی کے لئے دو شوہر چاہئیں 11-01-2013

قرآن حکیم نے اُن قوموں کی نشاندہی بڑی واضح خصوصیات کے ساتھ کی ہے جنہوں نے اپنے کردار اور اعمال کی بناءپر اپنے آپ کو قہرِ الٰہی کا مستحق بنا ڈالا۔ ان میں قومِ صدوم کا نام بطور خاص لیاجاسکتاہے جس نے قوانینِ فطرت کو بڑی شرمناک ڈھٹائی کے ساتھ اپنے قدموں تلے روندا اور یوں اپنا نام ان قوموں کی فہرست میں لکھوا لیا جو آفات ِ الٰہی کا نشانہ بنیں۔ حضرت لوط ؑ کو اللہ تعالیٰ نے اسی بدکردار قوم کی ہدایت کے لئے بھیجا تھا۔ مگر وہ اِس قوم کو ” ہم جنسی “ اور ایسی دوسری اخلاقی بے راہ رویوں سے آزاد نہ کراسکے جو قہرِالٰہی کو دعوت دیا کرتی ہیں۔ یہ حضرت ابراہیم ؑ کا ہی زمانہ تھا ` اور اسی زمانے میں حضرت ہود ؑ ` حضرت صالح ؑ اور حضرت شعیب ؑ کی قومیں(عاد اور ثمود وغیرہ)بھی اپنی بداعمالیوں کی بناءپر اپنے انجام کو پہنچیں۔
آپ سوچ رہے ہوں گے کہ سیاسی ہیجان کے اس ماحول میں مجھے یہ موضوع کیو ں سُوجھا ہے۔ تو اس کی وجہ وہ شرمناک اشتہار ہے جو ایک موبائل سروس فراہم کرنے والی کمپنی ہمارے ٹی وی چینلز پر اس شان سے چلا رہی ہے کہ جیسے اسے یقین ہو کہ اب اس قوم میں غیرت نام کی کوئی چیز باقی نہیں رہی اور وہ اجتماعی طور پر اپنے حکمران طبقے کے کردار میںڈھل گئی ہے۔ یہ اشتہار کافی دنوں سے بڑی شان اور بڑے تواتر کے ساتھ چل رہا ہے ` اور میں سوچ رہا تھاکہ کسی نہ کسی غیرت مند دینی رہنما کی رگِ حمیّت ضرور جاگے گی اور وہ ہماری اخلاقی اقدار کی اس شرمناک ” تاراجی “ پر ” صدائے غیظ و غضب “ ضرور بلند کرے گا۔ مگر اب مجھے یوں محسوس ہورہاہے جیسے ہمارے اکابرین نے بھی اس بات سے سمجھوتہ کرلیاہے کہ اگر اس قوم کی کوئی دختر بیک وقت دو بوائے فرینڈ رکھتی ہے اور اس شان سے رکھتی ہے کہ دونوں کی آپس میں دوستی بھی کراتی ہے تو اس میں کوئی مضائقہ نہیں۔
کیامیں سمجھ لوں کہ جن صاحبان نے یہ اشتہار تیار کرایا ہے ان کی بیٹیوں کو دو دو بوائے فرینڈ رکھنے کی اجازت مل چکی ہے ۔؟ اگرایسا ہے تو پھر وہ اس بات کا تعین کیسے کریں گے کہ کون سا بچہ کس باپ کاہے ۔
کیا وہ لوگ جنہوں نے اس اشتہار کوچلانے کی منظوری دی ہے وہ بھی دو دو دامادوں کی سہولت سے سمجھوتہ کرچکے ہیں ؟
خدا کا خوف کرو۔۔۔ اس قوم کی نوجوان نسل کی رگوں میں کیسی زہریلی سوچ گھول رہے ہو!

Scroll To Top