پاک فوج کے ناخن تراشنے کا خاقانی نسخہ۔۔۔۔

پاکستان کے آئینی مگر محتاج وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے امریکہ میں پاکستان کا سفیر مقرر کرنے کے لئے ایک ایسا ” جوہرِ قابل“ دریافت کیا ہے جسے سفارت کاری اور پاکستان کے قومی مفادات کے تحفظ کے لئے درکار امور میں وسیع تجربہ حاصل ہے۔۔۔ آئینی تو سب جانتے ہیں کہ شاہد خاقان عباسی یقینا ہیں کیوں کہ انہیں پارلیمنٹ نے کثرتِ رائے سے اِس ملک کا وزیراعظم اور چیف ایگزیکٹو منتخب کیا ہے۔۔۔ لیکن اُن کے ” محتاج“ ہونے میں بھی کوئی شک نہیں۔۔۔ وہ خود کہہ چکے ہیں کہ ” اصل وزیراعظم نا اہل میاں نوازشریف ہی ہیں۔۔۔ میرا کام تو ان کے احکامات پر عملدرآمد کرنا ہے۔۔۔“
یہ ” محتاجی“ شاہد خاقان عباسی نے کیوں اختیار یا قبول کر رکھی ہے ` یہ ایک اچھا سوال ہے لیکن اِس کا جواب وزیراعظم صاحب خود ہی دے سکتے ہیں۔۔۔
انہوں نے جس ” لائق وفائق سفارت کار “ کو تاریخ کے اس نہایت نازک اور اہم موقع اور موڑ پر امریکہ میں سفیر متعین کرنے کا فیصلہ کیا ہے اس کا نام سن کر ان عظیم سفارت کاروں کی روحیں تڑپ اٹھی ہوں گی جو اَب اس دنیا میں نہیں ` اور اُن جانے پہچانے اور مانے ہوئے سفارت کاروں پر سکتہ طاری ہوگیا ہوگا جو بقیدحیات ہیں ۔۔۔ یہ فیصلہ شاہد خاقان عباسی نے اس وجہ سے کیا ہے کہ اتفاق سے متذکرہ سفارت کار ان کا بزنس پارٹنر رہ چکا ہے یا پھر اس وجہ سے کہ ان کے دل کے وزیراعظم کو ایسی سفارت کاری کی ضرورت ہے جو امریکہ کو قائل کرسکے کہ پاک فوج کے ناخن تراشے بغیر امریکی مفادات کا حصول ممکن نہیں۔۔۔ ؟ اس بارے میں ہم فی الحال کچھ نہیں کہہ سکتے۔۔۔ لیکن ہم سب کو پاکستان کی قسمت پر ماتم کرنا چاہئے۔۔۔
ایک دور وہ تھا جب اس ملک کو آغا شاہی جیسے ” فرزندِ دانش“ کی خدمات حاصل تھیں او ر ایک دور یہ ہے کہ سفارت کاری کا تاج علی جہانگیر کے سرپر رکھا جارہا ہے ۔۔۔۔

aaj-ki-baat-new

Scroll To Top