انہیں یہ ملک چھوڑ دینا چاہئے 01-12-2012

یقین نہیں آتا کہ خیبر پختون خواہ کے گورنر مسعود کوثر نے ایسی بات کہی ہوگی مگر چونکہ یہ بات خبر کی صورت میں شائع ہوئی ہے اس لئے اسے میں اپنا وہم بھی نہیں سمجھ سکتا۔مسعود کوثر صاحب نے فرمایا ہے کہ پاکستان کی آئیڈیولوجی تبدیل کرنے کا وقت آگیا ہے ۔ اپنے اس ارشاد کی وضاحت کرتے ہوئے موصوف نے فرمایا ہے کہ سیاست میں مذہب کے عمل دخل کی وجہ سے بڑے سنگین مسائل پیدا ہوئے ہیں اور ہورہے ہیں اور اب نظر یہ ءپاکستان کا مروجہ مفہوم ناقابلِ قبول اور ناقابلِ عمل ہوگیا ہے۔
میری حقیر رائے میں اس قسم کے خیالات کا اظہار براہِ راست آنحضرت کی ذات مبارک پر حملہ ہے کیوں کہ قرآن حکیم کو انفرادی اجتماعی معاشی معاشرتی اور سیاسی زندگی کا محور پیغمبر اسلام نے ہی بنایا تھا۔ پاکستان کی آئیڈیولوجی تبدیل کرنے کا مطلب اس ملک کی بنیادیں تبدیل کرنا ہوگا اور یہ بات سمجھنے کے لئے ارسطو کی ذہانت درکار نہیں کہ بنیادیں عمارت گرائے بغیر تبدیل نہیں ہوسکتیں۔
ہمارے لئے یہ بات ایک المیے سے کم نہیں کہ ایسے لوگ جو اس ” عمارت “ کو گرانا چاہتے ہیں بڑے بڑے انتظامی اور اہم عہدوں پر فائز ہوچکے ہیں۔
میں کسی ایک فرد کا نام نہیں لینا چاہتا لیکن جس شخص کو بھی پاکستان کی جانی پہچانی اور تسلیم شدہ نظریاتی بنیادوں سے اختلاف ہے اسے یہ ملک چھوڑ دینا چاہئے۔

kal-ki-baat

Scroll To Top