جو کچھ بھی یہاں غلط ہے ربِّ کعبہ اسے حروف ِغلط کی طرح مٹا دے۔۔۔

ماموں جان نسیم حجازی دو الفاظ پر مشتمل ایک ترکیب بڑی کثرت کے ساتھ استعمال کیا کرتے تھے۔
حرفِ غلط!
میں نے پہلی مرتبہ یہ ترکیب مرحوم کے ناول ”آخری چٹان“ میں پڑھی تھی۔ اس کا ہیرو طاہر بن یوسف خلیفہ بغداد کے دربار میں تقریر کرتے ہوئے کہتا ہے۔
” جو قوم اپنے دشمنوں سے خیر کی توقع کرتی ہے وہ حرفِ غلط کی طرح مٹ جاتی ہے۔“
اس ایک جملے نے مجھے ”حرفِ غلط“ کا مطلب بھی سمجھا دیا اور یہ بھی سمجھا دیا کہ اس ” دولفظی ترکیب“ کے پیچھے تاریخ کا ایک ناقابلِ تردید سچ اور فلسفہ پنہاں ہے۔
کوئی بھی قلمکار جب کچھ لکھنے بیٹھتا ہے تو اگر اس کے قلم سے کوئی بھی غلط حرف یا لفظ نکل جائے تو وہ اسے کاٹ دیتا ہے۔
حرفِ غلط کا مٹ جانا ہی درست عمل ہے۔ اور میرا پاکستان۔۔آپ کا پاکستان۔۔قائد اعظم (رحمتہ اللہ علیہ) کا پاکستان۔۔ علامہ اقبال(رحمتہ اللہ علیہ) کا پاکستان اور کروڑوں فرزندانِ توحید و رسالت کا پاکستان ایک حرفِ غلط نہیں بے شمار حروفِ غلط کی لپیٹ میں ہے۔
اگر یہ حروفِ غلط مٹ نہ سکے یا مٹائے نہ جاسکے تو خدانحوانستہ ہمیں بڑے خوفناک نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔۔
شیخ مجیب الرحمان حرفِ غلط تھا۔ اگر یہ حرفِ غلط اگر تلہ سازش کیس کے نتیجے میں اپنے انجام کو پہنچ جاتا تو قائد اعظم ؒ کے پاکستان کو سقوطِ ڈھاکہ کے المیے کا سامنا نہ کرنا پڑتا۔
الطاف حسین بھی حرفِ غلط تھا۔
اور اس کی قائم کردہ فاشسٹ جماعت ایم کیو ایم بھی حروفِ غلط تھی۔
یہ کیسے ممکن ہے کہ ہم نے لساّنیت اور فسطائےت کی بنیاد پر قائم کی جانے والی دہشتگرد تنظیم کے بانی کو تو حرفِ غلط مان لیا لیکن اس کی تخلیق کو ہنوز حرفِ غلط ماننے کے لئے تیار نہیں۔۔
ایم کیو ایم کا نام جب بھی سامنے آئے گ،اُس بد فطرت قاتل کا چہرہ بھی سامنے آئے گا جس نے اپنی وفاداریاں پاکستان کے دشمنوں کو فروخت کیں۔
ایم کیو ایم کے لاکھوں ووٹر محبِ وطن پاکستانی ہیں۔ کیا ان کی شناخت ہمیشہ اُس ”حرفِ غلط“ کے نام کے ساتھ کی جانی چاہئے جو پاکستان کے غداروں میں سرِ فہرست شمار ہوتا ہے؟
شاید اب قدرت وہ تمام فیصلے کرنے کا اختیار اپنے ہاتھوں میں واپس لے چکی ہے جن کے بغیر وطنِ عزیز کا چہرہ بدنما”حروفِ غلط“ سے پاک نہیں ہوگا۔
صرف ایم کیو ایم حرفِ غلط کی طرح مٹنے والی نہی، وہ غاصب خاندان بھی حروفِ غلط کی طرح مٹنے والے ہیں جنہوں نے اس ملک کو ایک عرصے سے اپنی شکار گاہ بنا رکھا ہے۔
آئیں اپنے ہاتھ دعا کے لئے اٹھائیں اور اپنے رب سے کہیں۔
” جو کچھ بھی یہاں غلط ہے ربِّ کعبہ اسے حروف ِغلط کی طرح مٹا دے۔۔۔“

Scroll To Top