وہ ہم سے اور ایک دوسرے سے نفرت کیوں کرتے ہیں ؟

aaj-ki-bat-logoThe Clash of Civilizations
یعنی تہذیبوں کے تصادم کی تھیوری کے خالق سیموئل ہنٹیگٹن نے اپنی ایک الگ تصنیف میں اس سوال کا جواب دینے کی بھی کوشش کی تھی کہ
Why do they hate us.?
یعنی وہ ہم سے نفرت کیوں کرتے ہیں ؟
” وہ“ سے مراد یہاں مسلمان ہیں اور ” ہم “ سے مراد ” مغرب “ یا عیسائی دنیا ہے۔
اس ضمن میں جب بھی ” مغرب“ کی اصطلاح استعمال کی جاتی ہے تو ذہن میں ” سیکولرازم“ کا تصورابھرتا ہے۔ یعنی وہ مغرب جو مذہب کو اپنے تمدن ` اپنی سیاست اور اپنی پہچان سے خارج کرچکا ہے۔
جب ہم ” عیسائی دنیا “ کی بات کرتے ہیں تو بھی ذہن مغرب کی طرف ہی جاتا ہے۔ حالانکہ ” مغرب“ سے باہر بھی عیسائی دنیا کاوجود پایا جاتا ہے۔
جب بھی یہ سوال اٹھایا جاتا ہے کہ ” وہ ہم سے کیوں نفرت کرتے ہیں ؟ ” تو بالواسطہ طور پر یہ حقیقت تسلیم کرلی جاتی ہے کہ اپنے تمام تر سیکولردعوو¿ں کے باوجود مغرب اپنی پہچان کا رشتہ ” عیسائیت“ سے نہیں چھڑواسکا۔
یہ موضوع میں نے ایسے ہی ایک اور سوال کے حوالے سے اٹھایا ہے جو آج کل مغربی میڈیا میں ایک زبردست بحث کا موضوع بناہوا ہے۔ یہ سوال ہے ” وہ ایک دوسرے سے کیوں نفرت کرتے ہیں؟“
وہ سے مراد یہاں ہے ” سنی اور شیعہ “۔
یہ حقیقت اب کھل کر سامنے آچکی ہے کہ مغرب کے ” اہل سیاست“ کی حکمت عملیوں کے نتیجے میں مسلم دنیا کا قلب (یعنی مغربی ایشیا اور مشرق وسطیٰ)سنی اور شیعہ مسلمانوں کے درمیان جنگ کا میدان بنتا نظر آرہا ہے۔
میں یہاں صرف یہ کہنا چاہتاہوں کہ اسلام دنیا کا واحددین اور نظام ہے جو ” نفرت“ کرتا ہے تو صرف نفرت سے۔
(یہ کالم اس سے پہلے 08-03-2007 کو بھی شائع ہو چکا ہے)

Scroll To Top