قائد اعظم ؒ کا انتخاب کب اور کیسے ہوا تھا؟31-08-2012

kal-ki-baatملکوںکی ترقی میں جو کلیدی عوامل کار فرما ہوا کرتے ہیں اُن میں سب سے اُوپر ”قیادت “ کو رکھا جانا چاہیے۔ بُری قیادت ایسے ممالک کو بھی تباہ کر دیا کرتی ہے جو ترقی کرنے کے ”اسباب “سے مالا مال ہوا کرتے ہیں۔ اور اچھی قیادت ایسے ممالک کو بھی شاہراہِ ترقی پر ڈال دیا کرتی ہے جو ترقی کرنے کے بنیادی تقاضوں پر بھی پورا نہیں اترا کرتے۔

ہم جب بھی کسی ”انقلاب“ کی بات سنتے یا کرتے ہیں ، یا کسی ایسی قوم کے بارے میں سوچتے ہیں جو پستیوں سے ایک دم بلندیوں کی طرف گئی ہو تو ساتھ ہی ساتھ کسی قیادت کی تصویر ذہن میں ضرور اُبھرتی ہے۔
چین کی بات ہو تو ماﺅزے تنگ اورڈینگ ژاﺅپنگ کے چہرے آنکھوں کے سامنے گھومتے ہیں۔ ملائیشیا کا ذکر ہو تو مہاتیر کا نام ذہن میں گونجتا ہے۔ذہن امریکہ کی طرف جائے تو ابراہم لنکن کا خیال آئے بغیر نہیں رہتا۔ (جنہوں نے دورِ حاضر کی سب سے خونی خانہ جنگی میں کامیابی حاصل کر کے امریکی قومیت کے جھنڈے دنیا کے نقشے پر گاڑدیئے)
مجھے ایسا کوئی ملک یاد نہیں آرہا جس نے اپنے نظام کی بنیاد پر اولیت حاصل کی ہو۔اگر جمہوریت واقعی اعلیٰ و ارفع نظام ہے تو پھر چین تیزی کے ساتھ دنیا کی سب سے بڑی معیشت بننے کے ہدف کی طرف کیوں بڑھ رہا ہے اور امریکہ کی معیشت کیوں منفی ترقی کی طرف رواں دواں ہے۔۔؟ جمہوریت کی بات ہو تو بھارت کا ذکر ضرور ہوتا ہے۔ اور بھارت کا ذکر ہو تو ریکارڈ توڑ کرپشن کے ہاتھوں ستائے ہوئے عوام کی سسکیاں اور آہیں کانوں سے ٹکرائے بغیر نہیں رہتیں۔
میں نے اُوپر جن ایسے کلیدی عوامل کا ذکر کیا ہے جو قوموں کی ترقی کے پیچھے کارفرما ہوتے ہیں، ان میں دوسرا بڑایہی ہے کہ ”کرپشن اور بد حکمرانی“ کے راستے تنگ یا بند کر دیے جائیں۔
جمہوریت کا المیہ ہی یہی ہے کہ اس میں کرپشن اور بد حکمرانی کے راستے زیادہ سے زیادہ کشادہ کر دیے جاتے ہیں۔ کون احمق ہوگا جو پانچ سات کروڑ کی سرمایہ کاری سے پارلیمنٹ میں نمائندگی حاصل کر نے کے بعد پانچ سات ارب کمانا نہیں چاہے گا؟
یہاں یہ یاد رکھا جائے کہ بات میں اُس جمہوریت کی کر رہا ہوں جس کے قصیدے سیدیوسف رضاگیلانی جیسے لوگ پڑھا کرتے ہیں۔ ایک جمہوریت وہ بھی ہو سکتی ہے جس میں ایسی قیادت ملک کی باگ ڈور سنبھال سکتی ہو جس پر قوم کو ویسا ہی اعتماد ہو جیسا اعتماد برصغیر کے مسلمانوں نے قائد اعظمؒ پر کیا تھا۔ کیا کوئی ”جمہوریت پسند“ بتا سکتا ہے کہ قائد اعظمؒ کا انتخاب کیسے ہوا تھا اور ان کی ”تاج پوشی“ کس حلقے میں ہوئی تھی۔۔۔؟

Scroll To Top