کرسمس ٹری لگانے پر عامر خان کو دھمکیاں

lانسٹاگرام پر عامر خان کے 1.2 ملین فالوورز موجود ہیں؛ فوٹوفائل

لندن: پاکستانی نژاد برطانوی باکسر عامر خان کو اپنے گھر میں کرسمس ٹری لگانے پر سوشل میڈیا پر سنگین نتائج کی دھمکیاں ملنے لگی ہیں۔

باکسر عامر خان کے لئے 2017 کافی ہنگامہ خیز سال ثابت ہوا اس سال ان کی زندگی میں کئی نشیب و فراز آئے جن کی وجہ سے وہ سارا سال خبروں کی زینت بنے رہے۔ اپنی اہلیہ فریال مخدوم سے جھگڑے اور صلح کے بعد عامر خان رئیلیٹی شو ’’آئی ایم سیلیبریٹی، گیٹ می آؤٹ آف ہیئر‘‘کا حصہ بنے جہاں وہ برطانوی وزیراعظم سے متعلق بیان دینے پر سوشل میڈیا صارفین کی تنقید کا نشانہ بنے ۔تاہم نہ ہی ابھی سال ختم ہوا ہے اور نہ ہی عامر خان کی پریشانیاں۔

عامر خان سوشل میڈیا پر کافی سرگرم رہتے ہیں اور اکثر اپنی تصاویر مداحوں کے ساتھ شیئر کرتے رہتے ہیں ۔ صرف انسٹاگرام پر ان کے 12 لاکھ سے زائد فالوورز ہیں جو ان کی جانب سے پوسٹ اور شیئر کی جانے والی ہر خبر پر فوری ردعمل کا اظہار کرتے ہیں۔

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق باکسر عامر خان نے عیسائیوں کے مذہبی تہوار کرسمس کی مناسبت سے اپنے گھر میں کرسمس ٹری لگایا جس کی تصویر انہوں نے انسٹاگرام پر شیئر کرکے لکھا ’’جب سب سورہے ہیں ڈیڈی نے کرسمس ٹری لگایا جسے دیکھ کر لامائیساہ (عامر خان کی بیٹی) بہت خوش ہوگی ‘‘۔

کچھ لوگوں کو عامر خان کی جانب سے یہ تصویر شیئر کرنا پسند نہیں آیا اور چند ایک کی جانب سے انہیں اس پر جان سے مارنے کی دھمکیاں بھی ملیں ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق تصویر پر کچھ لوگوں نے منفی تبصرے کرتے ہوئے کہا ہے کہ عامر ایک مسلمان ہوتے ہوئے کرسمس کا تہوار نہیں مناسکتے۔

ایک اور صارف نے عامر خان سے سوال کیا آپ نے یہ پوسٹ کیوں شیئر کی ہے؟جب کہ ایک صارف نے کہا کہ آپ اور آپ کی فیملی ختم ہوجائے گی۔

ایک اور صارف کا کہنا تھا مسلمان کرسمس نہیں مناتے، دوسرے ملک میں رہتے ہوئے آپ کو ان کے عقائد اور جشن کا احترام کرنا پڑتا ہے لیکن اپنے گھر میں کرسمس ٹری لگانا صحیح نہیں ہے کیونکہ اس سے آپ کے بچے کنفیوز ہوجائیں گے۔

ایک اور صارف نےانہیں کہا کہ آپ جہنم میں جائیں گے۔

واضح رہے کہ کچھ لوگ عامر خان کی حمایت میں بھی آگےآئے ایک صارف نے کہا ’میں مسلمان ہوں اور ہر سال کرسمس ٹری اپنے گھر پر لگاتا ہوں۔ ایک اور صارف نے کہا یہاں کچھ لوگوں نے  شرمناک تبصرے کیے ہیں ہر ایک کو اپنی مرضی کے مطابق اپنے گھر کو سجانے اور جشن منانے کا حق ہے۔

Scroll To Top