نواز شریف مسلم لیگ کے صدر بن سکتے ہیں یا نہیں

  • سپریم کورٹ کا انتخابی اصلاحات بل2017 کیخلاف اپیلیں سماعت کے لیے مقرر کرنے کا حکم
    چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے انتخابی اصلاحات ایکٹ2017ءکے خلاف تمام اپیلیں سماعت کے لیے مقرر کرنے کا حکم دے دیا،چیف جسٹس نے رجسٹرار آفس کے اعتراضات ختم کر دئیے
  • متنازعہ انتخابی اصلاحات ایکٹ2017کو پاکستان پیپلز پارٹی ، عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد اور عوامی راج پارٹی کے سربراہ جمشید دستی سمیت9درخواست گزاروں نے چیلنج کر رکھا ہے

سپریم کورٹ

اسلام آباد(صباح نیوز)چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 کے خلاف تمام اپیلیں سماعت کے لیے مقرر کرنے کا حکم دے دیا،چیف جسٹس نے رجسٹرار آفس کے اعتراضات ختم کر دئیے۔ انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 کو پاکستان پیپلز پارٹی ، عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد اور عوامی راج پارٹی کے سربراہ جمشید دستی سمیت 9 درخواست گزاروں نے چیلنج کر رکھا ہے۔سپریم کورٹ کے رجسٹرار آفس نے ان درخواستوں پر متعلقہ فورم سے رجوع کرنے کا اعتراض لگایا تھا۔جس کے بعد درخواست گزاروں نے اعتراضات کےخلاف اِن چیمبر اپیلیں کیں۔چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے بدھ کو اپنے چیمبر میں ان اپیلوں پر سماعت کی۔سماعت کے بعدچیف جسٹس نے رجسٹرار آفس کے اعتراضات ختم کر دیے اور انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 کے خلاف اپیلیں سماعت کے لیے مقرر کرنے کا حکم دے دیا ۔واضح رہے کہ رجسٹرار آفس نے درخواستوں پر متعلقہ فورم سے رجوع کرنے کا اعتراض لگایا تھا۔پیپلز پارٹی، پی ٹی آئی، شیخ رشید اور جمشید دستی سمیت 9 درخواست گزاروں نے الیکشن ایکٹ 2017کو چیلنج کیا تھا، رجسٹرار آفس نے تمام درخواستوں پر اعتراضات لگائے تھے، درخواست گزاروں نے اعتراضات کیخلاف ان چیمبر میں اپیلیں دائر کی تھیں۔

Scroll To Top