فیض احمد فیض کو دنیا سے رخصت ہوئے 33 برس بیت گئے

yفیض احمد فیض کو حکومت نے نشان امتیاز سے بھی نوازا ۔ فوٹو: فائل

لاہور: انقلابی شاعر فیض احمد فیض کو دنیا سے رخصت ہوئے 33 برس بیت گئے لیکن وہ آج بھی اپنے مداحوں کے دلوں میں زندہہیں۔

انقلابی  شاعر فیض کو دنیا سے رخصت ہوئے 33 سال گزرچکے ہیں لیکن  وہ آج بھی اپنے مداحوں کے دلوں میں زندہ ہیں، انقلابی شاعری کی تاریخ  ان کے تذکرے کے  بغیر مکمل ہی نہیں ہوسکتی۔  فیض احمد فیض نے اپنی انقلابی فکر اور عاشقانہ لہجے کوملا کر ایک ایسا لہجہ اپنایا جس سے اردو شاعری میں ایک نئی جمالیاتی شان پیدا ہوگئی، ان کے سیاسی خیالات و افکار آفاقی ہیں ۔اسی لیے ان کی شاعری آج کی شاعری نظرآتی ہے۔

فیض نے ثابت کیا کہ حق گوئی کسی ایک کے لیے نہیں بلکہ ہر خطے اور زمانے کے لیے ہوتی ہے،نقش فریادی، دست صبا، زندان نامہ، دست صبا، شام شہر یاراں اور میرے دل میرے مسافر ان کے کلام کے نادر مجموعے ہیں۔ سارے سخن ہمارے اور نسخہ ہائے وفا ان کے کلیات ہیں۔

فیض احمد فیض 13 فروری 1911کو سیالکوٹ میں پیدا ہوئے اور 20 نومبر 1984 کو لاہور میں انتقال ہوا، ان کی وفات کے بعد حکومت نے انہیں نشان امتیاز سے بھی نوازا۔

Scroll To Top