رومانیہ کے کارکنوں نے بحیرہ اسود سے 150مہاجرین کوڈوبنے سے بچالیا

  • سمندری موجوں سے لڑنے والی ان کی کشتی کی حالت بھی نہایت شکستہ تھی،کوسٹ گارڈز ترجمان

رومانیہ کے کارکنوں نے بحیرہ اسود سے 150مہاجرین کوڈوبنے سے بچالیابخارسٹ(این این آئی)رومانیہ کے کارکنوں نے بحیرہءاسود میں 150 تارکین وطن کو ریسکیوکرلیا، اگست سے اب تک اس سمندری علاقے میں مہاجرین کو ریسکیو کرنے کا یہ پانچواں واقعہ ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق حکام نے کہاکہ رومانیہ کی مشرق میں بحیرہءاسود میں ریسکیو کیے جانے والے ان ایک سو تریپن افراد میں 53 بچے اور 51 خواتین بھی شامل ہیں، جب کہ سمندری موجوں سے لڑنے والی ان کی کشتی کی حالت بھی نہایت شکستہ تھی۔رومانیہ کے کوسٹ گارڈز کے ترجمان کرسٹیان کیکو کے مطابق کشتی کو ریسکیو کرنے کی اس کارروائی کے وقت سمندر میں طغیانی تھی اور تین تین میٹر اونچی لہریں تھی۔ یہ افراد انتہائی خطرناک صورت حال کا شکار تھے اور خطرہ تھا کہ ان کی کشتی ڈوب جائے گی اور ساتھ ہی یہ تارکین وطن بھی سمندر کی نذر ہو جائیں گے۔کتے ہیں۔بخاریسٹ حکومت کے خدشات ہیں کہ بحیرہءروم کے ذریعے یورپی ممالک کا رخ کرنے والے افراد کے لیے جس قدر وہ خطرناک راستہ مسدود ہوتا جا رہا ہے، تارکین وطن اسی قدر رومانیہ کے ذریعے یورپی یونین میں داخلے کی کوششوں میں تیزی لاتے جا رہے ہیں۔گزشتہ ماہ کے آغاز تک تارکین وطن کی انتہائی قلیل تعداد تھی، جو اس راستے سے یورپ پہنچی، تاہم اگست اور ستمبر کے مہینوں میں یہ تعداد ماضی کے مقابلے میں کہیں زیادہ دیکھی جا رہی ہے اور اگست کے آغاز سے اب تک قریب پانچ سو ستر تارکین وطن کو بحیرہءاسود میں ڈوبنے سے بچایا گیا ہے۔

Scroll To Top