مارگلہ پہاڑیوں اور درختوں کی کٹائی پر سپریم کورٹ کااظہار برہمی

  • مارگلہ کی پہاڑیاں بلڈوز کر دیں، درخت کاٹ دیں، درخت ہونگے نہ جھگڑا ہو گا، جسٹس شیخ عظمت سعید
  • ریفنڈ دینا پڑا تو ای او بی آئی کا فنڈ ختم ہو جائے گا، مسئلے کا حل نکالیں،ایک دوسرے کیس میں جسٹس عظمت سعید کا اٹارنی جنرل سے مکالمہ

Image result for ‫مارگلہ پہاڑیوں‬‎

اسلام آباد (این این آئی+مانیٹرنگ ڈیسک) مارگلہ کی پہاڑیوں اور درختوں کی کٹائی پر سپریم کورٹ نے اظہار برہمی کیا ہے۔ کیس کی سماعت کے دوران جسٹس شیخ عظمت سعید نے ریمارکس دیے کہ ایسا کریں مارگلہ کی پہاڑیاں بلڈوز کر دیں، درخت کاٹ دیں، درخت ہونگے نہ جھگڑا ہو گا۔ جسٹس شیخ عظمت سعید نے استفسار کیا کہ کیا مارگلہ کی پہاڑیوں یا قریب وجوار میں کسی ہاوسنگ سکیم کی اجازت دی گئی ہے؟ مئیر اسلام آباد نے بتایا کہ ایسی کسی ہاوسنگ سکیم کی اجازت نہیںدی گئی۔ جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا کہ یہ چیز ہمیں لکھ کر دیں، نیشنل پارک عوام کی امانت ہے، اس امانت میں خود خیانت کریں نہ کسی دوسرے کو کرنے دیں۔ شیخ عظمت سعید کا مزید کہنا تھا کہ خیبر پختونخواہ کے علاقے میں مارگلہ کی پہاڑیوں پر بلاسٹنگ اور مائننگ ہو رہی ہے، کیا ٹی وی پر خبر چلے تو ہی حکام کو قانون کی خلاف ورزی کا پتہ چلتا ہے؟ مقدمے کی مزید سماعت 5 جولائی تک ملتوی کر دی گئی ۔۔ دریں اثناءسپریم کورٹ کے جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ اپنے فیصلے میں ای اوبی آئی کی کلیکشن کو غیر قانونی قرار دے چکی ہے ¾ عدالتی فیصلے کے بعد کلیکشن دینے والے رقم ریفنڈ کا مطالبہ کر رہے ہیں ¾ ریفنڈ دینا پڑا تو ای او بی آئی کا فنڈ ختم ہو جائے گا، اٹارنی جنرل مسئلے کا حل نکالیں ۔ بدھ کو ای او بی آئی پنشنرز کیس کی سماعت جسٹس عظمت سعید کی سر براہی میں دو رکنی بنچ نے کی۔جسٹس عظمت سعید شیخ نے ریمارکس دئیے کہ سپریم کورٹ اپنے فیصلے میں ای اوبی آئی کی کلیکشن کو غیر قانونی قرار دے چکی ہے ¾عدالتی فیصلے کے بعد کلیکشن دینے والے رقم ریفنڈ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔انہوںنے کہاکہ ریفنڈ دینا پڑا تو ای او بی آئی کا فنڈ ختم ہو جائے گا، ریفنڈ دینے کے بعد ای او بی آئی کے پاس پنشنر کو پنشن دینے کے پیسے نہیں ہوں گے، تباہی کا یہ انسانی طوفان دوراہے پر کھڑا ہے ۔جسٹس عظمت سعیدنے اٹارنی جنرل سے مکالمے میں کہا کہ اس مسئلے کا حل نکالیں، اٹارنی جنرل نے جواب دیا مسئلے کا حل نکالنا آسان نہیں ¾اس پر جسٹس عظمت سعید شیخ نے ریمارکس دیے کہ کس نے کہا زندگی آسان ہے آج کا دن میرے اور آپ کےلئے بہت مشکل ہے ¾امید کرتے ہیں اٹارنی جنرل مسئلے کا حل لے کر آئیں گے۔کیس کی سماعت چار ہفتوں تک ملتوی کردی گئی ۔

Scroll To Top