صومالیہ میں فوجی قافلے پر حملہ، جنرل سمیت چھ افراد ہلاک

جنرل گوبالے صومالی فوج کے تھرڈ بریگیڈ کو کمانڈ کر رہے تھے جو صومالیہ میں شدت پسند تنظیم الشباب کے خلاف برسرپیکار ہے

صومالیہ میں حکام کے مطابق ایک خودکش حملے میں فوج کے ایک اعلیٰ افسر سمیت کم از کم چھ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

حملہ آور نے دارالحکومت موغادیشو میں وزارت دفاع کے ہیڈکوارٹرز کے قریب دھماکہ خیز مواد سے بھری گاڑی جنرل محمد جمالے گوبالے کے قافلے سے ٹکرا دی۔

ہلاک ہونے والے فوجی جنرل پر اس سے قبل بھی قاتلانہ حملے ہوچکے تھے۔ شدت پسند تنظیم الشباب نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

ایک سکیورٹی اہلکار عبدی عزیز محمد نے خبررساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ ’دھماکہ خیز مواد سے بھری گاڑی کی وجہ سے ایک زوردار دھماکہ ہوا تھا۔

’اس واقعے میں فوج کے کی ارکان ہلاک ہوگئے جن میں ایک سینیئر کمانڈر بھی شامل ہیں۔‘

عینی شاہدین کے مطابق جنرل گوبالے کی گاڑی سڑک پر جارہی تھی جب ایک اور گاڑی نے اس کو ٹکر ماری اور دھماکہ ہوا۔

یہ حملہ اس وقت ہوا جب فوجی قافلہ فوجی ہسپتال سے نکل کر وزارت دفاع کی جانب جا رہا تھا۔

صومالیہ کے صدر حسن شیخ محمد نے اس واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے جنرل گوبالے کے خاندان کو تعزیتی پیغام بھیجا ہے۔

خبررساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق جنرل گوبالے صومالی فوج کے تھرڈ بریگیڈ کو کمانڈ کر رہے تھے جو جنوبی صومالیہ میں شدت پسند تنظیم الشباب کے خلاف برسرپیکار ہے۔

Scroll To Top