منشائے الٰہی سے فرار ممکن نہیں

محرم اسلامی کیلنڈر کا پہلا مہینہ ہے۔
اس مہینے کو عرب تاریخ میں غیر معمولی اہمیت اور تقدس حاصل ہے۔ اور عرب تاریخ چونکہ اسلام کی تاریخ سے جڑی ہوئی ہے اس لئے اس مہینے کی اہمیت میں کبھی کمی نہیں ہوئی۔ یہ منشائے الٰہی تھی کہ دنیا بھر کی ملوکیتوں کو للکارنے والے بطلِ جلیل حضرت عمر فاروق ؓ کی شہادت اس مہینے کے پہلے روز ہو۔ اور پھر دسویں روز اسلام کے اندر ابھرنے والی ملکولیت کو للکارنے والے رجلِ عظیم حضرت حسینؓ کو شجراِسلام کی آبیاری اپنے خون سے کرنی پڑی۔
میں نے گزشتہ روز حضرت عثمان غنی ؓ کی شہادت کے المناک واقعے سے حضرت حسین ؓ کی رُلا دینے والی شہادت تک اندوہ کی ایک دلدوز داستان کا ذکر کیا تھا ۔ میرے دوست کبیر واسطی نے یہ تبصرہ کرکے میری تصحیح کی ہے کہ اس دلدوز داستان کا آغاز حضرت عمر فاروق ؓ کی شہادت سے ہوتا ہے۔
لیکن حضرت عمر ؓ کی شہادت اچانک رونما ہونے والا ایک غیر متوقع واقعہ تھا۔ جبکہ شہادتِ عثما ن ؓ ` جنگ جمل کی شہادتیں اور حضرت حسین ؓ کی شہادت کے واقعات میں سمجھتا ہوں کہ روکے جاسکتے تھے۔ مگر اِس لئے نہ روکے جاسکے کہ اللہ تعالیٰ کو مقصود یہی تھا اللہ تعالیٰ چاہتا تھا کہ ہم مندرجہ بالا واقعات سے سبق حاصل کرتے رہیں اور یہ حقیقت ہمیشہ ہمیں جھنجوڑتی رہے کہ جو فصل ہم بوتے ہیں کاٹتے بھی وہی ہیں۔
اللہ ہمیشہ ہماری رہنمائی کرے۔۔۔

Scroll To Top