امیر مقام ضرور پڑھیں

kuch-khabrian-new-copy

جناب امیر مقام کو پاناما زدہ وزیر اعظم نے کے پی کے کو فتح کرنے کے مشن پر مامور کیا ہے۔ یقینی طور پر میاں صاحب امیر مقام کے ڈیل ڈول سے متاثر ہوئے ہیں۔ باتیں انہوں نے وہی کرنی ہیں جو مریم اورنگزیب سے لے کر عابد شیر علی تک فیض یافتگانِ دربار کرتے ہیں۔
مجھے امیر مقام کا مرعوب کن جثہ دیکھ کرتقریباً 57برس قبل کی گفتگو یاد آرہی ہے جو میرے مرحوم ماموں نسیم حجازی اور فیلڈ مارشل ایوب خان کے برادرِ خورد سردار بہادر خان کے درمیان ہوئی تھی۔ سردار بہادر خان کی وجہ ءشہرت یہ تھی کہ وہ لیڈر آف دی اپوزیشن تھے۔مرحوم اکثر ماموں جان سے ملنے آیا کرتے تھے۔ میں بھی چھٹیاں گزارنے ایبٹ آباد جایا کرتا تھا۔
جس گفتگو کی بات میں کر رہا ہوں وہ شروع تو بڑے دلائل کے ساتھ ہوئی مگر سیاسی گفتگو میں نقطہءنظر کا بنیادی اختلاف ہو تو پارہ چڑھ جایا کرتا ہے۔
سردار بہادر خان جوش میں آکر کہہ گئے کہ ”نسیم صاحب آپ ناول لکھا کریں۔ سیاست آپ کے بس کی بات نہیں۔“
ماموں جان نے غصہ میں آنے کی بجائے بڑا سنجیدہ انداز اختیار کرتے ہوئے کہا۔”دیکھوبہادر خان میں تمہیں راز کی ایک بات بتاتا ہوں جس کا علم مجھے بھی ابھی ہوا ہے۔۔“
”کیا بات ہے۔؟ ”سردار بہادر خان نے پوچھا۔۔
”اگر تمہارے بھاری بھر کم وجود سے حماقت نکال دی جائے تو تمہیں میں آسانی کے ساتھ دستی ترازو سے تول سکتا ہوں۔“ ماموں جان نے جواب دیا۔
میں قریب بیٹھا تھا۔ میری ہنسی چھوٹ گئی اور میں اٹھ کر وہاں سے چلا گیا۔
سردار بہادر خان کی سمجھ میں نہ آیا کہ کیا کہے اور کیا نہ کہے۔
اس سے پہلے کہ وہ کچھ کہتے ماموں جان نے سنجیدگی سے کہا۔”آپ واقعی چار من کے قریب پہنچ رہے ہیں۔ آپ کو اپنا وزن کم کرنے کے لئے ورزش کرنی چاہئے۔“
میرے خیال میں امیر مقام کو بھی ورزش کرنی چاہئے۔

Scroll To Top