کچرا!

kuch-khabrian-new-copy


پاناما کیس کے فیصلے پر عمل درآمد کرانے والے تین رکنی بنچ نے کام شروع کر دیا ہے۔ پہلے دن کی سماعت سے ہی یہ تاثر مل رہا ہے کہ سپریم کورٹ ایک نیا باب لکھنے جا رہی ہے ۔۔۔ ایک ایسا باب جو دنیا بھر میں پاکستان کا وقار بلند کر دے گا۔

جے آئی ٹی کے لئے جو نام ایس ای سی پی، نیب، سٹیٹ بنک نے سپریم کورٹ کو بھیجے تھے وہ تمام کے تمام اس تبصرے کے ساتھ مسترد کر دیئے گئے ہیں کہ وہ دیانت اور غیر جانبداری کے مطلوبہ معیار پر پورے اترتے دکھائی نہیں دیتے۔
جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا ہے کہ عدلیہ کے ساتھ گیم نہ کی جائے۔۔۔ جے آئی ٹی کے اراکین کا انتخاب اداروں کے سربراہ نہیں کریںگے، سپریم کورٹ کرے گی۔ فاضل جج نے اٹھارویں گریڈ اور اس سے اوپر کے تمام افسروں کی فہرستیں طلب کر لی ہیں تا کہ زیادہ سے زیادہ درست انتخاب کیا جاسکے۔
معلوم ہوتا ہے کہ حکومت عدلیہ کے رویے سے خوش نہیں۔ یہی وجہ ہے کہ مریم بی بی نے پاناما کیس کو کچرا قرار دے ڈالا ہے۔
لفظ”کچرا“ بڑا بُرا لگتا ہے۔ مگر حقیقت یہ ہے کہ پوری قوم اس بات کی منتظر ہے کہ کسی طرح ملک کی سیاست”کچرے“ سے پاک ہو جائے۔ دیکھنا یہ ہے کہ صفائی کا کام عدلیہ کرتی ہے یا فوج۔۔ یا پھر دونوں عوام کے ساتھ مل کر۔۔۔۔

Scroll To Top