پانامہ کیس کی سماعت مکمل فیصلہ محفوظ: ایسا فیصلہ دیں گے کہ جس کی20سال بعد بھی مثال دی جائے، جسٹس آصف سعید کھوسہ

  • آئین و قانون کے مطابق فیصلہ دیں گے کیوں کہ ہم نے اپنی قبروں میں جانا ہے، جس نے شور مچانا ہے مچاتا رہے، جسٹس عظمت سعید
    لیڈر کو عام شخص سے زیادہ ایماندار اور دیانتدار ہونا چاہئے ،اگر میں صادق اور امین نہیں تو مجھے بھی قیادت کا حق نہیں اور مجھے بھی بے شک نااہل قرار دے دیا جائے،چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان
  • قوم کو عدالت سے انصاف کی امید ہے، کرپشن پر سزا نہ ملی تو ملک خانہ جنگی کی طرف جائے گا،شیخ رشید،وزیراعظم نے اپنی تقریرمیں کہا تھا کہ استحقاق یا استثنیٰ نہیں مانگوں گا لیکن عدالت میں آ کر استحقاق مانگا گیا،وکیل جماعت اسلامی

Image result for ‫جسٹس آصف سعید کھوسہ‬‎

اسلام آباد (آن لائن) سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بنچ نے پانامہ لیکس سے متعلق درخواستوں پر فیصلہ محفوظ کرتے ہوئے قرار دیا ہے کہ عدالت آئین کے مطابق مثالی فیصلہ سنائے گی ، عدالت کو اس سے کوئی غرض نہیں کہ فیصلے پر کوئی خوش ہو یا ناراض ہو ، ہم نے عوام کے بنیادی حقوق کے تحفظ اور آئین کی حکمرانی کا حلف اٹھایا ہے ، جبکہ دوران سماعت جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے ہیں کہ یہ وہ مقدمہ نہیں جس میں مختصرحکم دیاجائے، کیس کے تمام زاویوں کو گہرائی سے دیکھا جائے گا اور پھر تفصیلی فیصلہ جاری کیا جائے گا ، اگر 20کروڑ عوام بھی عدالتی فیصلے سے خوش نہ ہو اس سے کوئی غر ض نہیں ہے ، ایسا فیصلہ دیں گے جس کی بیس سال بعد بھی مثال دی جائے اور لوگ کہیں گے عدالت نے آئین کی پاسداری کی ہے جسٹس عظمت سعید نے کہا کہ ہم آئین کے مطابق فیصلہ کریں گے کیوں کہ ہم نے اپنی قبر میں جانا ہے ، جس نے شور مچانا ہے مچاتا رہے ۔جمعرات کو کیس کی جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں جسٹس اعجاز افضل ، جسٹس گلزار احمد، جسٹس شیخ عظمت سعید اور جسٹس اعجاز الاحسن پر مشتمل پانچ رکنی لارجر بنچ نے کی،سماعت کے آغاز پر عمران خان کے وکیل نعیم بخاری نے جوابی دلائل دیتے ہوئے کہا کہ کل بلوں کے واجبات کا نقطہ اٹھایا تھا ، اس پر جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے کہ جو بات ہو چکی اس کو دوہرا کر وقت ضائع نہ کریں ، اس پر نعیم بخاری کا کہنا تھا کہ سہ فریقی معاہدہ دوران سماعت پیش کیا گیا تھا ، گلف اسٹیل کے واجبات 63 ملین درہم سے زیادہ تھے لیکن اس سے متعلق کوئی وضاحت نہیں آئی، جس پر جسٹس اعجاز افضل نے کہا کہ گلف سٹیل مل کے وجبات سے متعلق آپ کی درخواست میں کوئی بات نہیں ہے اور نہ ہی ابتدائی دلائل میں آپ نے یہ بات نہیں کی۔نعیم بخاری نے کہا کہ مریم نواز کی دستخط والی دستاویز میں نے تیار نہیں کی جس پر جسٹس عظمت سعید شیخ نے ریمارکس دیئے کہ آپ مریم کے دستخط والی دستاویز کو درست کہتے ہیں جبکہ شریف فیملی اس دستاویز کو جعلی قرار دیتی ہے، جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ متنازعہ دستاویز کو چھان بین کے بغیر کیسے تسلیم کریں، عدالت میں دستخط پر اعتراض ہو تو ماہرین کی رائے لی جاتی ہے، ماہرین عدالت میں بیان دیں تو ان کی رائے درست مانی جاتی ہے۔ عدالت ٹرائل کورٹ نہیں جو یہ کام کرے، نعیم بخاری نے کہا کہ یوسف رضا گیلانی کیس میں عدالت ایسا کر چکی ہے۔ جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ گیلانی کیس میں عدالت نے توہین عدالت کی درخواست پر فیصلہ کیا تھا۔ نعیم بخاری نے کہا کہ یہ بھی وزیراعظم کے ان اثاثوں کا مقدمہ ہے جو ظاہر نہیں کیے گئے۔جسٹس اعجاز افضل نے ریمارکس دیئے کہ کیا ایسی دستاویزات کو ثبوت مانا جا سکتا ہے، عدالت نے ہمیشہ غیر متنازعہ حقائق پر فیصلے کیے، کیا ہم قانون سے بالاتر ہو کر کام کریں۔ عدالت اپنے فیصلوں میں بہت سے قوانین وضع کر چکی ہے، جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ بنیادی حقوق کا معاملہ سن رہے ہیں، مقدمہ ٹرائل کی نوعیت کا نہیں۔نعیم بخاری نے کہا کہ کیا دنیا میں کسی نے پاناما لیکس کو چیلنج کیا ہے، وزیر اعظم نے بھی موزیک فونیسکا کو کوئی قانونی نوٹس نہیں بھجوایا، 1980 سے 2004 تک قطری شیخ بینک کا کردار ادا کرتے رہے، سرمایہ کاری پر منافع اور سود بھی بنتا گیا، سالہا سال تک قطری مراسم کا کوئی ذکر نہیں کیا گیا، قطری نے کہہ دیا کہ قرض کی رقم اس نے ادا کی، اتنی بڑی رقم بینک کے علاوہ کیسے منتقل ہوگئی، انہوں نے اخبار میں پڑھا کہ اسی قطری کو ایل این جی کا ٹھیکہ دیا گیا، وزیر اعظم نے اپنے خطاب میں سچ نہیں بولا، انہوں نے ایمانداری کا مظاہرہ نہیں کیا، گیلانی کیس کی طرح میں بھی عدالت سے ڈیکلریشن مانگ رہاہوں، جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ قطری ٹھیکے والی بات مفادات کے ٹکراو¿ کی جانب جاتی ہے۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ ہمارے سامنے ایل این جی کے ٹھیکے کا معاملہ نہیں، دستاویزات پر نہ دستخط ہیں نہ کوئی تاریخ، ادائیگی کس سال میں کی گئی وہ بھی نہیں لکھا، غیر تصدیق شدہ دستاویزات مسترد کرنا شروع کیں تو 99.99 فیصد کاغذات فارغ ہو جائیں گے، ایسی صورت میں ہم واپس اسی سطح پر آ جائیں گے، دونوں فریقین کی دستاویزات کا ایک ہی پیمانہ پر جائزہ لیں گے۔نعیم بخاری کی جانب سے جوابی دلائل مکمل کیے جانے کے بعد شیخ رشید نے اپنے دلائل کا آغاز کیا۔ انہوں نے کہا کہ میں باقاعدگی سے جسٹس اکیڈمی (عدالت) آتا ہوں،اتنے تسلسل سے میں کبھی نا تو اسکول گیا اور نہ کالج، عدالت نے سماعت کے دوران 371 سوالات پوچھے ،جن میں سے زیادہ تر شیخ عظمت کے تھے، جواب نہ ملنے پر جج صاحب کا دل زخمی ہوا، جج صاحب کا صحت یاب ہونا اللہ کا احسان ہے، میرا کیس اسمارٹ، سویٹ اور شارٹ ہے، جس پر جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ آج آپ نے سلگش کا لفظ استعمال نہیں کیا۔ آج کل انصاف اور فیصلے کے معنی مختلف ہو گئے ہیں، انصاف اس کو کہا جاتا ہے جو حق میں آئے، فیصلہ حق میں آئے تو کہا جاتا ہے کہ ان سے اچھا منصف کوئی نہیں، فیصلہ حق میں نہ آئے تو کہتے ہیں جج نالائق ہے، ججز پر رشوت اور سفارشی کا الزام لگتا ہے، کہتے ہیں کہ ملی بھگت ہو گئی۔شیخ رشید نے کہا کہ میرا کیس پہلے دن سے ہی صادق اور امین کا ہے، اس موقع پر شیخ رشید کی جانب سے جعلی ڈگری اور دوہری شہریت مقدمات کی فہرست بھی پیش کی ، انہوں نے کہا کہ عدالت صادق اور امین کی کئی فیصلوں میں تعریف کرچکی ہے، عدالت نے جن 20 اراکین کو نااہل کیا ان کے فیصلے سامنے رکھناہوں گے، ان 20 اراکین اسمبلی کو آرٹیکل 184 (3) کے تحت نااہل کیا گیا، قوم کو عدالت سے انصاف کی امید ہے، کرپشن پر سزا نہ ملی تو ملک خانہ جنگی کی طرف جائے گا، نواز شریف نے کہا تھا کرپشن کرنے والے اپنے نام پر کمپنیاں اور اثاثے نہیں رکھتے، دبئی فیکٹری کب اور کیسے لگی، پیسہ کیسے باہر گیا۔ تمام دستاویزات موجود ہونے کا بھی دعویٰ کیا گیا۔ کیس آپ کو سمجھ آ چکا ہے اور اب ہم وقت ضائع کر رہے ہیں۔شیخ رشید احمد خان نے کہا کہ منی لانڈرنگ اور کرپشن پر استثنیٰ نہیں ہوتا، نواز شریف کا بیان اگر اسمبلی کی کارروائی ہو تو ہی اسے استحقاق حاصل ہے، ذاتی وضاحت استحقاق کے زمرے میں نہیں آتی، مفاد عامہ کی درخواست میں سپریم کورٹ وہ ریلیف بھی دے سکتی ہے جو نہیں مانگا گیا، ایمرجنسی والے کیس میں بھی سپریم کورٹ نے استدعا سے بڑھ کرریلیف دیا، عدالت نے چوہدری نثار کی درخواست میں چیئرمین نیب کو اڑایا، جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ یہ کہنا مشکل ہو گا کہ تقریر کارروائی کا حصہ نہیں تھی، پتہ نہیں اس نے فیصلے پڑھے بھی ہیں یا نہیں، جس نے آپ کو لکھ کر دیا،اڑا دیا کے لفظ سے غلط فہمی پیدا ہوتی ہے، اس سے ایسا لگتا ہے جیسے کسی کا کوئی ایجنڈا ہو، ہم کسی کو اڑاتے نہیں، صرف فیصلہ کرتے ہیں۔شیخ رشید احمد نے کہا کہ ہمارے شہر میں ایسے ہی لفظ استعمال ہوتے ہیں، ڈاوﺅن ٹاﺅن کے منشی تو ایسے ہی لکھ کردیتے ہیں، میرے شہر میں لوگ قانون کو نہیں فیصلے کو زیادہ سمجھتے ہیں کیونکہ آپ سے آ گے تو صرف اللہ ہی کی ذات ہے، میں نے رات کو تنہائی میں شریف فیملی کی دستاویزات کو دیکھا ہے، مجھے تو تمام دستاویزات جعلی لگتی ہیں، سپریم کورٹ نے تو نواز شریف کو ملک میں داخلے کی اجازت دی، تمام ادارے اور پی ایم ہاﺅس روزانہ اپنا کیس امپروو کرتے ہیں، قطری کی آمد پہلی بار نہیں ہوئی، ہیلی کاپٹر کیس میں بھی قطری آچکا ہے، طارق شفیع نے بھی اپنا پہلا بیان بہتر بنایا ہے۔ جس پر جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے کہ آپ نواز شریف کی انٹری نہیں ایگزٹ کا کیس لائے ہیں۔ سب لوگ اپنے کیس کی تیاری کرکے آتے ہیں۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے کہ قانون شہادت کے مطابق چوری کا مال جس سے برآمد ہو اسی کو ثابت کرنا ہوتا ہے، شیخ رشید نے کہا کہ شریف خاندان نے تسلیم کیا ہے کہ مال ان کا ہے، جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے کہ مال شریف خاندان کا ہونے اور چوری کا ہونے میں فرق ہے، پہلے ثابت کرنا ہوتا ہے کہ مال چوری کا ہے۔شیخ رشید احمد کے بعد جماعت اسلامی کے وکیل توفیق آصف نے اپنے جوابی دلائل میں کہا کہ اللہ وزیراعظم کو صحت، زندگی اور آئین کے مطابق چلنے کی توفیق دے، وزیراعظم نے اپنی تقریرمیں کہا تھا کہ استحقاق یا استثنیٰ نہیں مانگوں گا لیکن عدالت میں آ کر استحقاق مانگا گیا، وزیراعظم نے اسمبلی میں جو ریکارڈ پیش کیا تھا وہ طلب کرنے کی درخواست کی تھی، جس پر جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے کہ وزیراعظم نے جو تصاویر پیش کی تھیں وہ ریکارڈ پر آ چکی ہیں، وزیراعظم شروع سے ہی بہت ہینڈسم ہیں، کیا آپ ان کی جوانی کی تصاویر دیکھنا چاہتے ہیں توفیق آصف کے دلائل مکمل ہونے پر نعیم بخاری نے عدالت عظمیٰ سے استدعا کی درخواست گزار روسٹرم پر بات کرنا چاہتے ہیں اجازت دی جائے جس پر سپریم کورٹ کی اجازت پر عمران خان نے فاضل جج صاحبان کے روبرو کہا کہ میں عوام کے لیے آیا ہوں ، پوری دنیا میں بد عنوان قیادت کیخلاف عوام احتجاج کی لہر چل رہی ہے کہ بد عنوان قیادت کا احتساب کیا جائے ، ترقی یافتہ ملکوں کے ادارے مضبوط ہیں لیکن ہمارے ادارے مضبوط نہیں، میری کسی سے کوئی ذاتی دشمنی نہیں، میں کرپشن ختم کرنے کے لئے یہاں آیا ہوں، لیڈر کو عام شخص سے زیادہ ایماندار اور دیانتدار ہونا چاہئے ، قیادت کی ایمانداری سب سے بالاتر ہے ۔ اگر میری دیانتداری ثابت نہ ہوتو مجھے بھی عوامی عہدے پر آنے کا کوئی حق نہیں، اگر عوامی نمائندے ایماندار نہ ہوں تو اس کے منفی اثرات پورے ملک پر پڑھتے ہیں ،پاکستانی قوم دنیا کی ان 10 اقوام میں شامل ہوتی ہے جو سب سے زیادہ خیرات اور فلاحی کاموں میں حصہ ڈالتی ہے لیکن ہم بحیثیت قوم ٹیکس کی ادائیگی میں سب سے پیچھے ہیں جبکہ امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا کہ عدالت نے پانامہ کیس کی سماعت شروع کر کے امید کی کرن روشن کی ہے ، کرپشن روکنے کے لئے تمام اداروں کے دروازے کھٹکھٹا کر یہاں آئے ہیں،ہم آپ کی عدالت میں ہیں اورآپ اللہ کی عدالت میں ہیں کتاب اور میزان عدل آپ کے ہاتھ میں ہے ، عدالت کے لیے بادہشاہ اور چوکیدار برابر ہیں ، جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کیس کی سماعت مکمل ہونے پر ریمارکس دیئے کہ یہ وہ مقدمہ نہیں جس میں مختصر حکم دیاجائے، کیس کے تمام زاویوں کو گہرائی سے دیکھا جائے گا اور پھر تفصیلی فیصلہ جاری کیا جائے گا ، جبکہ جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیئے ہیں کہ فیصلہ ہم نے کرنا ہے ہم آئین کے مطابق فیصلہ کریں گے کیوں کہ ہم نے اپنی قبر میں جانا ہے ، جس نے شور مچانا ہے مچاتا رہے جبکہ جسٹس آصف سعید کھوسہ کا کہنا تھا کہ اگر 20کروڑ عوام بھی عدالتی فیصلے سے خوش نہ ہو اس سے کوئی غر ض نہیں ہے ، ایسا فیصلہ دیں گے جس کی بیس سال بعد بھی مثال دی جائے اور لوگ کہیں گے عدالت نے آئین کی پاسداری کی ہے ۔ عدالت نے تمام فریقین کو تفصیل کے ساتھ سننے کے بعد کیس کا فیصلہ محفوظ کر لیا ہے ۔

Scroll To Top