80 مرتبہ تحریر کے قابل جادوئی کاغذ تیار

یونیورسٹی آف کیلیفورنیا ، ریورسائیڈ کے ماہرین کا بنایا ہوا کاغذ جس پر 80 بار لکھا جاسکتا ہے۔ فوٹو: بشکریہ یوسی آر ایس

ریور سائیڈ ، امریکہ: امریکی انجینیئروں نے ایسا انوکھا کاغذ تیار کیا ہے جس پر لکھنے کے لیے الٹراوائلٹ روشنی اور مٹانے کے لیے حرارت استعمال کی جاتی ہے اور اس پر بار بار 80 مرتبہ لکھا جاسکتا ہے۔

یونیورسٹی آف کیلیفورنیا، ریورسائیڈ کے پروفیسر یاڈونگ یِن اور ان کے ساتھیوں کے تیار کردہ کاغذ میں سالڈ اسٹیٹ فوٹو ریورسیبل کلر سوئچنگ سسٹم استعمال کیا گیا ہے جو دیکھنے اور چھونے پر عام کاغذ جیسا دکھائی دیتا ہے۔ اسے کسی بھی سیاہی کے بغیر بار بار صاف کرکے لکھا جاسکتا ہے۔ اس طرح کاغذوں کے لیے درخت کاٹنے کے عمل کو بہت حد تک کم کرکے ماحول کو بہتر بنایا جاسکتا ہے۔ پھر عام کاغذ کو ری سائیکل کرنے کے عمل میں آلودگی ختم نہیں ہوتی کیونکہ اس پر لگی روشنائی کئی کیمیکل پر مشتمل ہوتی ہے اور وہ ماحول کا حصہ بن جاتی ہے۔

اس جادوئی کاغذ پر دو اقسام کی پرت لگائی گئی ہے۔ ایک نیلا رنگ ہے جو اس وقت تک نظر نہیں آتا جب تک اس پر الیکٹران نہ ڈالے جائیں۔ دوسری پرت ٹیٹانیئم آکسائیڈ کی ہے جو الٹراوائلٹ روشنی پڑنے پر کیمائی عمل کو تیز کرتی ہے۔ جب ان دونوں پرتوں کو ملاکر کاغذ پر لگایا جاتا ہے تو وہ نیلا ہوجاتا ہے۔

کاغذ پر الٹرا وائلٹ (بالائے بنفشی) روشنی ڈالی جائے تو ذرات سرگرم ہو کر تصویر یا الفاظ  کی صورت اختیار کرتے ہیں کیونکہ اس عمل سے الیکٹران خارج ہوتے ہیں اور نیلی سیاہی پر اثر انداز ہوتے ہیں۔ اسی طرح کاغذ پر نیلے پس منظر میں سفید تحریر بھی نقش کی جاسکتی ہے۔کاغذ پر موجود لکھائی 5 روز بعد بتدریج دھندلی ہونے لگی ہے لیکن اگر کاغذ کو 120 ڈگری سینٹی گریڈ پر گرم کیا جائے تو دس منٹ میں لکھائی یا تصویر غائب ہوجائے گی۔

اگرچہ کئی ماہرین نے ماضی میں بھی ایسے مادوں اور کاغذوں پر کام کیا ہے لیکن اس کی قیمت زیادہ تھی اور طریقہ کار بھی مشکل تھا تاہم اب نئی تکنیک سے بار بار استعمال کئے جانے والے کاغذ کا خواب پورا ہوچکا ہے۔ اس نئے مٹیریل سے یادداشت، دفتری نوٹس اور اخبار وغیرہ تیار کئے جاسکتے ہیں کیونکہ ایک مرتبہ پڑھنے کے بعد ان کی زیادہ اہمیت نہیں رہتی۔ سب سے اچھی بات یہ ہے کہ اس کاغذ کو تیار کرنا بہت آسان اور کم خرچ ہے۔

Scroll To Top