کورونا وائرس سے بچاﺅ:پاکستان کاسارک سیکریٹریٹ کو بااختیار بنانے کا مطالبہ

وائرس سے نمٹنے اور حفاظتی اقدامات کو عالمی ادارہ صحت نے بھی تسلیم کیا ، سارک ممالک میں سفری حوالے سے اسکریننگ کی جائے، چین کی موثر کوششوں سے سیکھنے کے لیے سارک آبزر ور اسٹیٹ کا طریقہ کار مرتب کیا جائے

اسلام آباد (صباح نیوز)پاکستان نے کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے علاقائی سطح پر کوششوں کے لیے سارک سیکریٹریٹ کو بااختیار بنانے کا مطالبہ کردیا، پاکستان کی سارک وزرائے صحت کانفرنس کی تجویز پر فوری عمل کرنا چاہیے ۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے کورونا وائرس کے حوالے سے منعقدہ سارک ویڈیو کانفرنس میں پاکستان کی کوششوں سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ عالمی ادارہ صحت نے ہمارے اقدامات کو سراہا۔گزشتہ روز ترجمان دفترخارجہ کے جاری اعلامیے کے مطابق ،، کووڈ-19 ،، کے حوالے سے اقدامات پر تبادلہ خیال کے لیے سارک ممالک کی ویڈیو کانفرنس ہوئی۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے پاکستان کی نمائندگی کی۔ڈاکٹر ظفر مرزا نے بریفنگ میں پاکستان کی کوششوں اور وبا سے نمٹنے کے لیے کیے گئے اقدامات پر روشنی ڈالی اور کہا کہ پاکستان اس حوالے حفاظتی اقدامات میں مصروف ہے۔انہوں نے کہا کہ وائرس سے نمٹنے اور حفاظتی اقدامات کو عالمی ادارہ صحت نے بھی تسلیم کیا اور سراہا ہے۔ڈاکٹر ظفر مرزا نے کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے علاقائی سطح پر کوششوں کے لیے سارک سیکریٹریٹ کو بااختیار بنانے اور مینڈیٹ دینے پر زور دیا۔سارک ممالک کے حوالے سے اپنی تجاویز میں انہوں نے کہا کہ خطے میں سفری حوالے سے اسکریننگ کی جائے، چین کی موثر کوششوں سے سیکھنے کے لیے سارک آبزر ور اسٹیٹ کا ایک طریقہ کار مرتب کیا جائے۔ان کا کہنا تھا کہ سارک سیکریٹریٹ کوڈیٹا کے تبادلے کا بھی مینڈیٹ دیاجائے اور خطے میں ڈبلیو ایچ او کے طریقہ کار پر عمل کیا جائے تاکہ یہ وائرس پھیل نہ سکے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کی جانب سے سارک وزرائے صحت کانفرنس کی دی گئی تجویز پر فوری عمل کرنا چاہیے۔کوروناوائرس کے خلاف پاکستان کے اقدامات سے آگاہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان نے وائرس کی روک تھام کے لیے اہم اقدامات کیے ہیں۔ کیونکہ پر سکون اقدامات وقت کی ضرورت ہیں۔ عالمی ادارہ صحت کی مدد سے اقدامات کیے جارہے ہیں، پاکستان نے مغربی سرحد 3ہفتوں کے لیے بند کر دی ہے اور کیسز کو محدود کرنے کے لیے ہر ممکن کوشش کررہے ہیں۔ 13 مارچ کو پہلی مرتبہ ہماری قومی سلامتی کمیٹی نے صحت کے معاملات پر طریقہ کار طے کرنے کے لیے اجلاس منعقد کیا اور وائرس کے مزید پھیلاو کو روکنے کے لیے اقدامات کیے گئے۔معاون خصوصی نے کہا کہ ہماری پالیسی کے 4 بنیادی پہلو ہیں جن میں پہلا گورننس اور مالیات، دوسرا بچاو کی تدابیر، تیسرا کیسز میں کمی اور چوتھا قدم آگاہی شامل ہے۔قومی سلامتی کمیٹی کے فیصلوں پر روشنی ڈالتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نیشنل ڈیزاسٹر منیجمنٹ کو وفاقی اور صوبائی سطح پر بین الرابطے کی ذمہ داری سونپ دی گئی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ معاملات پر وزیراعظم عمران خان براہ راست نظر رکھے ہوئے ہیں، 3ہفتوں کے لیے تمام تعلیمی ادارے بند، بین الاقوامی پروازیں 3 ایئرپورٹس تک محدود اور تمام بڑے اجتماعات بھی ملتوی کردیے گئے ہیں۔خیال رہے کہ سارک ممالک میں پاکستان اور بھارت کے علاوہ سری لنکا، بنگلہ دیش، مالدیپ، بھوٹان اور نیپال شامل ہیں، ویڈیو کانفرنس میں بھارت کے وزیراعظم نریندر مودی بھی موجود تھے۔چین کے شہر ووہان سے دسمبر 2019 میں شروع ہونے والا نیا کووڈ-19 کورونا وائرس اب تک دنیا کے تقریبا 156 ممالک تک پھیل چکا ہے اور دنیا بھر میں ایک لاکھ 56 ہزار 400 سے زائد افراد متاثر ہوچکے ہیں۔چین کے بعد کورونا وائرس نے ابتدائی طور پر جنوبی کوریا اور ایران جیسے ممالک کو متاثر کیا اور وہاں مختصر عرصے میں مریضوں کی تعداد 10 ہزار سے تجاوز کر گئی مگر پھر کورونا وائرس نے اپنی رفتار مزید بڑھائی اور یورپ کے ساتھ ساتھ امریکا کو اپنا نیا مرکز بنایا۔کورونا وائرس کے مریضوں میں محض آخری 2 دن میں ہی 30 ہزار سے زائد کا اضافہ دیکھنے میں آیا اور سب سے زیادہ اضافہ یورپ میں دیکھا گیا، جہاں صرف اسپین میں ہی ایک دن میں 1500 کیسز ریکارڈ کیے گیے۔

You might also like More from author