ترک صدر اگر پاکستان سے الیکشن لڑیں تو کلین سویپ کریں گے: عمران خان

آج تک اپوزیشن بینچوں کے اراکین کو ڈیسک بجا کر تقریر کو سراہتے ہوئے کبھی نہیں دیکھا جو مجھے دیکھنے کا موقع ملا، ترک صدر کے مسلم دنیا کے مسائل کے حل کے لیے اٹھائے گئے اقدامات کے سبب پاکستان کے عوام سیاسی اختلافات سے بالاتر ہو کر پسند کرتے ہیں

طیب اردگان پاکستان کے تمام طبقات میں یکساں مقبول ہیں، پاکستان ترکی کی سیاحتی پالیسیوں سے بہت کچھ سیکھ سکتا ہے،سیاحت، آئی ٹی، کان کنی اور زراعت سمیت مختلف شعبوں میں ترکی کو سرمایہ کاری کی دعوت دیتا ہے، وزیر اعظم

اسلام آباد (این این آئی) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ یقین سے کہہ سکتا ہوں رجب طیب اردوان پاکستان میں الیکشن جیت جائینگے ۔ جمعہ کو وزیر اعظم عمران خان نے پاک ترک بزنس فورم سے خطاب کے آغاز میں کہا کہ پاکستانی پارلیمنٹ سے رجب طیب اردوان کے خطاب کے بعد میں یقین سے کہہ سکتا ہوں کہ یہ پاکستان میں اگلا انتخاب جیت سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ میں نے حکومتی بینچز کو بینچز بجاتے ہوئے دیکھا ہے لیکن آج تک اپوزیشن بینچوں کے اراکین کو ڈیسک بجا کر تقریر کو سراہتے ہوئے کبھی نہیں دیکھا جو مجھے آج دیکھنے کا موقع ملا۔وزیر اعظم نے کہا کہ یہ ثابت کرتا ہے کہ مسلم دنیا کے مسائل کے حل کے لیے آپ کی جانب سے کیے گئے اقدامات کے سبب پاکستان کے عوام سیاسی اختلافات سے بالاتر ہو کر آپ کو کتنا پسند کرتے ہیں دریں اثناء وزیر اعظم عمران خان کاکہنا ہے کہ ترک صدر رجب طیب اردوان پاکستان میں آئندہ انتخابات جیت سکتے ہیں، آج حکومت اور اپوزیشن دونوں جانب سے انہیں خراج تحسین پیش کیا گیا ہے جو اس بات کا ثبوت بھی ہے۔اسلام آباد میں پاک ترک بزنس فورم کی تقریب منعقد ہوئی جس میں وزیراعظم عمران خان کے ہمراہ ترک صدررجب طیب اردوان اسٹیج پر موجود تھے۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ ترک صدرپاکستان کےتمام طبقات میں یکساں مقبول ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان ترکی کی سیاحتی پالیسیوں سے بہت کچھ سیکھ سکتا ہے ا ورسیاحت، آئی ٹی، کان کنی اور زراعت سمیت مختلف شعبوں میں ترکی کو سرمایہ کاری کی دعوت دیتا ہے۔ترک صدر اردوان نے بھی پاک ترک بزنس فورم سے اپنے خطاب میں کہا کہ وہ اپنے دوسرے گھر پاکستان میں آکربہت خوش ہیں، پاکستان کےساتھ معاشی تعلقات اور تجارت کوبڑھانا چاہتے ہیں۔صدر رجب طیب اردوان نے کہا کہ پاکستان اور ترکی بہت سے شعبوں میں ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کرسکتے ہیں، میں پاکستانی بھائیوں کو ترکی میں سرمایہ کاری کی دعوت دیتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان سے تجارتی حجم کو 5 ارب ڈالر تک لے جانا چاہتے ہیں، ہم جانتےہیں کہ پاکستان میں آگے بڑھنے کی صلاحیت موجود ہے، دفاع کے شعبے میں ترکی اور پاکستان کے تعلقات مضبوط ہوئے ہیں۔ترک صدر ادروان کا کہنا تھا کہ ترکی میں جوان اور باصلاحیت افرادی قوت موجود ہے، پاکستان کے لوگ علاج معالجے کے لیے مغرب کی جانب دیکھتے ہیں،جبکہ ترکی میں مغرب سے کہیں زیادہ جدید علاج کی سہولتیں موجود ہیں۔

You might also like More from author