نوجوان قائداعظم کو رول ماڈل بنائیں : عمران خان

ہمیں بطور قوم ملک کو قائد کے ویژن کی روشنی میں اسلامی ویلفیئر اسٹیٹ میں ڈھالنا ہو گا ایسی ریاست بنانی ہے جس کی بنیاد انسانی وقار، انصاف اور قانون کی حکمرانی ہو

اسلام آباد (این این آئی)وزیر اعظم عمران خان نے نوجوانوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ نوجوان لیڈر شپ قائد اعظم کو اپنا رول ماڈل بنائے۔وزیر اعظم عمران خان نے قائد اعظم کے یوم پیدائش کے موقع پر سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر لکھا کہ ہمیں بطور قوم ملک کو قائد کے ویژن کی روشنی میں اسلامی ویلفیئر اسٹیٹ میں ڈھالنا ہو گا اور ہمیں ایسی ریاست بنانی ہے جس کی بنیاد انسانی وقار، انصاف اور قانون کی حکمرانی ہو۔انہوں نے کہا کہ نوجوان لیڈرشپ کو چاہیے کہ وہ قائد اعظم کو اپنا رول ماڈل بنائے۔ قائد اعظم صادق  اور امین تھے ان کی 40 سالہ جدوجہد کسی ذاتی مقصد کےلئے نہیں تھی۔وزیر اعظم نے کہا کہ قائد اعظم نے اتنی جدوجہد مسلمانوں کےلئے الگ ملک کے حصول کی خاطر کی تھی، جہاں وہ آزاد شہری کی حیثیت سے اپنی زندگی بسر کر سکیں۔دریں اثناءصدر مملکت ڈاکٹرعارف علوی اور وزیراعظم عمران خان نے قائداعظم کے یوم پیدائش کے موقع پر قوم کے نام اپنے پیغامات میں کہا ہے کہ کشمیر کو پاکستان کی ”شہ رگ“کہا تھا، پوری قوم اپنے کشمیری بھائیوں کے پیچھے چٹان کی طرح کھڑی ہے، بابائے قوم نے برصغیر کے مسلمانوں کی الگ شناخت اورسیاسی سمت کا تصور دیا۔بانی پاکستان حضرت محمد علی جناح کے144 ویں یوم پیدائش کے موقع پر صدر عارف علوی نے اپنے پیغام میں کہا ہے کہ قائد اعظم کا یوم پیدائش پاکستان کی تاریخ میں خاص دن کے طور پر منایا جاتا ہے، عظیم رہنما کی پیدائش ہوئی جنہوں نے براعظم کا جغرافیہ بدلا اور ہمیں پاکستان عطا کیا، قائداعظم نے برصغیر کے مسلمانوں کی الگ شناخت اور سیاسی سمت کا تصور دیا، پوری قوم عظیم رہنما قائداعظم محمدعلی جناح کو خراج عقیدت پیش کر رہی ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان قائداعظم کے تصور کے مطابق ترقی کی راہ پرگامزن ہے، ہمیں متحد ہو کر قائداعظم کی تعلیمات پر قائم رہنے کے عزم کا اعادہ کرنا ہے، ترقی کیلئے اتحاد، ایمان اور نظم وضبط کے اصولوں پرعمل پیرا ہونا ہے۔وزیراعظم عمران خان کا اپنے پیغام میں کہا کہ قائداعظم 20 ویں صدی کے عظیم اور صاحب بصیرت رہنما تھے، ان کی کرشمہ ساز شخصیت کے سبب کروڑوں مسلمان کڑے حالات کا مقابلہ کرنے کیلئے متحد ہو گئے ۔انہوں نے کہا کہ پوری دنیا بھارت کے نام نہاد سیکولر ازم کو اپنی آنکھوں سے دیکھ رہی ہے جہاں کس طرح اقلیتوں خصوصاً مسلمانوں کیخلاف سرکاری سطح پر نفرت انگیز اور ظالمانہ اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں،یہ وہی سنگین صورتحال ہے جو قائداعظم نے اپنی دور اندیش بصیرت کے ذریعے بہت پہلے ہی محسوس کر لی تھی کہ انتہا پسند ہندو مسلمانوں کو کبھی عزت اور وقار سے جینے نہیں دیں گے،بھارت میں مسلمانوں سے امتیازی سلوک قائداعظم کے یقین کی تصدیق ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قائداعظم کو خراج عقیدت پیش کرنے کا بہترین طریقہ یہی ہے کہ ان کے ایمان، اتحاد اور تنظیم کے اصولوں پر پوری طرح عمل کیا جائے۔

You might also like More from author