معصوم زینب کے قتل پر شوبز و کرکٹ ستارے بھی اشک بار

seہم آخر کس معاشرے میں رہ رہے ہیں، منیبہ مزاری فوٹو:فائل

کراچی: قصور میں کمسن بچی زینب کے ساتھ زیادتی کے بعد قتل کے ایک اور واقعے نے پورے ملک سمیت شوبز اور کرکٹ ستاروں کو بھی ہلا کررکھ دیا۔

ماہرہ خان، ماورا حسین، حمزہ علی عباسی اور محمد حفیظ سمیت متعدد اداکاروں اور کرکٹرز نے ٹوئٹر پر شدید غم وغصے کا اظہار کیا ہے۔

نامور پاکستانی اداکار اور میزبان حمزہ علی عباسی نے فیس بک پر ننھی زینب کے لیے آواز بلند کرتےہوئے کہا کہ مجھے سمجھ نہیں آرہا اس لرزہ خیز واقعے کے بعد میں اپنے احساسات کن الفاظ میں بیان کروں۔

…..As vocal as i am, I dont know how to put my feelings into words about this…. I really don't!

پاکستان کی صف اول کی اداکارہ ماہرہ خان نے ننھی زینب کے قتل پر شدید غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئےکہا یہ سب کچھ  اس وقت تک بند نہیں ہوگا جب تک ہم ان حیوانوں اور قاتلوں کو عبرت کا نشان نہیں بنائیں گے۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: قصور میں 8 سالہ بچی کا زیادتی کے بعد لرزہ خیز قتل

معروف سماجی شخصیت منیبہ مزاری بھی اس موقع پر چپ نہ رہ سکیں اور لکھا کہ 7 سال کی ننھی پری کے ساتھ زیادتی کا واقعہ انتہائی خوفناک ہے ہم آخر کس معاشرے میں رہ رہے ہیں۔

خوبرو پاکستانی اداکارہ ماورا حسین نے لکھا ’یا اللہ اس قدر ظلم اور جہالت‘ہم بحیثیت قوم بہت شرمندہ ہیں۔ صرف زینب کا واقعہ نہیں بلکہ یہاں نجانے کتنے زیادتی اور قتل کےواقعات ہیں جو انصاف کے منتظر ہیں۔

 

Ya Allah is qadar Zulm or Jahalat! We should truly truly be ashamed of ourselves as a Nation. What’s the point for when there are countless Rape & Murder cases in line for justice? @pid_gov @GovtOfPunjab Devastated!

معروف ٹی وی اداکارہ نادیہ جمیل نے واقعے پر شدید غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ننھی زینب کی لاش زیادتی کے بعد کوڑے دان سے برآمد ہوئی اس کے والدین عمرے کی ادائیگی کے لیے گئے ہوئے ہیں اور جب وہ واپس آئیں گے تو اپنی بچی کی تدفین کریں گے۔

قومی کرکٹر وہاب ریاض بھی اس واقعے پر بولنے سے خود کو روک نہ سکے اور لکھا کہ یقین کرنا مشکل ہے کہ یہ سب سچ ہے اور یہ سب ہمارے پاکستان میں وقوع پزیر ہوا ہے۔ انہوں نے خدا سے دعا کرتے ہوئے کہا کہ یا اللہ ننھی زینب کے گھر والوں کو صبر دے۔ میں بھی ایک باپ ہوں اور جب میں نے اس واقعے کے متعلق سنا مجھے بہت دکھ ہوایہ سب کیا ہوگیااور ہم اسے دوبارہ ہونے سے کیسے روک سکتے ہیں؟

I refuse to believe this can be true and this can happen in our Pakistan but the reality is different. Ya Allah give sabr to the parents. As a father just hearing about this has made me feel sick. What is happening? How can we stop this from ever happening again?

کرکٹر محمد حفیظ نے بھی زینب کے لیے آواز اٹھاتے ہوئے کہا میں بھی ایک باپ ہوں  یہ سب دیکھنے کے بعد والدین پر کیا گزرتی ہے ہم سوچ بھی نہیں سکتے، انہوں نے زینب کے والدین سے اظہار تعزیت کرتے ہوئے کہا یہ واقعہ ہمارے معاشرے کے لیے سوچنے کا مقام ہے، حکومت کو اس واقعے پر ایکشن لینا چاہئےتاکہ ایسا کچھ دوبارہ نہ ہوسکے۔

, Being a Father just can’t imagine the pain of Parents after this, condolences to her parents & Alarming situation to Society we r living in 🙏🏽🙏🏽🙏🏽, Govt should do Prompt action against the Culprit & give justice to ZAINAB ,

قومی کرکٹر شعیب ملک نے بھی ننھی زینب زیادتی قتل کیس پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس واقعے کے بعد ان کے پاس الفاظ ختم ہوگئے ہیں معاف کیجئے گا ہم کس مقام پر کھڑے ہیں؟

محمد عامر نے کہا اس واقعے نے میرا دل توڑ دیا پریشان کن اور قابل نفرت عمل، ہم کس طرح کے معاشرے میں رہ رہے ہیں۔

I am heart broken, gutted and disgusted what sort of society we r living in😢😢😢😢 heart goes out to the parents…

شاداب خان نے کہا ” میری دلی ہمدردیاں زینب اور ان کی فیملی کے ساتھ ہیں، ایسے مسائل پر قابو پانا اور ذمہ دار افراد کو پکڑنا چاہیے، ہمیں ایسے وحشیانہ جرائم کے خلاف متحد ہونا ہو گا، بچے اللہ تعالیٰ کا عظیم تحفہ ہوتے ہیں، وہ انسانیت میں ہر اچھے کام کیلیے کھڑے ہوتے ہیں، زینب کے ساتھ پیش آنے والا واقعہ انسانی المیہ ہے، ان کے خاندان کو پہنچنے والے دکھ کا اندازہ نہیں کر سکتا، ہمیں اس ظلم کے خلاف بولنا ہو گا، انصاف ہو کے رہتا ہے۔“

Children are Allah’s greatest gift. They stand for everything good in humanity, Zainab’s tragedy is humanity’s tragedy. Deeply saddened by it, can’t even imagine what her family is going through. We must speak up, justice has to prevail.

جنید خان نے کہا کہ ”ایک اور بچی کو درندگی کا نشانہ بنانے کی خبر سن کر دل ٹوٹ گیا، ابھی تک ذمہ داران کو گرفتار نہیں کیا جا سکا، سیاسی ایشوز کو پس پشت ڈالتے ہوئے ہمیں اس مسئلے کیلیے کھڑا ہونا ہو گا، مجرم کی پھانسی کیلیے اپنی آواز بلند کیجیے۔“

Heartbreaking to see another child become victim.
Unbelievable that no criminal has been arrested till now. Political issues should be set aside and all should join hands to find a solution for this. Raise your voice if you belive the criminals should be hanged

Scroll To Top