نواز شریف کیخلاف9سو صفحات پر مشتمل ریکارڈ عدالت میں جمع

  • العزیزیہ اسٹیل مل ریفرنس کی سماعت آج تک ملتوی،وکیل صفائی نے نیب کے ریکارڈ پر اعتراض عائد کردیا،نواز شریف کی جگہ ان کے نمائندے احتساب عدالت میں پیش ہوئے،جج محمد بشیرنے کیس کی سماعت کی
  • گواہ ملک طیب نے نو سو صفحات پر مشتمل ریکارڈ عدالت میں جمع کرایا ، جس میں بینک اکاونٹس، ٹرانزکشنز،غیرملکی اکاونٹس اور کرنسی کی تفصیلات شامل تھیں،استغاثہ کے گواہ ملک طیب آج بھی اپنا بیان ریکارڈ کرائیں گے

نواز شریف کیخلاف9سو صفحات پر مشتمل ریکارڈ عدالت میں جمع

اسلام آباد(صباح نیوز)احتساب عدالت نے العزیزیہ اسٹیل مل ریفرنس کی سماعت آج (جمعرات ) تک ملتوی کردی جبکہ وکیل صفائی نے نیب کے ریکارڈ پر اعتراض عائد کردیا ہے۔بدھ کو نیب کی جانب سے سابق وزیراعظم نواز شریف کے خلاف دائر العزیزیہ ریفرنس کی سماعت اسلام آباد کی احتساب عدالت میں ہوئی، جج محمد بشیرنے کیس کی سماعت کی۔عدالت کی جانب سے ایک ہفتے کا استشنیٰ ملنے پر نواز شریف کی جگہ ان کے نمائندے احتساب عدالت میں پیش ہوئے، اس موقع پر مسلسل دوسرے روز نجی بینک کے افسر ملک طیب کا بیان ریکارڈ کیا گیا۔دوران سماعت گواہ ملک طیب نے نو سو صفحات پر مشتمل ریکارڈ عدالت میں جمع کرایا جس میں بینک اکاونٹس، ٹرانزکشنز،غیرملکی اکاونٹس اور کرنسی کی تفصیلات شامل تھیں،سابق وزیرا عظم کی جانب سے جاری چیکس پر نواز شریف کے دستخط موجود بھی تھے۔استغاثہ کے گواہ نے عدالت کو بتایا کہ 11 مارچ2017کو نواز شریف نے چار ٹرانزیکشنز کیں۔ 11 مارچ2017کو دس لاکھ ڈالر نواز شریف نے پاکستانی کرنسی اکاونٹ میں ٹرانسفر کیے۔ 7 فروری 2017 کو انہوں نے اپنے اکاونٹ سے2200ڈالرز کیش کرائے اور حسین نواز نے23 دسمبر2010 کو 30 ہزار پانڈ نواز شریف کو بھجوائے۔گواہ ملک طیب نے بتایا کہ 2مئی 2016کو نواز شریف نے 10پاﺅنڈ اپنے پاکستانی کرنسی اکاونٹ میں ٹرانسفر کیے۔ 30 اپریل 2016 کو 10 پاﺅنڈ اپنے پاکستانی کرنسی اکانٹ میں ٹرانسفر کیے۔ 29 مئی 2017 کو نواز شریف نے 2 لاکھ ڈالرز پاکستانی اکانٹ میں ٹرانسفر کیے۔ اپریل 2012 میں 2 لاکھ 10 ہزار یورو پاکستانی کرنسی اکاونٹ میں ڈالے۔ استغاثہ کے گواہ کا کہنا تھا کہ 15 نومبر 2015 کو نواز شریف نے 25 ہزار پانڈ اپنے پاکستانی کرنسی اکاونٹ میں ٹرانسفر کیے۔نوازشریف کی جانب سے دوہزار دس اوردوہزار سولہ میں دو دفعہ دس یورو کیش کروانے کے ذکر پرجج نے کہا کہ لگتا ہے دس یورو تو ظافر خان کو ہی ملے ہوں گے، جس پرکمرہ عدالت میں قہقے لگے۔نیب کی دستاویزات پرظافرخان کےاعتراض پرفاضل جج نے کہا کہ اپنے ہی اکانٹ سے اپنے دوسرے اکانٹ میں رقم ٹرانسفر پرآپ کوکیااعتراض ہے، یہ تو نواز شریف نے خود ٹرانسفر کئے، بعد ازاں العزیزیہ اسٹیل مل ریفرنس کی سماعت آج( جمعرات) تک ملتوی کردی گئی، استغاثہ کے گواہ ملک طیب آج (جمعرات کو ) بھی اپنا بیان ریکارڈ کرائیں گے۔واضح رہے کہ گزشتہ روز نیب عدالت نے مریم نواز کی حاضری میں استثنی کی تاریخوں میں ردوبدل کی درخواست مسترد کر دی گئی، ان کا استثنی 15 دسمبر تک برقرار رکھا گیا جبکہ عدالت نے فلیگ شپ انویسٹمنٹ، العزیزیہ سٹیل ملز اور ایون فیلڈ ریفرنسز میں پیش نہ ہونے پر حسن نواز اور حسین نواز کو اشتہاری ملزم قرار دیا تھا۔

Scroll To Top