آرمی چیف کی زیر صدارت کور کمانڈر کانفرنس: پائیدار داخلی امن کیلئے کوششیں جاری رکھیں گے، آرمی چیف

  • آپریشن رد الفساد، پاک افغان سرحد پر سیکیورٹی کے اضافی اقدامات اور سماجی و معاشی ترقی کے ذریعے بلوچستان میں استحکام لانے کے لیے شروع کیے گئے ”خوشحال بلوچستان“ پروگرام کا بھی جائزہ
  • آرمی چیف نے شرکاءکو اپنے حالیہ غیر ملکی دوروں کے دوران عسکری ڈپلومیسی اور حالیہ دنوں میں پاکستان کا دورہ کرنے والی غیر ملکی شخصیات سے ہونے والی ملاقاتوں پر بھی اعتماد میں لیا
راولپنڈی، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ جنرل ہیڈکوارٹرز میں کورکمانڈرز کانفرنس کی صدارت کر رہے ہیں

راولپنڈی، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ جنرل ہیڈکوارٹرز میں کورکمانڈرز کانفرنس کی صدارت کر رہے ہیں

راولپنڈی (مانیٹرنگ ڈیسک) آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی زیرصدارت جنرل ہیڈکوارٹرز راولپنڈی میں کورکمانڈرز کانفرنس منعقد ہوئی جس میں پاک فوج کے سربراہ نے پاکستان کادورہ کرنے والی غیرملکی شخصیات سے ملاقاتوں پر اعتماد میں لیا۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری بیان کے مطابق کور کمانڈرز کانفرنس میں پائیدار اندرونی امن، افغانستان اور خطے کے استحکام کے لیے کوششیں جاری رکھنے پر اتفاق کیا گیا۔کانفرنس کی سربراہی آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کی جنہوں نے شرکاءکو اپنے حالیہ غیر ملکی دوروں کے دوران عسکری ڈپلومیسی اور حالیہ دنوں میں پاکستان کا دورہ کرنے والی غیر ملکی شخصیات سے ہونے والی ملاقاتوں پر اعتماد میں لیا آئی ایس پی آر کے مطابق اجلاس میں ملک کی داخلی سیکیورٹی اور خطے خاص طور پر افغانستان کی سیکیورٹی صورتحال پر غور کیا گیا اور اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ پائیدار داخلی سلامتی اور افغانستان سمیت خطے میں مستقل امن کے قیام کے لیے کوششیں جاری رکھی جائیں گی۔آرمی چیف کا افغان زمین پاکستان کے خلاف استعمال ہونے پر اظہار تشویش اس کے علاوہ کور کمانڈرز کانفرنس میں آپریشن رد الفساد، پاک افغان سرحد پر سیکیورٹی کے اضافی اقدامات اور سماجی و معاشی ترقی کے ذریعے بلوچستان میں استحکام لانے کے لیے شروع کیے گئے ”خوشحال بلوچستان“ پروگرام کا بھی جائزہ لیا گیا۔خیال رہے کہ گزشتہ روز امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس پاکستان کے ایک روزہ دورے پر آئے تھے اور انہوں نے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باوجوہ اور دیگر عہدے داروں سے ملاقات کی تھی۔آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے امریکی وزیر دفاع سے ملاقات میں بھارت کی جانب سے افغان سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال کرنے پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔آرمی چیف نے امریکی وزیر دفاع سے ملاقات میں یہ بھی کہا تھا کہ پاکستان نے امن کے لیے اپنی استطاعت اور وسائل سے زیادہ کام کیا اور ہم بین الاقوامی برادری کے ایک ذمہ دار رکن کی حیثیت سے اپنی کوششیں جاری رکھنے کے لیے پ±رعزم ہیں۔

Scroll To Top